1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

شمالی کوریا کا بیلسٹک میزائل کا ممکنہ تجربہ، جنوبی کوریا الرٹ

جنوبی کوریا نے خدشہ ظاہر کیا ہے کہ کمیونسٹ ملک شمالی کوریا آج منگل 10 اکتوبر کو بیلسٹک میزائل کا ایک نیا تجربہ کر سکتا ہے۔ شمالی کوریا میں حکمران پارٹی کا 72 برس قبل قیام بھی دس اکتوبر کو ہوا تھا۔

جنوبی کوریا نے اعلان کیا ہے کہ اُس کی افواج پوری طرح چوکس ہیں اور انہیں ہائی الرٹ رکھا گیا ہے۔ فوج کو چوکس رکھنے کی وجہ شمالی کوریا کی جانب سے ممکنہ طور پر آج منگل دس اکتوبر کو کسی بھی وقت کیا جانے والا بیلسٹک میزائل کا تجربہ قرار دیا گیا ہے۔ سیئول حکومت کے مطابق شمالی کوریا میں حکمران ورکرز پارٹی کے قیام کی بہترویں سالگرہ کی خصوصی تقریبات کا اہتمام کیا گیا ہے۔

ٹرمپ تیسری عالمی جنگ کی راہ پر گامزن ہیں، امریکی سینیٹر

امریکی بمبار طیاروں کی شمالی کوریا کی سرحد کے قریب پرواز

’امریکا میں سی فوڈ شمالی کوریا سے جاتا ہے‘

ٹرمپ کا دماغ ماؤف ہو چکا ہے، کم جونگ اُن

جنوبی کوریا کے جوائنٹ چیفس آف اسٹاف کا کہنا ہے کہ شمالی کوریا کے حوالے سے صورت حال کا باریک بینی سے مسلسل جائزہ لیا جا رہا ہے۔ اس بیان کے مطابق ایسا محسوس ہوتا ہے کہ شمالی کوریا میں افراد اور آلات کی منتقلی کا سلسلہ شروع ہے۔ اس پراسرار سرگرمی سے اندازہ لگایا جا سکتا ہے کہ شمالی کوریا ممکنہ طور پر بیلسٹک میزائل کا تجربہ کرنے کی تیاری میں مصروف ہے۔

شمالی کوریا نے گزشتہ برس حکمران پارٹی کے قیام کے دن اپنا پانچواں جوہری تجربہ کیا تھا۔ پیونگ یونگ حکومت نے رواں برس ہائیڈروجن بم کا بھی تجربہ کرنے کا دعویٰ کیا تھا۔ اس کے علاوہ بیلسٹک میزائل کے تجربات کا سلسلہ بھی جاری رکھا ہوا ہے۔

Nordkorea Wasserstoffbombe (picture-alliance/H. Ringhofer/picturedesk.com)

یونگ یونگ حکومت نے رواں برس ہائیڈروجن بم کا بھی تجربہ کرنے کا دعویٰ کیا تھا

شمالی کوریا کے سب سے اہم اخبار روڈونگ سِن مُن نے اپنی دس اکتوبر کی اشاعت میں لکھا ہے کہ ورکرز پارٹی کی مرکزی پالیسی کی بنیاد جوہری ہتھیار سازی اور اقتصادی ترقی ہے۔ اس مرکزی پالیسی کو Byungjin کا نام دیا گیا ہے اور یہ اخبار کے پہلے صفحے پر شائع کی گئی ہے۔ 

یہ امر اہم ہے کہ چند روز قبل روسی پارلیمنٹ کی بین الاقوامی تعلقات کی کمیٹی کے رکن اینتون موروزوف نے کہا تھا کہ شمالی کوریا جلد ہی دور مار میزائل کا تجربہ کرنے والا ہے۔ روسی رکن پارلیمنٹ اُس تین رکنی پارلیمانی وفد میں شامل تھے، جس نے دو سے چھ اکتوبر تک شمالی کوریائی دارالحکومت پیونگ یانگ کا دورہ کیا تھا۔ انہوں نے یہ بھی بتایا کہ شمالی کوریا نے اُن کے وفد پر واضح کیا کہ نیا میزائل امریکا کے مغربی ساحل تک ہدف کا نشانہ لے سکتا ہے۔

ویڈیو دیکھیے 00:35

کیا شمالی کوریا کے خلاف فوجی کارروائی ہونی چاہیے؟

DW.COM

Audios and videos on the topic