1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

شٹائن مائر کا دورہ مشرق وسطٰی

جرمن وزیرخارجہ دورہ مشرق وسطٰی کے دوران علاقائی رہنماوں سے ملاقاتوں میں مصروف ہیں۔ وہ مشرقِ وسطٰی کے اپنے 14ویں دورے کے دوران ایک مرتبہ پھر یہ واضح کرنا چاہتے ہیں کہ جرمنی مشرقِ وسطٰی میں امن عمل کو بے حد اہمیت دیتے ہیں

default

فرانک والٹر شٹائن مائر اور شمون پیریز

جرمن وزیر خارجہ فرانک والٹر شٹائن مائر نے اسرائیلی صدر شمون پیریزسے ملاقات کے دوران خطے میں پائیدار امن کے لئے دو ریاستی حل کو ناگزیر قرار دیا۔ جرمن وزیر خارجہ نے اسرائیلی صدر پر زور دیا کہ وہ امن مذاکرات کا عمل دوبارہ شروع کریں۔ دونوں رہنماؤں کی ملاقات کے بعد شٹائن مائر نے صحافیوں سے بات کرتے ہوئے کہا کہ خطے میں استحکام کا راستہ اسی میں ہے کہ اسرائیل، فلسطینی رہنماؤں سے مذاکرات کا سلسلہ دوبارہ شروع کرے۔ انہوں نے کہا کہ انہیں یقین ہے کہ خطے میں استحکام کی گارنٹی اسی میں ہے کہ دو ریاستی حل کو تسلیم کیا جائے۔

شمون پیریز نے شٹائن مائر سے کہا کہ وہ شامی رہنماؤں کو یہ پیغام دیں کہ اسرائیل شام کے ساتھ فوری طور پر اور براہ راست امن مذاکرات کے لئے تیار ہے۔ فلسطینی صدر محمود عباس کے اچانک دورہ اردن کے نتیجے میں جرمن وزیر خارجہ کو اپنا شیڈول دورہِ رملہ منسوخ کرنا پڑ گیا۔ تاہم شٹائن مائر نے یروشلم میں فلسطینی مذاکرت کار صائب ایرکات سے ملاقات کی۔ اس ملاقات میں فلسطینی مذاکرت کار نے اسرائیل پر الزام عائد کیا کہ نئی اسرائیلی حکومت فلسطینیوں کے ساتھ امن مذاکرات شروع کرنے کے لئے مناسب دلچسپی نہیں لے رہی ہے۔ شٹائن مائر اسرائیلی وزیر اعظم نیتن یاہو اور اپنے اسرائیلی ہم منصب لیبر من سے ملاقات کے بعد شام روانہ ہو جائیں گے۔

Steinmeier in Jerusalem mit Saeb Erekat

شٹائن مائر اور فلسطینی مذاکرت کار صائب ایرکات

اس سے قبل اسرائیل پہنچنے پر شٹائن مائر نے کہا تھا کہ وہ مشرقِ وسطٰی میں امن عمل میں ایک تازہ اور نئےآغاز کے لئے پر امید ہیں۔ ایک ایسا نیا آغاز جو امریکی صدر کی کوششوں سے ممکن ہوا۔ اسرائیلی صدر شمون پیریز سے ملاقات سے قبل انہوں نے کہا کہ دو ریاستی حل نہ صرف اسرائیل اور فلسطین بلکہ عرب ہمسایہ ممالک کے سامنے بھی رکھا گیا ہے اور اس مقصد کے حصول کے لئے وہ اعتدال پسند عرب ممالک کے ساتھ مل کرکام کریں گے۔ جرمن وزیر خارجہ نے کہا کہ امریکی صدر باراک اوباما کی پالیسی برائے مشرقِ وسطٰی میں یہ بات مضمر ہے کہ مشرقِ وسطٰی میں پائیدار قیام امن کے لئے علاقائی رہنماؤں کا اعتماد حاصل کیا جائے اور اس مقصد کے لئے جرمنی اور یورپی ممالک بھر پور تعاون کا یقین دلاتے ہیں۔

شٹائن مائر نے کہا کہ مشرقِ وسطٰی میں قیام امن کے لئے عرب ممالک کی طرف سے پیش کردہ امن عمل کے لئے جرمنی اور یورپ ایک اہم کردار ادا کریں گے۔ انہوں نے کہا کہ وہ اپنے دورہ لبنان اور شام کے دوران ہمسایہ ممالک پر زور دیں گے کہ وہ دو ریاستی حل کے لئے بھرپور ساتھ دیں کیونکہ اس سلسلے میں کامیابی تمام خطے کے لئے کامیابی ہو گی۔

واضح رہے کہ جرمن وزیر خارجہ اُس وقت اسرائیل پہنچے جب دوسری طرف لندن میں اسرائیلی وزیر دفاع ایہود باراک، غرب اردن کے مقبوضہ علاقوں میں نئی آباد کاری کے متنازعہ معاملے پر، خصوصی امریکی مندوب برائے مشرق وسطٰے جورج مچل سے ملاقات کر رہے ہیں۔

عاطف بلوچ

ادارت: عدنان اسحاق