1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

شمالی کوریا نے عدمِ جارحیت معاہدے پردستخط کردیے

شِمالی کوریا نے آسیان کے سیکیورٹی اجلاس کے اختتامی روزعدم جارحیت سے متعلق ایک معاہدے پر دستخط کردیے ہیں۔ اسی اجلاس میں امریکی وزیرِ خارجہ نے جمہوریت سے متعلق مینمار کے دعووں کو جمہوریت کی تذلیل قرار دیا۔

default

گو کہ عدم جارحیت سے متعلق معاہدے پر شِمالی کوریا کے دستخط کرنے سے اس کے جوہری پروگرام کے حوالے سے ہونے والے چھ فریقی مزاکرات پرکوئی اثر نہیں پڑے گاتاہم یہ علامتی دستخط عرصہ ِ دراز تک بین الاقوامی برادری سے الگ تھلگ رہنے والی کمیونسٹ ریاست کی جانب سے ایک اعلان ہے کہ وہ دنیا کے ساتھ چلنے پر آمادہ ہو چکی ہے۔


دریں اثناء آسیان کے سیکیورٹی اجلاس میں امریکی وزیرِ خارجہ کونڈولیزا رائس اور شِمالی کوریا کے وزیرِ خارجہ کے درمیان ایک ملاقات کے بعد آسیان نے ایک بیان جاری کیا جس میں اقوامِ متحدہ کے ادارہ برائے جوہری توانائی سے کہا گیا ہے کہ وہ شِمالی کوریا کے جوہری پروگرام کے حوالے سے وسیع تر کردار ادا کرے۔ اگر شمِالی کوریا کی فوجی حکومت اس مطالبے کو مان لیتی ہے تو یہ اس کے جوہری پروگرام کے خاتمے کی طرف ایک اہم قدم ہوگا۔


امریکی وزیرِ خارجہ کونڈولیزا رائس نے مزکورہ آسیان اجلاس میں مینمار کو زبردست ہدفِ تنقید بنایا اور اس کی جانب سے جمہوریت کی پاسداری کے بیانات کو مضحکہ خیز پرار دیا۔ مینمار ہی سے متعلق ایک دوسرے اعلامیے میں کہا گیا ہے کہ قدرتی آفت سے متاثر ممالک بیرونی امداد قبول کرنے میں تامل نہ کریں۔ یاد رہے کہ مئی کے مہینے میں مینمار میں آنے والے سمندری طوفان کے نتیجے میں زبردست تباہی پھیلی تھی مگر اس کے باوجود مینمار کی فوجی خنتا نے بیرونی امداد کے لیے دروازے بند رکھے۔


دریں اثناء تھائی لینڈ اور کمبوڈیا کا سرحدی تنازعہ بھی آسیان سیکیورٹی اجلاس میں پیش پیش رہا۔ تھائی لینڈ اور کمبوڈیا کی سرحد پر واقع بدھ مت کے پیروکاروں کی ایک قدیم عبادت گاہ کے گرد کم از کم چار ہزار تھائی اور کمبوڈیائی افواج جمع ہوچکی ہیں۔ اس علاقے پر دونوں فریق اپنا حق بتاتے ہیں۔ آسیان کا کہنا ہے کہ اس مسئلے کو فی الوقت اقوامِ متحدہ میں نہیں بھیجا جانا چاہیے کیوں کہ پہلے اس مسئلے کو علاقائی سطح پر حل کیے جانے کی کوشش کرنی چاہیے۔