1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

شام اقوامِ متحدہ کی نشست کی دوڑ سے فی الوقت دستبردار

شامی حکومت کے مطابق وہ اقوامِ متحدہ کی انسانی حقوق سے متعلق کونسل کی رکنیت حاصل کرنے کی کوششوں سے اس بار دستبردار ہو رہی ہے۔

default

شام نے اقوامِ متحدہ کی انسانی حقوق کی کونسل کی رکنیت سے دستبرداری سے متعلق فیصلے سے اقوامِ متحدہ کے ایشیائی اراکین کو آگاہ کردیا ہے۔ شام کے بجائے اب کویت اس رکنیت کے لیے امیدوار ہوگا اور شام سن دو ہزار تیرہ میں رکنیت حاصل کرنے کی کوشش کرے گا۔ کویت اور شام نے یہ رد و بدل باہمی اتفاق سے کیا ہے۔

اقوامِ متحدہ میں کویت کے سفیر کا کہنا تھا: ’ہم نے صرف رکنیت حاصل کرنے کے لیے وقت میں رد و بدل کیا ہے۔ ہم ایک دوسرے کے خلاف نہیں جا رہے۔ شام دستبردار نہیں ہو رہا۔‘

شامی سفیر بشار جعفری کے مطابق شامی حکومت کا یہ فیصلہ ملک کی موجودہ کشیدہ صورتِ حال کے باعث نہیں ہے۔ ’ہم نے اپنی رکنیت کے لیے دو ہزار تیرہ کا انتخاب کیا ہے، جس کا تعلق ہماری ترجیحات سے ہے۔‘

NO FLASH Protest Homs Syrien 06.05.2011

شام میں زبردست عوامی مظاہرے جاری ہیں

تاہم اقوامِ متحدہ کے ذرائع کے مطابق شامی حکومت کی جانب سے جمہوریت پسند مظاہرین پر حکومتی تشدّد اور کریک ڈاؤن کے بعد مغربی حکومتوں نے ایشیائی بلاک پر دباؤ ڈالا کہ وہ اس اہم نشست کے لیے کسی دوسرے ملک کا نام پیش کریں۔ ایشیائی ممالک نے سوچ بچار اور باہمی اتفاق سے اس بار کویت کو تجویز کیا ہے۔

خیال رہے کہ بیس مئی کو اقوامِ متحدہ کے سالانہ اجلاس میں انسانی حقوق کی کونسل کی ایک تہائی خالی نشستوں کے لیے انتخابات ہوں گے۔

شام میں حکومت کے خلاف وسیع پیمانے پر مظاہرے جاری ہیں۔ شامی حکومت مظاہرین کے خلاف طاقت کا استعمال کر رہی ہے جس کے باعث بین الاقوامی برادری کی جانب سے اس پر شدید تنقید کی جا رہی ہے۔ مبصرین کے مطابق ایسی صورتِ حال میں شام کا انسانی حقوق کی کونسل کا انتخاب لڑنا مضحکہ خیز ثابت ہو سکتا تھا۔

رپورٹ: شامل شمس⁄ خبر رساں ادارے

ادارت: ندیم گِل

DW.COM

ملتے جلتے مندرجات