1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

سیلاب کے باعث لاپتہ بچوں کی تعداد ایک ہزار سے زائد

اقوام متحدہ کے ادارے یونیسیف کے مطابق پاکستان میں آنے والے حالیہ سیلابوں کے باعث ایک ہزار سے زائد بچے اپنے خاندانوں سے بچھڑ گئے یا لاپتہ ہو چکے ہیں۔ تا ہم ان میں سے اب تک صرف 500 واقعات ہی رپورٹ ہو سکے ہیں۔

default

خاندانوں سے بچھڑنے کے واقعات مختلف وجوہات کی بناء پر رپورٹ نہیں ہو سکے

اس حوالے سے اسلام آباد میں قدرتی آفات سے نمٹنے کے قومی ادارے نیشنل ڈیزاسٹر مینجمنٹ اتھارٹی (NDMA) اور یونیسیف کے تعاون سے ایک ورکشاپ کا انعقاد کیا گیا۔ اس موقع پر یونیسیف کے بچوں کی حفاظت یعنی چائلڈ پروٹیکشن کے ماہر نوح اوچالا نے بتایا کہ پاکستان میں سیلاب زدہ بچوں کی گمشدگی اور اپنے خاندانوں سے بچھڑنے کے متعدد واقعات مختلف وجوہات کی بناء پر ابھی تک رپورٹ نہیں ہو سکے۔

انہوں نے کہا :”امدادی اداروں نے گمشدہ بچوں کی کم تعداد کا اِندراج کیا ہے لیکن اس طرح کے اشارے ملے ہیں کہ یہ تعداد ایک ہزار سے زائد ہو سکتی ہے۔ یونیسیف کو اپنے ساتھ براہ راست کام کرنے والی ایجنسیوں کی جانب سے جو کیس رپورٹ ہوئے ہیں، ان کی تعداد پانچ سو ہے۔“

Pakistan Flüchtlinge Kinder vor UNHCR Zelten

اب تک صرف 500 واقعات ہی رپورٹ ہو سکے

مسٹراوچالا کے مطابق ان بچوں کو مختلف قسم کے خطرات لاحق ہیں، جن میں غیر قانونی سمگلنگ، چائلڈ لیبر اور جنسی زیادتی جیسے خطرات سرفہرست ہیں۔

ادھر نیشنل ڈیزاسٹر مینجمنٹ اتھارٹی کے پاس موجود اعداد و شمار کے مطابق سیلاب زدہ علاقوں میں 146 بچوں کے اپنے خاندانوں سے بچھڑنے یا لاپتہ ہونے کے واقعات پیش آئے۔ ان میں سے 129بچوں کودوبارہ ان کے خاندانوں سے ملا دیا گیااور اب صرف سترہ بچے ایسے ہیں جن کے بارے میں ابھی تک کچھ معلوم نہیں ہو سکا۔

No Flash Pakistan Überschwemmung

ان میں سے 129بچوں کودوبارہ ان کے خاندانوں سے ملا دیا گیا ہے

گمشدہ بچوں کی اتنی کم تعداد کے اِندراج کے بارے میں ایک سوال پر این ڈی ایم اے کے بچوں سے متعلق سیل کی کوآرڈینیٹر عالیہ آغا نے اعتراف کیا کہ یہ اعداد و شمار مکمل نہیں۔انہوں نے کہا :

’’اس بارے میں ٹھوس معلومات اکٹھی نہیں ہو رہیں کیونکہ یہ ذمہ داری کسی ایک ادارے پر عائد نہیں ہوتی۔کچھ ادارے جو مقامی سطح پر امدادی کام کر رہےہیں، تو وہ اپنا ڈیٹاجمع کر رہے ہیں اور انہوں نے اس حوالے سے کام کرنے والی ایجنسی تک کچھ معلومات پہنچا دیں اور کچھ نہیں پہنچا سکے۔

بدقسمتی سے یہ ایک ایسا نظام ہے جس کو ہم ابھی تک منظم یا فعال نہیں کر پائے ہیں۔‘‘

NDMA کےحکام کا دعویٰ ہے کہ وہ ایک ایسا منصوبہ متعارف کرا رہے ہیں، جس کے تحت امدادی ادارے، ضلعی انتظامیہ اور قانون نافذ کرنے والے ادارے اور انسانی حقوق کی تنظیمیں مل کر ایسے بچوں کی تلاش ، بہبود اور بحالی کے لیے کام کریں گی۔

رپورٹ: شکور رحیم ، اسلام آباد

ادارت: عصمت جبیں

DW.COM

ویب لنکس