1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

مہاجرین کا بحران

شامی مہاجرین  فوری پناہ کی حیثیت کے حقدار نہیں، جرمن عدالت

ایک جرمن عدالت نے فیصلہ سنایا ہے کہ جینیوا کنونشن کے تحت کثیرالجہتی خانہ جنگی سے بھاگ کر جرمنی آنے والے شامی تارکینِ وطن کا یہ بنیادی حق نہیں ہے کہ انہیں فوراﹰ  باقاعدہ پناہ گزینوں کی حیثیت دے  دی جائے۔

Deutschland Protest in Berlin gegen die Eroberung Aleppos (Imago/C. Mang)

اعلیٰ درجے کی انتظامی عدالت نے اپیل کرنے کے امکان سے انکار کیا ہے

مغربی جرمنی کے شہر میونسٹر میں ایک اعلیٰ درجے کی انتظامی عدالت نے آج بروز منگل فیصلہ سناتے ہوئے کہا کہ ایسا فرض نہیں کیا جا سکتا کہ اپنے وطن  واپس لوٹنے والے شامی پناہ گزینوں کے ساتھ سیاسی مخالفین جیسا سلوک صرف اس لیے کیا جائے گا کہ وہ خانہ جنگی کے باعث ملک چھوڑ کر چلے گئے تھے۔

 شامی شہر حلب سے تعلق رکھنے والے ایک مہاجر نے جرمنی میں بطورِ پناہ گزین اپنی حیثیت پر جرمن وفاقی ادارے برائے مہاجرت اور ترکِ وطن کے ایک فیصلے کے خلاف عدالت میں یہ کیس دائر کیا تھا۔ بی اے ایم ایف کا ادارہ فی الوقت شامی پناہ گزینوں کو عارضی تحفظ فراہم کرتا ہے۔ یہ ضمنی تحفظ ان تارکینِ وطن کو ملک بدری سے تو بچاتا ہے لیکن اِن کے خاندان کو جرمنی آنے کی اجازت نہیں دیتا۔ جرمن عدالت کا یہ فیصلہ پناہ کے دیگر کیسز کے لیے بھی اہمیت کا حامل ہے۔

صرف جرمن ریاست نارتھ رائن ویسٹ فالیا میں ہی بی اے ایم ایف کے فیصلوں کے خلاف جنوری کے اختتام تک شامی مہاجرین کی جانب سے 12،300 کیس دائر کیے گئے۔ اعلیٰ درجے کی انتظامی عدالت نے اپیل کرنے کے امکان سے انکار کیا ہے۔

DW.COM