1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

شام میں امریکی فوجی تعینات کر دیے گئے

امریکا نے اپنے سینکڑوں میرینز کو خانہ جنگی کے شکار ملک شام میں تعینات کر دیا ہے۔ امریکی حکام نے ملکی فوجیوں کی اس تعیناتی کو شدت پسند تنظیم داعش کے خلاف جاری آپریشن کا حصہ قرار دیا ہے۔

واشنگٹن پوسٹ کی خبروں کے مطابق یہ فوجی داعش کے خود ساختہ دارالحکومت الرقہ میں جاری آپریشن میں حصہ لیں گے اور ان کی تعیناتی عارضی ہے۔ ماہرین کے مطابق یہ اقدام اس امر کی طرف اشارہ بھی ہے کہ وائٹ ہاؤس پینٹاگون کے لیے اپنے فیصلے کرنے میں زیادہ آزادی کا حامی ہے۔

اس اقدام کو شام میں روایتی امریکی افواج کے ليے ایک اہم اقدام قرار دیا جا رہا ہے۔ واشنگٹن پوسٹ کی رپورٹوں کے مطابق اس وقت امریکا کے پانچ سو اسپیشل آپریشن فوجی علاقے میں موجود ہیں اور ان بری فوجیوں کا کام عرب کرد جنگجوؤں کو تربیت فراہم کرنا ہے۔ کرد جنگجوؤں کا یہ اتحاد داعش کے خلاف لڑائی میں مصروف ہے۔

Deutschland Unklarheit über Trumps Außenpolitik prägt Sicherheitskonferenz in München | de Mistura (Reuters/M. Rehle)

شام کے لیے عالمی ادارے کے خصوصی مندوب شٹیفان دے مستورا

امریکی حکام کے اندازوں کے مطابق الرقہ میں تقریبا چار ہزار جہادی موجود ہیں جبکہ اس شہر میں موجود عام شہریوں کی تعداد تقریبا تین لاکھ ہے۔ ابتدائی اطلاعات کے مطابق یہ امریکی آرٹلری میرینز ان کرد جنگجوؤں کی مدد کریں گے، جو الرقہ کے قریب ہیں۔

دوسری جانب خانہ جنگی کے شکار ملک شام میں قیام امن سے متعلق مذاکرات کا اقوام متحدہ کے زیر اہتمام پانچواں دور تیئس مارچ کو شروع ہو گا۔ شام کے لیے عالمی ادارے کے خصوصی مندوب شٹیفان دے مستورا نے بتایا کہ جنیوا میں دو ہفتے بعد ہونے والی اس بات چیت میں دمشق حکومت اور شامی اپوزیشن دونوں کے اعلیٰ نمائندے شریک ہوں گے۔

 اس سے قبل دے مستورا نے نیو یارک ہی میں اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل میں شام کی تازہ ترین صورت حال سے متعلق اپنی رپورٹ بھی پیش کی۔ اس حوالے سے اقوام متحدہ میں امریکی سفیر نِکی ہیلی نے کہا کہ ان امن مذاکرات کا مقصد بنیادی طور پر شامی تنازعے کا سیاسی حل تلاش کرنا اور اس بات کو یقینی بنانا ہے کہ یہ ملک دہشت گردوں کی پناہ گاہ نہ بنے۔