1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

سینکڑوں شامی شہری ترکی جانے پر مجبور

آج جمعرات کو سینکڑوں شامی باشندے حکومتی آپریشن کے خوف سے سرحد پار کر کے ترکی میں داخل ہو گئے۔ دمشق حکومت نے اپنے مخالفین کےخلاف عسکری کارروائی جاری رکھی ہوئی ہے۔

default

ترکی میں داخل ہونے والے شامی پناہ گزین

عینی شاہدین کے مطابق گزشتہ شب سینکڑوں کی تعداد میں شامی فوجی حلب کے رستے ترکی کی سرحد کی طرف بڑھتے دکھائی دیے۔ شامی صدر بشار الاسد کی طرف سے حکومت مخالف مظاہرین کو کچلنے کے لیے جاری فوجی آپریشن میں بدستور اضافہ، دمشق اور انقرہ کے مابین کشیدگی بڑھانے کا باعث بن رہا ہے۔ ملکی صورتحال سے خوف زدہ اور شام کی فوج کے حملے سے بچنے کے لیے سینکڑوں شامی پناہ گزین آج جمعرات کو سرحد پار کر کہ ترکی میں داخل ہوگئے۔ سب سے زیادہ شورش زدہ علاقے شام کے شمالی شہر حلب سے مغرب کی طرف واقع ِادلب اور حلب سے 45 کلومیٹر مشرق کی طرف واقع شہر جسر الشغور اور اردگرد کے دیہات ہیں۔ یہی وہ علاقے ہیں جہاں حکومت مخالف مظاہرے سب سے زیادہ ہو رہے ہیں اور مظاہرین کے خلاف شامی فوج اپنی کارروائیوں میں تیزی لا رہی ہے۔ اطلاعات کے مطابق ترکی کی سرحد میں اب تک دس ہزار پناہ گزین داخل ہو چُکے ہیں۔ ترکی کا یہ علاقہ تجارتی مرکز کی حیثیت رکھتا ہے۔

No FLASH Syrien Türkei Flüchlinge Kinder

پناہ گزینوں میں ایک بڑی تعداد خواتین اور بچوں کی ہے

خبر رساں ادارے روئٹرز کے ساتھ ٹیلی فون کے ذریعے بات چیت کرتے ہوئے ترکی کے ایک مقامی ڈاکٹر نے بتایا کہ یورپ سے مشرق وسطیٰ جانے والے مال بردار ٹرکوں کے اہم ترین روٹ کو اسد کی فوج اور خفیہ پولیس نے بلاک کر دیا ہے اور شمالی حلب کے علاقے سے درجنوں افراد کو گرفتار کر لیا گیا ہے۔

دریں اثناء اقوام متحدہ کے پناہ گزینوں کے ہائی کمشنر نے کہا ہے کہ سات جون سے اب تک ہر روز پانچ سو سے ڈیڑھ ہزار کے درمیان پناہ گزین شام سے فرار ہو کر ترکی کی سرحد میں داخل ہو رہے ہیں۔

ترکی نے شامی صدر بشار الاسد کو انتباہ کیا ہے کہ وہ 1980ء کے عشرہ میں اپنے والد کے دور میں مختلف شہروں میں ہونے والی عوامی خونریزی کے واقعات نہ دہرائیں۔ ساتھ ہی ترک حکومت کے سینئر اہلکاروں نے کہا ہے کہ بشار الاسد کے پاس ایک ہفتے سے بھی کم وقت ہے ملک میں اصلاحات سے متعلق اپنے دیرینہ وعدوں کو پورا کرنے کا، قبل اس کے کہ شام میں غیر ملکی مداخلت شروع ہو جائے۔

NO FLASH Türkei muss mit Tausenden Flüchtlingen aus Syrien rechnen

بڑی تعداد میں ترکی آنے والے شامی پناہ گزین، انقرہ کے لیے گہری تشویش کا باعث بن رہے ہیں

اُدھر اقوام متحدہ کے سیکریٹری جنرل بان کی مون نے میڈیا کے نمائندوں کو بیان دیتے ہوئے کہا ہے کہ بشار الاسد بہت تیزی سے اپنی ساکھ کھو رہے ہیں، کیونکہ ایک عرصے سے شام کی صورتحال بد سے بدتر ہوتی جا رہی ہے اور اسد اپنے اصلاحات کے وعدوں کو پورا کرنے میں بُری طرح ناکام نظر آ رہے ہیں۔

رپورٹ: کشور مصطفیٰ

ادارت: امتیاز احمد

DW.COM

ویب لنکس