1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

شرابی اپنی صحت کے خود ذمہ دار، سری لنکا

سری لنکا کی حکومت نے الکوحل کے استعمال کے باعث صحت کی خرابی کا شکار ہونے والی شہریوں کے لئے مراعات واپس لینے کا اعلان کرتے ہوئے کہا ہے کہ ایسے افراد کو بیماریوں کے علاج کا بوجھ خود اٹھانا پڑے گا۔

default

سری لنکا کی حکومت کے اس اقدام کا مقصد ملک میں شراب نوشی کی حوصلہ شکنی بتایا جاتا ہے۔ بدھ کے روز سری لنکا کی وزارت صحت کی طرف سے جاری کردہ اس بیان میں کہا گیا کہ ایسے افراد، جو الکوحل سے متعلقہ بیماریوں کے باعث ہسپتال لائے جائیں گے، انہیں اپنے علاج پر آنے والے تمام تر اخراجات خود برداشت کرنا ہوں گے۔ سری لنکا کی حکومت کی طرح سے اس سے قبل بھی ملک میں شراب نوشی کی حوصلہ شکنی کے لئے متعدد اقدامات اٹھائے جا چکے ہیں، تاہم ان کے حوصلہ افزا نتائج برآمد نہیں ہوئے۔

Bomben auf Militärflughafen in Sri Lanka

سرکاری ہسپتالوں میں اب تک تمام تر علاج حکومتی خرچ پر ہوتا تھا

وزارت صحت کے ترجمان Wanninayaka نے اپنے ایک بیان میں کہا کہ حکومت کے اس اقدام کا مقصد عوام کے معیار زندگی میں بہتری لانا ہے۔ بیان میں کہا گیا کہ سرکاری ہسپتال میں، جہاں اب تک تمام مریضوں کا علاج مفت علاج کیا جاتا ہے، رواں برس فروری سے الکوحل سے متعلقہ بیماریوں کے شکار مریضوں سے ان کے علاج پر آنے والے ’پورے اخراجات‘ وصول کیے جائیں گے۔

بیان میں مزید کہا گیا ہے کہ نشے کی حالت میں حادثے کا شکار ہونے والے زخمی ڈرائیوروں کے علاج پر عوامی ٹیکس کے پیسے خرچ ہوتے ہیں، جو عوام پر ایک بڑا بوجھ ہیں۔

وزارت صحت کے ترجمان کے مطابق بعض اوقات حکومت کو دس ملین روپے (ایک لاکھ ڈالر) تک کے اخراجات برداشت کرنا پڑتے ہیں۔ ’’حکومت نے فیصلہ کیا ہے کہ صحت کے شعبے میں غیر ضروری اخراجات میں کٹوتی کی جائے۔‘‘

واضح رہے کہ چند روز قبل سری لنکا کے صدر مہیندا راجا پاکسے نے شراب نوشی کی حوصلہ شکنی کے لئے ایک ملک گیر مہم کا اعلان کیا تھا۔

رپورٹ : عاطف توقیر

ادارت : عدنان اسحاق

DW.COM

ویب لنکس