1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

سیلاب زدگان کے لئے امداد کی فراہمی پر، اقوام متحدہ کی تشویش

اقوام متحدہ کے مطابق پاکستان کے حالیہ سیلابوں سے آنے والی تباہ کاریوں کے نتیجے میں اب تک لگائے جانے والے اندازوں سے کہیں زیادہ نقصانات ہوئے ہیں۔

default

اقوام متحدہ کے مطابق جوں جوں امدادی سرگرمیوں کا دائرہ وسیع کیا جا رہا ہے ، توں توں اس نا گہانی آفت کی سنگینی کا اندازہ ہو رہا ہے۔ اقوام متحدہ کی رابطہ ایجنسی کے سربراہ مانوول بسلر نے کہا ہے کہ سیلاب متاثرین جنہیں فوری امداد کی اشد ضرورت ہے، کی تعداد بہت زیادہ ہونے کے سبب امدادی آپریشن کی ضرورت اتنے بڑے پیمانے پر ہے، جس کی مثال نہیں ملتی۔ مانوول کے بقول’’ ہمیں شمال میں کوہ قراقرم سے لے کر جنوب میں بحیرہ عرب کے علاقوں تک کم از کم 8 ملین متاثرین تک پہنچنا ہے‘‘۔

اقوام متحدہ کے اہلکاروں نے کہا ہے کہ جہاں متاثرین کی امداد کی ضرورت میں اضافہ ہو رہا ہے وہاں عالمی برادری کی طرف سے عطیات کا سلسلہ رُکا ہوا ہے۔ پاکستان چیریٹی کُنسرشیم کے صدر Tammy Hasselfeldt نے اپنےایک بیان میں کہا ’’ دراصل ہم اب مشکل ترین مرحلے میں داخل ہو رہے ہیں۔ اگر امداد کے کاموں میں تیزی نہیں لائی گئی تو بچے اور کمزور افراد کی اموات میں اضافے کے قوی امکانات ہیں‘‘۔

Pakistan / Flut / Hochwasser / Baby / NO-FLASH

قدرتی آفات کے بعد پھیلنے والی وباؤں کے نتیجے میں سب سے زیادہ متاثر بچے ہوئےہیں

ورلڈ فوڈ پروگرام نے پاکستان میں غذا کی ترسیل کے سلسلے میں تین اہم ترین چیزوں بیجوں، فصلوں اور ان سے ہونے والے منافع کو پہنچنے والے نقصانات سے انتباہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ ان کی وجہ سے سیلاب سے تباہ حال اس ملک کو آئندہ دنوں میں غذا کی شدید قلت کا سامنا ہوگا۔

دریں اثناء اقوام متحدہ متعینہ پاکستانی سفیر عبداللہ حسین ہارون نےجمعرات کو اس بارے میں تحقیقات کرانے پر زور دیا ہے کہ پاکستان کے جنوبی صوبے سندھ میں امیر زمینداروں نے اپنی فصلیں بچانے کے لئے حفاظتی اقدامات کرتے ہوئے سیلاب سے بچاؤ کے لئے بنائے جانے والے پشتوں میں شگاف ڈال کر سیلاب کا رُخ غریبوں کے علاقوں کی طرف موڑ دیا تھا۔

ایک نشریاتی ادارے کے ساتھ گفتگو کرتے ہوئے پاکستانی سفیر نے کہا کہ اس قسم کے ثبوت مل رہے ہیں کہ زمین داروں نے پشتے دانستہ طور پر پھٹنے دئے جس سے پانی ان کے کھیتوں کی طرف جانے کے بجائے غریبوں کے علاقوں کی طرف بڑھ گیا۔ عبداللہ ہارون کا کہنا تھا کہ سندھ کے اُن علاقوں میں جہاں گزشتہ سالوں کے دوران سیلاب نہیں آیا، وہاں اب بڑے بڑے زمیندار کاشت کاری کر رہے ہیں۔ ان علاقوں کی حفاظت کے لئے پانی کے رُخ کو موڑ کردوسری طرف کر دیا گیا۔انہوں نے حکومت سے اپیل کی ہے کہ وہ اس کی مکمل تحقیقات کروائے۔

گزشتہ روز، بُدھ کو سندھ کے شہر ٹھٹھ کے ایک ریلیف کیمپ میں پناہ لئے ہوئے سیلاب زدگان نے بھوک پیاس اورمایوسی کی حالت میں کراچی کی طرف جانے والی ہائی وے کو بلاک کر کہ مظاہرے کئے اور حکومت سے مطالبہ کیا کہ وہ متاثرین کو غذا، اور سر چھپانے کے لئے ٹھکانے فراہم کرے۔ سندھ کے ایک قصبے سُجاول کے رہنے والے 60 سالہ محمد قاسم نے خبر رساں ایجنسی اے ایف پی کو بتایا ’’ ہمیں دو روز سے نہ تو کھانے کو کچھ ملا ہے نا ہی پینے کے لئے پانی‘‘۔

Pakistan Flut NO FLASH

عالمی امدادی اداروں کا کہنا ہے کہ امداد کم ہے اور متاثرین زیادہ

اُدھر پاکستان کی تاریخ کی بدترین ناگہانی آفت کے بعد ملک کی صورتحال پر قابو پانے اور متاثرین کی امداد کے کاموں میں ناکامی پر بہت زیادہ تنقید کی زد میں آئے ہوئے وزیراعظم پاکستان یوسف رضا گیلانی نے کہا ہے کہ ملک کو حالیہ سیلابوں سے 43 بلین ڈالر کا نقصان پہنچا ہے۔ گیلانی نے کہا ہے کہ اُن کے ملک کو اس وقت مہنگائی کی شرح میں 20 فیصد اضافے، اقتصادی ترقی میں غیر معمولی سست روی، بے روزگاری میں اضافےاور معاشرتی عدم استحکام جیسے مسائل کا سامنا ہے۔

رپورٹ: کشور مصطفی

ادارت: عاطف توقیر

DW.COM