1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

سیلابی نقصانات: تقریباﹰایک ہزار ارب روپے

کئی پاکستانی اور غیر ملکی اقتصادی ماہرین کا کہنا ہے کہ پاکستان حالیہ تباہ کن سیلابوں سے کئی عشرے پیچھے چلا گیا ہے۔ ان ماہرین کے مطابق یہ سیلاب ملکی معیشت اور صنعت کے لئے سینکڑوں ارب روپے کے نقصانات کا سبب بنے۔

default

اسی طرح کے خیالات کا اظہار ممتاز ماہر معاشیات ڈاکٹر شاہد حسن صدیقی نے کہا ہے کہ سیلاب کے پاکستانی معیشت پرمنفی اثرات مرتب ہوں گے۔ سیلاب سے جہاں تیار فصلیں اور لائیو اسٹاک بری طرح متاثر ہوئے ہیں وہیں پر زرعی شعبے کو بھی ناقابل تلافی نقصان پہنچا ہے۔

ڈوئچے ویلے سے گفتگو کرتے ہوئے ڈاکٹر شاہد حسن صدیقی نے کہا کہ اگر حکومت نے کوئی سیلاب سر چارج یا آئی ایم ایف کی خواہش پر جنرل سیلز ٹیکس لگانے کی کوشش کی، تو عوام اس کی بھرپور مخالفت کریں گے اور یہ مزاحمت ممکنہ طور پر سول وار میں تبدیل ہو جانے کا خطرہ بھی ہو گا۔

NO FLASH Pakistan Überschwemmung

پاکستان حالیہ تباہ کن سیلابوں سے کئی عشرے پیچھے چلا گیا ہے

انہوں نے کہا کہ سیلاب کی وجہ سے جہاں مہنگائی کا ایک نیا طوفان آنے والا ہے وہیں غذائی اجناس کی قلت پیدا ہونے کا بھی شدید امکان ہے۔ ڈاکٹر شاہد صدیقی نے کہا کہ پاکستان ابھی وزیرستان آپریشن سے متاثرہ افراد کی بحالی کے عمل سے گزر رہا تھا کہ ایک بڑی قدرتی آفت نے اسے آن گھیرا۔ ان کے بقول اس ناگہانی آفت سے پاکستان کو تیرہ اعشاریہ پانچ ارب ڈالر یا قریب ایک ہزار ارب روپے کا نقصان پہنچا ہے۔

ڈاکٹر شاہد حسن نے کہا کہ عالمی اداروں کی رپورٹوں کے مطابق پاکستان پہلے ہی سے اڑتالیس اعشاریہ چھ فیصد غذائی قلت کا شکار ہے۔ ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ پاکستان ایک زرعی ملک ہے اور کپاس برآمد کرنے والے بڑے ملکوں میں شمار ہوتا ہے۔ لیکن پہلے اگر کپاس کی قریب دو ملین گانٹھیں برآمد ہوتی تھیں تو سوات میں فصلوں کی تباہی کی وجہ سے یہ مقدار بھی کم ہوجائے گی۔ انہوں نے کہا کہ حکومت سیلاب کے بعد پیدا ہونے والی صورتحال سے نمٹنے کے لئے نہ پہلے تیار تھی اور نہ اب ہے۔

Flash-Galerie Pakistan Überschwemmung

عالمی اداروں کی رپورٹوں کے مطابق پاکستان پہلے ہی سے اڑتالیس اعشاریہ چھ فیصد غذائی قلت کا شکار ہے

ڈاکٹر شاہد حسن صدیقی کے مطابق غذائی اجناس کی قلت کے بعد مہنگائی کا بدترین طوفان حکمرانوں کو بھی اپنے ساتھ بہا کر لے جا سکتا ہے۔ اُن کے بقول غذائی اجناس کی قلت اور عدم دستیابی کے باعث سیلاب سے متاثرہ علاقوں میں ابھی سے پُر تشدد واقعات رونما ہو رہے ہیں اور انسانی ہلاکتیں دیکھنے میں آ رہی ہیں۔

انٹر نیشنل کاٹن ایڈوائزری کمیٹی کا کہنا ہے کہ پاکستان کا آٹھ فیصد زیر کاشت رقبہ سیلاب کی نذر ہوچکا ہے، جس کی وجہ سے کپاس کی پیداوار میں پندرہ فیصد تک کمی کا خدشہ ہے۔ اسی دوران پاکستان کے مرکزی بینک نے متاثر ہونے والے چھوٹے کاشت کاروں کے لئے نئے آسان قرضے متعارف کرانے کا منصوبہ بھی بنایا ہے لیکن کپاس کی پیداوار میں کمی سے شاید بچا نہیں جا سکے گا۔ ڈاکٹر شاہد صدیقی نے کہا کہ جو رقوم پہلے ترقیاتی منصوبوں پر خرچ ہونا تھیں، وہ اب سیلابی تباہی کے اثرات کی تلافی پر خرچ کی جائیں گی۔

رپورٹ: رفعت سعید

ادارت: عصمت جبیں

DW.COM

ویب لنکس