1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

صحت

سیلاب زدہ علاقوں میں عارضہ چشم پھیل رہا ہے

صاف پانی کی قلت کے سبب جہاں معدے کی بیماریاں اور دیگر عفونت پھیل رہی ہے وہاں آنکھوں کی بیماری بھی ایک سے دوسرے شخص تک تیزی سے منتقل ہو رہی ہے۔

default

پاکستان کے حالیہ تباہ کن سیلاب کے بعد جہاں بیس ملین انسان سر چھپانے کے لئے چھت، زندہ رہنے کے لئے غذا اور پینے کے صاف پانی جیسی اہم ترین ضروریات سے محروم ہوئے ہیں، وہاں عالمی سطح پر پانی کی اہمیت اور اس کے معیار کے بارے میں شعور بیدار کرنے کی کوششوں میں اضافہ دیکھنے میں آ رہا ہے۔ سویڈن کے دارالحکومت سٹاک ہولم میں عالمی ہفتہء آب میں اسی موضوع کو مرکزی اہمیت حاصل رہی۔ پاکستان کے سیلاب زدہ علاقوں میں متاثرین کو طبی سہولیات فراہم کرنے والی ٹیمیں جہاں جہاں بھی سرگرم عمل ہیں، اُن کی سب سے پہلی شکایت یہی ہے کہ ان بے بس انسانوں کو پینے کا صاف پانی میسر نہیں ہے، جس کے سبب انفیکشن یا عفونت پھیلنے کے امکانات کئی گنا زیادہ ہیں۔ وبائی یا ایک شخص سے دوسرے تک پہنچنے والی کئی قسم کی بیماریوں میں بھی اضافہ ہو رہا ہے۔ ماہرین کا کہنا ہے کہ بچے نہایت حساس اور نازک ہونے کے سبب Communicable Diseases یا متعدی بیماریوں کا سب سے آسانی اور تیزی سے شکار ہو سکتے ہیں۔

pakistan1.jpg

نوشہرہ کے سیلاب زدگان بے سرو سامانی کی حالت میں بقا کی تلاش میں

پاکستان کے سیلاب سے بہت زیادہ متاثر ہونے والے شمال مغربی صوبے خیبر پختونخواہ کے دارالحکومت پشاور میں انسٹیٹیوٹ آف ریڈیو تھیراپی اور نیوکلئیر میڈیسین میں سیلاب زدگان کو علاج و معالجے کی سہولت فراہم کرنے کے لئے ایک سینٹر قائم کیا گیا ہے۔ اس ادارے کی ڈائریکٹر اور پاکستان کی ایک معروف کینسر اسپیشلسٹ ڈاکٹر صفورا شاہد کا کہنا ہے کہ ان کے صوبے میں سب سے زیادہ آنکھوں کی بیماری پھیلی ہوئی ہے، جو ایک سے دوسرے شخص میں منتقل ہو رہی ہے۔ وہ کہتی ہیں،’عارضہء چشم ایک سے دوسرے میں تیزی سے منتقل ہو رہا ہے۔ وائرل اور بیکٹیریل دونوں طرح کے انفیکشن وسیع پیمانے پر پھیل چکے ہیں‘۔

Symbolbild Leitungswasser

صاف پانی طرح طرح کے انفکشن سے بچاتا ہے

ڈاکٹر صفورا شاہد کا کہنا ہے کہ حکومت اور ملکی وغیر ملکی امدادی تنظیموں سب کو مل کر سب سے زیادہ کوشش پینے کے صاف پانی کی فراہمی کے لئے کرنی چاہئے، کیونکہ صاف پانی نہ صرف پینے کے لئے درکار ہے بلکہ آنکھوں کی بیماری سے بچنے کے لئے بھی بہت ضروری ہے۔ وہ کہتی ہیں،’جن لوگوں پر اتنی بڑی مصیبت آئی ہے، اُن سے ایک گزارش یہ ہے کہ وہ دن میں پانچ چھ بار آنکھوں کو صاف پانی سے دھوئیں۔ اگر اُنہیں Eye Drops یا آنکھوں میں ڈالنے والے قطرے بھی میسر ہیں، تب بھی وہ ساتھ ساتھ صاف پانی سے بھی آنکھوں کو دھوئیں۔ آنکھوں کو رگڑنے سے پرہیز کریں۔ کسی تولیے یا دوپٹے سے آنکھوں کو صاف نہ کریں بلکہ نرم کپڑے یا ململ کے صاف اور چھوٹے سے ٹکڑے سے رومال بنا کر آنکھوں کی صفائی کے لئے استعمال کریں اور اسے یا تو ایک بار استعمال کرنے کے بعد پھینک دیں یا پھر رومال کو اکثر وبیشتر صابن سے دھو کر دھوپ میں سکھا لیں اور پھر استعمال کریں‘۔

طبی ماہرین کا کہنا ہے کہ ان چند احتیاطی تدابیر کی مدد سے مختلف طرح کی عفونتوں یا انفیکشنز کو مزید پھیلنے سے روکا جا سکتا ہے۔

رپورٹ: کشور مصطفیٰ

ادارت: امجد علی

DW.COM

ویب لنکس