1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

شامی حکومت کی جانب سے ’اصلاحات‘ کا اعلان، مظاہرے جاری

شامی حکومت نے ملک میں بعض ’اصلاحات‘ کا اعلان ضرور کیا ہے تاہم یہ اعلان حکومت مخالف مظاہرین کو قائل کرنے میں کامیاب نہیں ہو سکا ہے۔

default

صدر بشار الاسد کو اپنے گیارہ سالہ اقتدار کے سب سے سنگین چیلنج کا سامنا ہے

حکومت مخالف مظاہرین کے مطالبات کو کسی حد تک پورا کرنے اور مظاہروں پر قابو پانے کے لیے شامی صدر بشار الاسد کی انتظامیہ نے جمعرات کو ملک میں بعض اصلاحات کرنے کا اعلان کیا تاہم مظاہرین کا کہنا ہے کہ وہ آج جمعے کی نماز کے بعد ملک بھر میں مظاہرے کریں گے۔

سوشل نیٹ ورکنگ ویب سائٹ فیس بک پر شامی انقلاب 2011 نامی ایک گروپ کے پیج پر کہا گیا ہے کہ جمعہ کے روز ہر گھر، ہر عبادت گاہ اور ہر چوک سے ملک کے آزاد شہری باہر نکلیں گے۔

Syrien Proteste Demonstration

حکومت مخالف مظاہرے جمعہ کے روز بھی جاری رہیں گے

واضح رہے کہ مشرق وسطیٰ کی دیگر ریاستوں کی طرح شام میں بھی معاشی اور سیاسی اصلاحات کے لیے عوامی مظاہرے کیے جا رہے ہیں۔ شام میں ان مظاہروں کا آغاز پندرہ مارچ کو ہوا تھا۔

صدر بشار الاسد ان دنوں اپنے گیارہ سالہ دورِ اقتدار کے سنگین ترین سیاسی چیلنج کا سامنا کر رہے ہیں۔ ان پر قریباً پچاس برس سے ملک میں ایمرجنسی کے خاتمے کے لیے بھی دباؤ ہے۔ امید کی جا رہی تھی کہ وہ اپنے حالیہ قومی خطاب مبں ایمرجنسی اٹھا نے کا اعلان کریں گے تاہم انہوں نے ایسا نہیں کیا۔ امریکہ اور بین الاقوامی براداری کی جانب سے شامی صدر کے خطاب پر سخت تنقید کی گئی ہے۔

حکومت کی جانب سے جن اقدامات کا اعلان کیا گیا ہے ان میں ان تین لاکھ کرد باشندوں کے مطالبات پر توجہ دینا بھی ہے جو کہ اب تک شامی شہریت سے محروم ہیں۔ صدر بشار الاسد نے درعا اور لاتاکیا کے شہروں میں سکیورٹی فورسز کے ہاتھوں تشدد کے واقعات کی تحقیقات کا بھی حکم دیا ہے۔

حکومت کے مطابق وہ ایمرجنسی اٹھانے پر بھی غور کر رہی ہے اور اس حوالے سے ایک کمیٹی تشکیل دے دی گئی ہے جو اپنی سفارشات 24 اپریل تک مکمل کر لے گی۔

شامی حکومت کا کہنا ہے کہ  ملک میں مظاہروں کے پیچھے ’بیرونی‘ ہاتھ اور مذہبی بنیاد پرست کار فرما ہیں۔

رپورٹ: شامل شمس ⁄  خبر رساں ادارے

ادارت: مقبول ملک

DW.COM