1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

شمالی کوریا کے خلاف عالمی برادری کا غم و غصہ

جنوبی کوریا کے ایک جزیرے پر شیلنگ کرنے پر شمالی کوریا کو عالمی برادری کی مذمت کا سامنا ہے۔ امریکی صدر نے کہا ہے کہ اس حملے پر انہیں بہت دُکھ ہوا ہے۔ روس، جاپان اور یورپی ممالک نے بھی اس کارروائی کی مذمت کی ہے۔

default

امریکی سربراہی میں قائم اقوام متحدہ کی کمانڈ (یواین سی) نے شمالی کوریا کی پیپلز آرمی کے ساتھ ایک اجلاس بھی طلب کر لیا ہے۔ یو این سی کے اعلامیے کے مطابق اس کا مقصد معلومات کا تبادلہ اور کشیدگی میں کمی ہے۔ ساتھ ہی واقعے کی تفتیش کا اعلان بھی کیا گیا ہے۔

Barack Obama beim NATO Gipfeltreffen in Lissabon

امریکی صدر باراک اوباما

اقوام متحدہ کے سیکریٹری جنرل بان کی مون نے اسے دونوں ممالک کے درمیان جنگ کے بعد کا تلخ ترین واقعہ قرار دیا ہے۔ انہوں نے فریقین پر حدود عبور نہ کرنے پر زور دیا ہے۔

اس واقعے پر ردِ عمل میں امریکی صدر باراک اوباما نے جنوبی کوریا کو اپنا اہم اتحادی قرار دیتے ہوئے کہا، ’اس اتحاد کے تناظر میں ہم جنوبی کوریا کے تحفظ کی ذمہ داری کی توثیق کرتے ہیں۔‘

انہوں نے کہا، ’ہم اس بات کو یقینی بنانا چاہتے ہیں کہ خطے میں تمام فریقن اس کو سنجیدہ اور مسلسل خطرہ تسلیم کریں، جس سے نمٹا جانا چاہئے۔‘

انہوں نے بالخصوص چین پر زور دیا کہ وہ پیونگ یونگ حکام کو بتائے، اس تناظر میں بین الاقوامی ضوابط ہیں اور اسے ان پر عمل کرنا ہو گا۔

امریکی محکمہ خارجہ نے کہا ہے کہ اس حوالے سے بڑی طاقتوں سے مل کر لائحہ عمل طے کیا جائے گا جبکہ محکمہ دفاع پینٹاگون کا کہنا ہے کہ جنوبی کوریا کی فوج کے ساتھ مل کر ردعمل کا جائزہ لیا جائے گا۔

دوسری جانب جنوبی کوریا نے شمالی کوریا میں سیلاب کے لئے امدادی اشیا کی ترسیل روک دی ہے۔

Korea / Südkorea / Nordkorea / Angriff

یہ حملہ منگل کی صبح ہوا

شمالی کوریا کی جانب سے منگل کی صبح کی اس کارروائی کے بعد جنوبی کوریا کی جانب سے بھی فائرنگ کی گئی جبکہ سیول حکام نے پیونگ یونگ کو آئندہ اشتعال انگیزی پر میزائل حملوں کی دھمکی بھی دی ہے۔

اس علاقے میں جنوبی کوریا کی فوج کی مشقیں جاری تھیں، تاہم فوجی حکام نے اپنی جانب سے اشتعال انگیزی کا آغاز کئے جانے سے انکار کیاہے۔ شمالی کوریا کی جانب سے شیلنگ کے بعد جنوبی کوریا نے بھی تقریباﹰ 80 شیل فائر کئے، جن سے شمال کی جانب کسی بھی طرح کے نقصان کی اطلاع نہیں جبکہ جنوب میں دو افراد ہلاک ہوئے۔

رپورٹ: ندیم گِل

ادارت: افسر اعوان

DW.COM

ویب لنکس