1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

شکریہ پاکستان، بھارتی وزیر خارجہ سشما سوراج

بھارتی وزیر خارجہ سُشما سوراج نے کہا ہے کہ اگر آج ڈاکٹر عظمٰی اپنےملک واپس آئی ہیں تو اس میں پاکستانی حکومت کا بڑا کردار ہے۔ سوراج نے بھارتی خاتون شہری کی واپسی پر پاکستان کا شکریہ ادا کیا ہے۔

 بھارتی اور بین الاقوامی میڈیا سے موصولہ رپورٹوں کے مطابق پاکستان سے آج واپس اپنے ملک بھارت پہنچنے والی خاتون ڈاکٹر عظمٰی اور پاکستان میں انڈین ڈپٹی ہائی کمشنر جے پی سنگھ کے ساتھ ایک مشترکہ پریس کانفرنس میں سشما سوراج نے بتایا کہ عظمٰی نے پاکستان میں قائم بھارتی سفارت خانے پہنچنے پر کہا تھا کہ وہ واپس جانے کے بجائے مرنا پسند کریں گی۔

 بھارتی وزیر خارجہ کا کہنا تھا کہ پاکستان میں انڈین ایمبیسی نے عظمٰی کی ہر ممکن مدد کی۔ سوراج نے عظمٰی کے مقدمے کی پیروی کرنے والے وکیل کا بھی شکریہ ادا کیا۔ اُنہوں نے کہا کہ عدالت کو بتایا گیا تھا کہ یہ  پاکستان کی عزت کا معاملہ ہے۔

 سوراج نے کہا کہ  عظمٰی کے  واہگہ بارڈر پہنچنے کے بعد ملکی سر زمین کو چومنے کے منظر نے بہت کچھ واضح کر دیا تھا۔ ڈاکٹر عظمٰی نے پریس کانفرنس میں کہا کہ پاکستان جانا تو آسان ہے لیکن وہاں سے واپس آنا بہت مشکل ہے۔ عظمٰی کے مطابق،’’ پاکستان موت کا کنواں ہے۔‘‘

 بھارتی خاتون ڈاکٹر عظمٰی نے پاکستان کے صوبے خیبر پختونخواہ کے ضلع بونیر کے رہائشی طاہر علی سے شادی کی تھی۔ بعد میں انہوں نے اپنے شوہر کے خلاف جبری شادی کا مقدمہ دائر کیا تھا۔

 عظمٰی نے مزید کہا کہ اگر وہ کچھ اور دن وہاں رہ جاتیں تو انہیں مار دیا جاتا یا بیچ دیا جاتا۔ عظمٰی نے بتایا کہ جہاں وہ رہتی تھیں وہاں آس پاس اور بھی ایسی خواتین تھیں جن کا تعلق دوسرے ممالک سے تھا اور جن کے ساتھ برا سلوک کیا جاتا تھا۔

خیال رہے کہ ڈاکٹر عظمٰی  آج واہگہ بارڈر کے ذریعے بھارت پہنچی تھیں۔ بھارت کی وزیر خارجہ سشما سوراج نے اپنے ٹوئٹر اکاؤنٹ سے عظمیٰ کو بھارت میں خوش آمدید کہا تھا۔ انہوں نے اپنی ٹوئٹ میں لکھا،'' بھارت کی بیٹی خوش آمدید۔ جو تمہارے ساتھ ہوا مجھے اس پر افسوس ہے۔‘‘