1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

شمالی نائجیریا میں ایران اور سعودی عرب کی مداخلت

شمالی نائجیریا سعودی عرب اور ایران کی ’پراکسی جنگ‘ کا تازہ ترین میدان بن گیا ہے۔ اس علاقے میں ان دو ممالک کے حامیوں کے درمیان شدید جھڑپیں دیکھنے میں آ رہی ہیں۔

عزالہ تحریک سے تعلق رکھنے والے افراد، جن کی پشت پر سعودی عرب ہے، نے گزشتہ ماہ اسلامک موومنٹ اِن نائجیریا (آئی ایم این) کے حمایتیوں پر حملہ کیا تھا۔ آئی ایم این کا جھکاؤ شیعہ اکثریتی ملک ایران کی طرف ہے۔

DW.COM

گزشتہ ماہ عاشورہ کے موقع پر شمالی نائجیریا کے چار شہروں میں آئی ایم این کی مجالس پر عزالہ کی جانب سے حملے کیے گئے تھے۔ ان حملوں میں آئی ایم این کے کم از کم دو کارکن ہلاک بھی ہو ئے تھے۔ عزالہ کے گڑھ کادونا میں کئی روز تر شدید لڑائی جاری رہی تھی۔

عینی شاہدین کے مطابق مشتعل سنی ہجوم دو روز تک لوٹ مار کرتے رہے اور ’’مزید شعیہ نہیں چاہییں‘‘ کے نعرے بلند کرتے رہے۔

مسلم اکثریتی ملک نائجیریا میں فرقہ وارانہ کشیدگی میں اضافہ دیکھنے میں آ رہا ہے۔ خاص طور پر کادونا میں صورت حال انتہائی خراب ہے۔ علاقے کی حکومت آئی ایم این کو سلامتی کے لیے خطرہ قرار دیتے ہوئے اسے غیر قانونی تنظیم قرار دے چکی ہے۔

زاریہ شہر میں گزشتہ برس دسمبر کے مہینے میں جھڑپیں ہوئی تھیں، جس میں حکومتی فوجیوں نے آئی ایم این کے تیس سو کارکنوں کو ہلاک کر دیا تھا۔

دسمبر کے واقعات اور حالیہ جھڑپوں کو ماہرین شمالی نائجیریا میں سعودی عرب اور ایران کے درمیان ’پراکسی وار‘ یا اپنا اثر و رسوخ بڑھانے کی خاطر شیعہ اور سنی تنظیموں کو اپنے مفاد میں استعمال کرنے کی جنگ قرار دے رہے ہیں۔  لبنان، یمن اور شام میں یہ ’پراکسی وار‘ کافی عرصے سے دیکھی جا رہی ہے، اور اب یہ کشمکش نائجیریا میں بھی نمایاں ہو رہی ہے۔

زاریہ کی یونی ورسٹی سے وابستہ سیاسی امور کے ماہو ابوبکر صادق محمد کا اس حوالے سے کہنا ہے، ’’یہ حقیقت ہے کہ سعودی عرب کئی ممالک میں شیعہ شکن تحریکوں کی معاونت کر رہا ہے۔ اگر نائجیریا میں شیعہ مسلمانوں پر حملوں میں اضافہ ہوتا ہے تو ظاہر ہے تہران ان کی امداد کرے گا اور ریاض اس کے برعکس کارروائی کرے گا۔‘‘

مشرق وسطی اور شمالی افریقہ کے کئی ممالک کے علاوہ جنوبی ایشیا اور جنوب مشرقی ایشیا کے مسلم اکثریتی ملکوں میں ایران اور سعودی عرب کے اثر و رسوخ کی جنگ جاری ہے۔ پاکستان بھی کئی دہائیوں سے اس صورت حال کا شکار ہے۔