1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

کھیل

شرجیل خان اور خالد لطیف کو جواب کے لیے دو ہفتے کی مہلت

پاکستانی کرکٹ بورڈ نے شرجیل خان اور خالد لطیف کو پاکستان سپر لیگ کے حوالے سے اُن پر عائد مبینہ بد عنوانی کے الزامات کا جواب دینے کے لیے 14 روز کا وقت دیا ہے۔

Cricket Pakistan - Australien in Brisbane (Getty Images/AFP/P. Hamilton)

شرجیل خان کو پاکستان کی قومی ون ڈے ٹیم کا مستقل رکن خیال کیا جاتا ہے

شرجیل خان اور خالد لطیف لاہور میں پی سی بی کے اینٹی کرپشن یونٹ کو بیانات دے چکے ہیں جن میں اُنہوں نے اسپاٹ فکسنگ کے الزامات کو قبول کیا ہے۔ پی سی بی کے ترجمان امجد بھٹی نے آج ہفتے کے روز لاہور میں صحافیوں سے بات کرتے ہوئے کہا،’’ آج دونوں کھلاڑیوں کو چارج شیٹ دے دی گئی ہے جس کے بعد  دونوں دو ہفتے کے اندر الزامات کا جواب دینے کے پابند ہیں۔‘‘

 بھٹی نے مزید کہا کہ اگر یہ کھلاڑی الزامات کی تردید کرتے ہیں تو پھر پاکستان کرکٹ بورڈ ایک ریٹائرڈ جج اور کرکٹ کے سابق کھلاڑی پر مشتمل تین رکنی ٹریبونل تشکیل دے گا۔ بھٹی کا کہنا تھا کہ اگر کھلاڑی الزامات قبول کرتے ہیں تو پی سی بی کی انضباطی کمیٹی سزا کے بارے میں فیصلہ کرے گی۔

 شرجیل خان کو پاکستان کی قومی ون ڈے ٹیم کا مستقل رکن خیال کیا جاتا ہے۔ انہوں نے آسٹریلیا کے دورے پر تین نصف سینچریاں بھی بنائی تھیں۔ اس کے علاوہ اسی دورے کے دوران انہیں ایک ٹیسٹ میچ میں بھی شامل کیا گیا تھا۔ جب کہ خالد لطیف اب تک قومی کرکٹ ٹیم کی جانب سے پانچ ون ڈے اور تیرہ ٹی ٹوئنٹی میچ کھیل چکے ہیں۔

خبر رساں ادارے روئٹرز کی رپورٹوں کے مطابق شرجیل خان اور خالد لطیف دبئی میں جاری پاکستان سُپر لیگ (پی ایس ایل) میں شریک تھے تاہم بین الاقوامی سنڈیکیٹ سے مبینہ رابطے کے بعد پاکستان کرکٹ بورڈ (پی سی بی) نے دونوں کو عبوری طور پر معطل کر کے جمعہ دس فروری کے روز واپس پاکستان بھیج دیا تھا۔