1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

شمالی کوریا معافی مانگے، جنوبی کوریا کا مطالبہ

سیئول نے پیونگ یانگ سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ گزشتہ دنوں جنوبی کوریا کی طرف آنے والے ایک دریا میں یک دم پانی چھوڑنے پر معافی مانگے۔

default

اتوار کی صبح شمالی کوریائی حکام نے جنوبی کوریا کی طرف بہنے والے ایک دریا میں ایک دم پانی چھوڑ دیا تھا جس میں ایک بچے سمیت جنوبی کوریا کے چھ شہری ڈوب کر ہلاک ہو گئے۔

ہلاک شدگان میں سے تین افراد کی لاشیں تلاش کی جاچکی ہیں جب کہ تین افراد اب تک لاپتہ ہیں۔ شمالی کوریا کے اس اقدام سے دونوں ملکوں کے درمیان بہتری کی طرف بڑھتے تعلقات میں ایک مرتبہ پھر تناؤ پیدا ہو گیا ہے۔

Kaputte Brücke an der Grenze zwischen China und Nordkorea

پیونگ یانگ نےسیئوؒ کو پیشگی اطلاع دیئے بغیر دریائے اِمجن میں پانی چھوڑ دیا تھا

سیئول میں شعبہ برائے ہنگامی حالت کے حکام کا کہنا ہے کہ دونوں ملکوں کے درمیان بہنے والے دریائے اِمجن میں پیونگ یانگ نے کئی بند قائم کر رکھے ہیں جن سے پانی کو کنٹرول کیا جاتا ہے، تاہم فاضل پانی بہا دینے سے متعلق اطلاع پہلے سے دی جاتی ہے۔

پیر کی شام شمالی کوریا کے حکام نے اپنے ایک بیان میں کہا تھا کہ بند میں پانی کی سطح میں اچانک اضافے کے باعث انہیں فوری طور پر پانی چھوڑنا پڑا، تاہم وہ مستقبل میں جنوبی کوریا کو اس حوالے سے پیشگی اطلاع دے دیا کریں گے۔

جنوبی کوریا کی وزارت برائے اتحاد کے ترجمان نے اپنے ایک بیان میں کہا گیا ہے: ’’شمالی کوریا کا بیان قابل قبول نہیں ہے۔ جنوبی کوریائی حکومت اس عمل کی شدید مذمت کرتی ہے کیونکہ اس سے انسانی جانوں کا ضیاع ہوا ہے۔‘‘ انہوں نے کہا کہ جنوبی کوریا کی حکومت پیونگ یانگ کے کسی اعلیٰ سرکاری عہدیدار سے اس معاملے کی مکمل توجیع اور معذرت چاہتی ہے۔

دونوں ملکوں کے درمیان تعلقات میں کئی ماہ سے جاری کشیدگی کے بعد شمالی کوریا کی جانب سے ان دنوں قدرے نرم رویہ دیکھنے میں آیا ہے۔ شمالی کوریا نے ابھی حال ہی میں جنوبی کوریا کے سابق صدر کی آخر رسومات میں شرکت کے لئے ایک اعلیٰ سطحی وفد بھی سیئول بھیجا تھا۔ شمالی کوریا کے اس وفد نے جنوبی کوریا کے صدر لی میونگ بک سے ملاقات بھی کی تھی۔

رپورٹ: عاطف توقیر

ادارت: انعام حسن