1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

سیلاب زدہ علاقوں میں لوٹ مار اور چوری کے واقعات

پاکستانی سیلاب زدہ علاقوں میں جہاں جہاں لوٹ مار اور چوری کے واقعات عمل میں آئے ہیں، وہاں متاثرین کے لئے اس قدرتی آفت کے مقابلے میں المناک حالات میں انسانوں کی مفاد پرستی طویل عرصے تک زیادہ تکلیف دہ رہے گی۔

default

ہزاروں افراد اپنے گھروں کی چھتوں پر صرف اس لئے محصور ہو گئے کہ انہیں سامان کی چوری کا خدشہ تھا

پاکستان کے بیشتر علاقے اس وقت ملکی تاریخ کے بدترین سیلابوں کی زد میں ہیں۔ گزشتہ ماہ کے آخری دنوں میں مون سون کی شدید بارشوں کے نتیجے میں سیلابی ریلوں نے جن انسانی المیوں کو جنم دیا، ان کا سلسلہ ابھی تک جاری ہے۔

ڈیڑھ ہزار سے زائد انسانی جانوں کے ضیاع کے ساتھ ساتھ لاکھوں افراد کے سروں سے ان کی چھتیں بھی چھن گئیں۔ کئی ہزار ایکڑ رقبے پر کھڑی فصلوں کی تباہی اور بڑی تعداد میں مویشیوں کی ہلاکت نے لوگوں کو ان کے روزگار کے وسیلوں سے بھی محروم کر دیا۔ اس صورتحال پر کس رحم دل کی آنکھ اشک بار نہ ہوئی ہو گی۔ لیکن ان حالات میں بھی بہت سے مفاد پرست گروہوں کی صورت میں لوٹ مار میں مصروف پائے گئے۔

Pakistan Überschwemmung Flut

آفت زدہ علاقوں میں ایسا کرتے ہوئے لوگ یہ کیوں نہیں سوچتے کہ ان کا یہ عمل دوسروں کو کتنا متاثر کرے گا

سیلاب اور بارشوں سے سب سے زیادہ متاثرہ صوبے خیبر پختونخوا کے شہر نوشہرہ میں ڈاکوؤں کے گروہ آفت زدہ لوگوں کا بچا کھچا سامان لوٹ کر کشتیوں میں بھر بھر کے لے جاتے دیکھے گئے۔

اس بارے میں نیشنل ڈیزاسٹر مینیجمنٹ اتھارٹی کے صوبائی ترجمان عدنان خان نے ڈوئچے ویلے کو بتایا: ’’جب نوشہرہ سے سیلابی پانی کا ریلا گزر رہا تھا تو متاثرہ شہری اپنے گھروں کی چھتوں پر کھڑے تھے۔ انہوں نے بتایا کہ ڈاکو ان کی آنکھوں کے سامنے ہی کشتیوں کے ذریعے ان کے گھروں سے سامان لوٹ کر لے جاتے رہے۔ ہم نے اس بارے میں نوشہرہ کی ضلعی انتظامیہ سے رابطہ کرنے کی کوشش کی لیکن ان سے کوئی رابطہ نہ ہونے پر پاکستانی فوج سے رابطہ کیا گیا کہ وہ وہاں امدادی کارروائیوں کے دوران اس طرح کے عناصر پر بھی نظر رکھے۔‘‘

Pakistan Überschwemmung Flut

قدرتی عوامل کے نتیجے میں ہونے والی تباہی تو قابل برداشت ہے لیکن اس پر انسانوں کا ایسا رویہ ناقابل برداشت ہے

جنوبی پنجاب کے پسماندہ ترین علاقوں میں انتظامیہ کی جانب سے متعدد بار خبردار کرنے کے باوجود ہزاروں افراد اپنے گھروں کی چھتوں پر صرف اس لئے محصور ہو گئے کہ انہیں بھی اپنے گھروں سے نکلنے کی صورت میں اپنے مال مویشیوں اور گھریلو سامان کی چوری کا خدشہ تھا۔

بہت پریشان کر دینے والی اس صورتحال میں، جب ہزاروں افراد بے رحم سیلابی ریلوں کی نذر ہو گئے ہوں، وہ کون لوگ ہوں گے جو لوٹ مار میں مصروف تھے اور ان کی ذہنی حالت کو کیا نام دیا جا سکتا ہے؟ اس سوال کے جواب میں معروف ماہر نفسیات ڈاکٹر رضوان تاج نے ڈوئچے ویلے کو بتایا کہ نفسیات کی زبان میں ایسے لوگوں کو Psychopath کہا جاتا ہے۔

ڈاکٹر رضوان تاج نے کہا: ’’یہ ایسے لوگ ہیں جو اس طرح کے واقعات سے فائدہ اٹھاتے ہیں اور یہ کام وہی لوگ کرتے ہیں جو معاشرے میں برے ہوتے ہیں اور اکثر آفت زدہ علاقوں میں ایسا کرتے ہوئے یہ نہیں سوچتے کہ ان کا یہ عمل دوسروں کو کس طرح اور کتنا متاثر کرے گا۔‘‘

قدرتی عوامل کے نتیجے میں ہونے والی تباہی کو اکثر انسان قدرت ہی کا فیصلہ سمجھ کر برداشت تو کر لیتے ہیں لیکن ایسے المناک حالات میں انسانوں کے ہاتھوں انسانوں ہی کو پہنچنے والا دکھ زیادہ تر ناقابل فراموش ہی رہتا ہے۔

رپورٹ: شکور رحیم، اسلام آباد

ادارت: عصمت جبیں

DW.COM

ویب لنکس