1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

مہاجرین کا بحران

'سیو دی چلڈرن ‘ جنگل کے تنہا بچوں کے بارے میں فکر مند

بچوں کی بہبود کے لیے کام کرنے والی فلاحی تنظیم  ’سیو دی چلڈرن ‘ نے فرانس میں کیلے شہر کے قریب واقع جنگل نامی مہاجر کیمپ کے انہدام کے تناظر میں وہاں موجود تنہا بچوں کی حفاظت کے حوالے سے  تشویش کا اظہار کیا ہے۔

Frankreich Flüchtlingskinder in Calais (Getty Images/M. Turner)

تنظیم کے اندازے کے  مطابق کیلے کی جنگل بستی میں ایک ہزار کے قریب بچے موجود ہیں

سیو دی چلڈرن نے جنگل کے مہاجر کیمپ میں سر پرستوں کے بغیر رہنے والے اِن بچوں کی حفاظت کو یقینی بنانے کا مطالبہ کیا ہے۔ تنظیم کے اندازے کے  مطابق کیلے کی جنگل بستی میں ایک ہزار کے قریب بچے موجود ہیں۔ سیو دی چلڈرن کی سربراہ کیرولین مائیلز نے خبر رساں ادارے اے ایف پی سے بات کرتے ہوئے کہا،’’ یہ صورتِ حال بچوں کو خاص طور پر خوفزدہ کرنے والی ہے کہ جہاں یہ بچے مہینوں سے رہ رہے تھے اُسی جگہ کو بلڈوزروں سے منہدم ہوتے ہوئے دیکھیں۔‘‘

اس سے قبل بچوں کی بہبود کے لیے سر گرم عمل تنظیم سیو دی چلڈرن نے فرانس پر زور دیا تھا کہ جنگل نامی مہاجر کیمپ کو منہدم نہ کیا جائے۔ یاد رہے کہ گزشتہ روز بروز منگل پچیس اکتوبر سے اِس کیمپ سے مہاجرین کے انخلاء کا عمل شروع کر دیا گیا ہے۔ کیرولین مائیلز کا مزید کہنا تھا کہ جنگل کیمپ سے اِن تنہا بچوں کا بحفاظت انخلاء بہت اہم ہے۔

  جنگل کے نام سے مشہور کَیلے کی اس مہاجر بستی میں قریب چھ سے آٹھ  ہزار مہاجرین مقیم رہے ہیں۔ اِن میں سے زیادہ تر کا تعلق سوڈان، افغانستان، اور اریٹیریا سے تھا۔ شمالی فرانس میں اس مہاجر بستی میں وہ تارکینِ وطن آباد تھے، جو چینل سرنگ کے ذریعے فرانس سے برطانیہ پہنچنے کے خواہش مند تھے۔

 ان افراد کی جانب سے ٹرکوں اور ٹرینیوں کی بوگیوں میں چھپ کر غیرقانونی طور پر برطانیہ میں داخل ہونے کی کوششیں تواتر سے کی جاتی رہی ہیں۔  ان کوششوں میں متعدد افراد اپنی زندگی کی بازی بھی ہار چکے ہیں۔ اسی تناظر میں فرانس اور برطانیہ کو ملانے والی اس سرنگ پر سکیورٹی کے سخت ترین انتظامات کیے گئے ہیں۔

DW.COM