1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

مہاجرین کا بحران

شامی مہاجرین کی واپسی کا مطالبہ سنگ دلی ہے، گرین پارٹی

مہاجرین مخالف عوامیت پسند جماعت اے ایف ڈی نے وفاقی جرمن پارلیمان میں شامی مہاجرین کی وطن واپسی کے لیے قرارداد جمع کرائی ہے۔ حالیہ انتخابات میں اے ایف ڈی پہلی مرتبہ ملکی پارلیمان تک رسائی حاصل کرنے میں کامیاب ہوئی تھی۔

آلٹرنیٹیو فار ڈوئچ لینڈ یا اے ایف ڈی موجودہ جرمن پارلیمان میں تیسری بڑی سیاسی پارٹی بن کر بھی سامنے آئی ہے۔ دائیں بازو کی اس مہاجرین اور مسلم مخالف عوامیت پسند جماعت نے ملکی پارلیمان میں شامی مہاجرین کی وطن واپسی سے متعلق ایک تجویز بحث کے لیے پیش کی ہے۔

’مہاجرت مخالف ہی مہاجرین کی اسمگلنگ میں ملوث‘

جرمنی میں پناہ کی درخواستوں پر فیصلوں میں کتنا وقت لگتا ہے؟

اے ایف ڈی کی اس قرارداد میں پارلیمان کے ارکان سے کہا گیا ہے کہ شام میں جاری جنگ ختم ہونے کے قریب ہے اور اب شام کے صرف دس فیصد علاقے میں جنگ جاری ہے۔ اے ایف ڈی نے اپنی اس دستاویز میں شامی مہاجرین کو جرمنی سے واپس شام بھیجنے کی درخواست کرتے ہوئے یہ دعویٰ بھی کیا ہے کہ شام کے زیادہ تر علاقوں میں قیام امن کے بعد تعمیر نو کے کام بھی شروع ہو چکے ہیں اور ملکی صدر بشار الاسد ایک سے زائد مرتبہ اپنے عوام سے وطن واپسی کی درخواست کر چکے ہیں۔

جرمن پارلیمان میں گرین پارٹی نے اے ایف ڈی کی اس تجویز پر سخت ردِ عمل کا اظہار کرتے ہوئے اسے ’سنگ دلی اور کم علمی پر مبنی مطالبہ‘ قرار دیا ہے۔ وفاقی جرمن پارلیمان میں گرین پارٹی کی مہاجرین کے امور سے متعلق ترجمان لوئیزے آمٹسبرگ کا کہنا تھا، ’’یہ تجویز نہ صرف سنگ دلی، بلکہ ناواقفیت اور کم علمی کی عکاسی بھی کرتی ہے۔‘‘

گرین پارٹی کے مطابق اے ایف ڈی کی اس تجویز کی مخالفت کی جائے گی۔ ایک مقامی اخبار سے گفتگو کرتے ہوئے آمٹسبرگ کا کہنا تھا کہ تیرہ ملین سے زائد شامی مہاجرین انسانی بنیادوں پر فراہم کی جانے والی امداد پر انحصار کر رہے ہیں اور ان میں سے بھی زیادہ تر امداد سے محروم ہیں۔

جرمن چانسلر انگیلا میرکل کی سیاسی جماعت سی ڈی یو گرین پارٹی اور ایف ڈی پی کے ساتھ مخلوط حکومت کے قیام کے لیے مذاکرات بھی جاری رکھے ہوئے ہے۔ گرین پارٹی نے اے ایف ڈی کی اس تجویز پر یہ بھی کہا ہے کہ اس جماعت نے برلن حکومت کو شامی صدر بشار الاسد کی حکومت کے ساتھ رابطے کی تجویز بھی دی ہے اور یوں انہوں نے اسد حکومت کی جانب سے انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کو نظر انداز کیا ہے۔

’پناہ کے مسترد درخواست گزاروں کو جیب خرچ نہیں ملنا چاہیے‘

جرمنی: موبائل فون کے ذریعے مہاجرین کی جاسوسی کا قانون تنقید کی زد میں

DW.COM