1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

شمالی وزیرستان میں ڈرون حملے، کم از کم نو افراد ہلاک

افغانستان سے ملحقہ پاکستان کے قبائلی علاقے میں مشتبہ ڈرون حملے کے نتیجے میں کم از کم نو افراد ہلاک ہو گئے ہیں۔ انٹیلی جنس ذرائع کے مطابق یہ کارروائی دو مقامات پر کی گئی۔

default

خبر رساں ادارے اے ایف پی نے سکیورٹی ذرائع کے حوالے سے بتایا ہے کہ پیر کو دونوں حملے میرانشاہ سے تقریباﹰ چالیس کلومیٹر کے فاصلے پر واقع علاقے میر علی میں ہوئے۔ یہ شمالی وزیرستان کا مرکزی علاقہ ہے، جو طالبان اور القاعدہ سے وابستہ انتہاپسندوں کے گڑھ کے طور پر جانا جاتا ہے۔

سکیورٹی ذرائع کے مطابق دو امریکی ڈرون طیاروں نے انتہاپسندوں کے ایک ٹھکانے پر دو میزائل فائر کیے۔ اس کے کچھ ہی دیر بعد ایک اور ڈرون نے ایک گاڑی پر دو میزائل فائر کیے۔

پشاور میں ایک اعلیٰ سکیورٹی اہلکار نے اے ایف پی کو بتایا کہ ان حملوں میں کم از کم نو افراد ہلاک اور دو زخمی ہوئے ہیں۔ انہوں نے بتایا، ’پہلے حملے میں کمپاؤنڈ کو نشانہ بنایا گیا، جس میں چھ شدت پسند مارے گئے۔ دوسرے حملے میں کار میں سفر کرتے ہوئے تین شدت پسند ہلاک ہوئے۔‘

میرانشاہ میں ایک سکیورٹی اہلکار نے بتایا کہ ان حملوں کا نشانہ بننے والا کمپاؤنڈ تباہ ہو گیا ہے جبکہ گاڑی مکمل طور پر جل گئی ہے۔ سکیورٹی ذرائع نے یہ بھی بتایا ہے کہ کمپاؤنڈ میں ہلاک ہونے والے تمام افراد غیرملکی تھے۔ انہوں نے کہا، ’ہمیں ان کی درست شناخت کا پتہ نہیں چل سکا، لیکن یہ پتہ چلا ہے کہ کمپاؤنڈ میں غیرملکی موجود تھے۔‘

Karte Pakistan mit Waziristan

امریکہ پاکستان کے قبائلی علاقے کو خطرناک ترین خطہ قرار دیتا ہے

دوسری جانب خبررساں ادارے ڈی پی اے نے بھی سکیورٹی ذرائع کے حوالے سے ان حملوں کے نتیجے میں ہلاکتوں کی کم از کم تعداد بارہ بتائی ہے۔

یہ حملے ایسے وقت ہوے، جب امریکی سینیٹر جان کیری پاکستان کے دورے پر تھے۔ خیال رہے کہ امریکہ پاکستان کے قبائلی علاقے کو خطرناک ترین خطہ قرار دیتا ہے۔ واشنگٹن حکام کا مؤقف ہے کہ افغانستان میں تعینات نیٹو افواج پر حملوں اور دہشت گردی کے منصوبے انہیں علاقوں میں بنائے جاتے ہیں۔

رواں ماہ کے آغاز پر پاکستان کے علاقے ایبٹ آباد میں امریکی خصوصی دستوں نے خفیہ کارروائی کے نتیجے میں دہشت گرد گروہ القاعدہ کے سربراہ اسامہ بن لادن کو ہلاک کر دیا تھا۔ پاکستان کی جانب سے اس کارروائی پر غم و غصے کا اظہار کیا گیا۔

رپورٹ: ندیم گِل/خبررساں ادارے

ادارت: شامل شمس

DW.COM

ویب لنکس