1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

شمالی کوریائی فوجی مشقیں، تناؤ میں اضافہ

امریکہ اور جنوبی کوریا کے درمیان فوجی مشقیں پرسوں اتوار سے شروع ہو رہی ہیں۔ اس پر چین کی تشوش سامنے آ چکی ہے۔ شمالی کوریا کے اندر سرکاری میڈیا پیدا شدہ جنگی صورت حال جارحانہ لب و لہجے میں پیش کر رہا ہے۔

default

جنوبی کوریائی فوجی اور فرضی میزائل

کوریائی جزیرہ نما میں تناؤ کی صورت حال بدستور قائم ہے۔ اس میں جمعہ کے روز اس وقت اضافہ دیکھا گیا، جب شمالی کوریا کی توپوں کے فائر کی آوازیں بحیرہ زرد کی متنازعہ سمندری حدود میں واقع جزیرے یون پیونگ میں واضح طور پر سنی گئیں۔ اس پر عام شہریوں میں خوف و ہراس پیدا ہو گیا اور وہ پناہ گاہوں کی جانب بھاگنے لگے۔ تصدیق کی گئی ہے کہ شمالی کوریائی توپوں کے گولے یا ان کا کوئی چلا ہوا حصہ جنوبی کوریائی سرزمین پر نہیں گرا۔ جنوبی کوریا کے دارالحکومت سیول میں اس خبر کے نشر ہونے کے بعد عوام میں باقاعدہ افراتفری دیکھی گئی۔

شمالی کوریا کے اندر میڈیا اور اخبارات خاصے سخت لہجے میں صورت حال کو بیان کر رہے ہیں، جو جنگ کی کیفیت کا پیش خیمہ دکھائی دیتی ہے۔

USA Nordkorea Südkorea Flugzeugträger George Washington im Hafen von Busan

امریکی بحری جہاز جورج واشنگٹن

کمیونسٹ ملک کے دارالحکومت پیونگ یانگ میں سرکاری میڈیا واضح اشارے دے رہا ہے کہ کوریائی خطہ آہستہ آہستہ جنگ کی جانب بڑھ رہا ہے اور شمالی کوریا ئی عوام اور فوج جنوبی کوریا کی ’کٹھ پتلی‘ حکومت کی جانب سے پیدا شدہ جارحانہ صورت حال کا سامنا کرنے کے لئے چوکس ہو چکی ہے۔ دونوں اطراف کے شہری پریشان و بےچین دکھائی دیتے ہیں۔ اس کیفیت میں کوریائی خطے کے عوام کی طرح مشرق بعید کی تمام مالی منڈیاں بھی نااُمیدی کی گرفت میں ہیں۔ عالمی سٹاک مارکیٹوں میں بھی اس کشیدگی کے منفی اثرات ظاہر ہو رہے ہیں۔ سرمایہ کاروں کے ہاں مالی نقصان کی وجہ سے بیزاری کی کیفیت نظر آ رہی ہے۔

اس دوران جنوبی کوریا کے صدر لی میونگ بک نے ایک سابقہ فوجی افسر Kim Kwan-jin کو اپنے ملک کا نیا وزیر دفاع مقرر کر دیا ہے۔ نئے وزیر دفاع جوائنٹ چیفس آف سٹاف کمیٹی کے سابق چیئرمین ہیں اور پیشہ ور فوجی ہونے کی وجہ سے دفاعی امور پر گہری نگاہ رکھتے ہیں۔ جنوبی کوریا کے اندر صدر بک کو اپوزیشن کی جانب سے واضح جبکہ حکومتی پارٹی کے

Korea-Konflikt 2010

یون پیونگ جزیرے پر ہلاک ہونے والے ایک جنوبی کوریائی فوجی کی آبدیدہ والدہ

اندر سے اِس ڈھکی چھپی تنقید کا سامنا ہے کہ شمالی کوریا کی توپوں کے فائر کے جواب میں جنوبی کوریا کی فوج نے تساہلی کا مظاہرہ کیا تھا۔ منگل کے وقوعے میں شمالی کوریا کی توپوں سے گولے پھینکے جانے کے تیرہ منٹ بعد جنوبی کوریائی فوج نے جوابی کارروائی کی تھی۔ سرحدی شہر Paju میں سینکڑوں سابقہ فوجیوں نے اس تاخیری فوجی رد عمل کے خلاف ایک ریلی بھی نکالی اور حکومت کو سست قرار دیا۔

اتوار کی امریکہ جنوبی کوریا فوجی مشقوں میں شمولیت کے لئے جنگی بحری جہاز جورج واشنگٹن کسی بھی وقت بحیرہ زرد پہنچ سکتا ہے۔ دونوں ملکوں کی فوجیں مشقوں سے قبل کی تیاریوں میں مصروف ہیں۔

دوسری جانب امریکہ کی جانب سے چین پر سفارتی دباؤ میں اضافہ ہو گیا ہے کہ وہ اپنے اتحادی شمالی کوریا کو کنٹرول کرے۔ اس مناسبت سے گزشتہ روز امریکی اور جاپانی وزرائے خارجہ کے درمیان ٹیلی فون پر ہونے والی گفتگو میں بھی اتفاق کیا گیا تھا۔ امریکی صدر کی رہائش گاہ وائٹ ہاؤس کے حکام کے مطابق کوریائی خطے کی مجموعی صورت حال پر صدر باراک اوباما اپنے چینی ہم منصب ہو جن تاؤ سے ٹیلی فون پر بات چیت کر سکتے ہیں۔ دوسری جانب چین نے شمالی کوریا کے لئے تعطلی کے شکار چھ ملکی مذاکراتی عمل کو ازسرنو شروع کرنے کی ضرورت پر زور دیا ہے۔

رپورٹ: عابد حسین

ادارت: امجد علی

DW.COM

ویب لنکس