1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

شرمین عبید چنائے کے خواتین کو ہراساں کرنے سے متعلق ’متنازعہ‘ ٹوئٹس

آسکرانعام یافتہ فلم ساز شرمین عبید چنائے کی جانب سے خواتین کو ہراساں کیے جانے سے متعلق ٹوئٹس سوشل میڈیا پر بحث کا موضوع بنے ہوئے ہیں۔

آسکرانعام یافتہ چنائے نے پاکستانی شہر کراچی کے ایک ہسپتال میں اپنی بیمار بہن کو اس کے معالج کی جانب سے فیس بک پر دوستی کی درخواست بھیجنے کو ’ہراساں‘ کرنا قرار دیا۔

چنائے نے سوشل میڈیا کا سہارا لیتے ہوئے اپنی بہن مہ جبیں اور ڈاکٹر سے متعلق یہ پوری کہانی لوگوں تک پہنچائی۔ مہ جبیں کراچی کے ایک نجی ہسپتال میں چیک اپ کے لیے گئی تھیں، تاہم بعد میں انہیں ڈاکٹر کی جانب سے فیس بک پر فرینڈ ریکوئسٹ موصول ہوئی۔

اپنے ٹوئٹر پیغام میں چنائے نے کہا کہ پاکستان میں اس بابت حدود کا خیال نہیں رکھا جاتا۔ ’’میری بہن گزشتہ روز ہسپتال گئیں، جہاں جس ڈاکٹر نے اس کا معائنہ کیا، اسی نے اسے فیس بک پر دوستی کی درخواست بھیج دی۔‘‘

اگلے ٹوئٹر پیغام میں چنائے کا کہنا تھا، ’’یہ بات میری سمجھ سے بالا ہے کہ ایمرجنسی میں مریضوں کو دیکھنے والا کوئی ڈاکٹر کس طرح کسی خاتون مریضہ سے متعلق یہ سوچ سکتا ہے کہ اسے فیس بک پر دوستی کی درخواست بھیجے۔ انتہائی غیراخلاقی حرکت۔‘‘

انہوں نے مزید کہا کہ ڈاکٹر نے چوں کہ اب یہ حرکت ایک ایسی خاتون اور ایک ایسے خاندان سے کی ہے، جس کے ساتھ انہیں ایسا نہیں کرتا تھا اور اس بابت ڈاکٹر کی شکایت کی جائے گی۔’’خواتین کو ہراساں کرنے کا سلسلہ ختم ہونا چاہیے۔‘‘

دوسری جانب ان ٹوئٹس کے بعد سوشل میڈیا پر یہ بحث چھڑی ہوئی ہے کہ آیا کسی خاتون کو فیس بک پر فرینڈ ریکویسٹ بھیجنا ’ہراساں کرنے‘ کے زمرے میں آتا ہے یا نہیں۔

پاکستانی سوشل میڈیا صارف رابعہ مسعود کا کہنا ہے کہ وہ ایک آسکر جیتے والی خاتون سے ایسی بچگانہ بات کی توقع نہیں کر رہی تھیں۔ فیس بک پر فرینڈ ریکویسٹ کو جنسی طور پر ہراساں کرنے سے تعیبر کرنا نادرست ہے۔


ایک اور ٹوئٹر صارف زارا انصاری کے مطابق، ’’ہم یہ تو کہہ سکتے ہیں کہ ڈاکٹر نے جو کیا وہ غیراخلاقی بات تھی۔ مگر اس طرز کا الزام عائد کرنا نہایت غلط بات ہے۔ لگ یوں رہا ہے کہ طاقت رکھنے والے افراد کسی کے ساتھ کچھ بھی کر سکتے ہیں۔‘‘