1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

فن و ثقافت

سپین میں بُل ریس ختم، سینکڑوں شرکاء زخمی

شمالی سپین کے شہر پامپلونا میں ہر سال منعقد ہونے والی بیلوں کی مشہور زمانہ دوڑ آٹھ روز تک جاری رہنے کے بعد بدھ کی شام ختم ہو گئی۔ امسالہ ’بُل ریس‘ میں کل 376 شرکاء زخمی ہوئے۔ یہ تعداد گزشتہ برس کے مقابلے میں 70 کم تھی۔

default

سپین کے شہر پامپلونا میں ہر سال منعقد ہونے والی بیلوں کی مشہور زمانہ دوڑ

پامپلونا میں اس روایتی دوڑ کے منتظمین نے مقابلوں کے اختتام پر بتایا کہ پچھلے سال بُل ریس میں ایک 27 سالہ نوجوان ہلاک بھی ہو گیا تھا تاہم ایک بڑے ثقافتی میلے کا رنگ اختیار کر جانے والے ان مقابلوں میں اس مرتبہ کوئی شخص ہلاک نہیں ہوا۔

اس سال اس ریس میں جو لوگ زخمی ہوئے، ان میں سے 37 ابھی تک مختلف ہسپتالوں میں زیر علاج ہیں۔ ان میں سے آٹھ وہ شائقین بھی ہیں، جو بدھ کے روز 600 کلوگرام وزنی ایک بھینسے کے بہت لمبے اور نوکیلے سینگوں کی زد میں آ گئے تھے۔

BdT Deutschland Ochsenrennen in Münsing

جنوبی جرمنی میں بھی بیلوں کی دوڑ کے مقابلے منعقد ہوتے ہیں

ان آٹھ افراد میں شامل ایک 23 سالہ نوجوان اس لئے شدید زخمی ہو گیا تھا کہ پامپلونا کی گلیوں میں اندھا دھند بھاگتے بیلوں کے آگے دوڑتے ہوئے وہ زمین پر گر گیا تھا اور پیچھے سے آنے والے ایک بیل نے اپنے سینگ اس کے سینے میں گاڑ دئے تھے۔

اس سال اس ریس میں حصہ لینے والے باہمت اور مہم جو افراد کی مجموعی تعداد چار ہزار کے قریب رہی۔ سپین میں بیلوں کی اس روایتی دوڑ کے انعقاد پر جانوروں سے بے رحمانہ سلوک کے خلاف جدوجہد کرنے والے حلقوں کی طرف سے شدید تنقید بھی کی جاتی ہے۔ اس دوڑ میں آٹھ روز تک روزانہ بیسیوں بیلوں کو پامپلونا کی تنگ گلیوں میں اس طرح چھوڑا جاتا ہے کہ ہزاروں کی تعداد میں سرخ اور سفید لباس پہنے اور ہاتھوں میں تہہ کئے ہوئے اخبار پکڑے ہزارہا شائقین ان بیلوں کے آگے آگے دوڑتے ہیں۔ اس دوران اندرون شہر سے بُل فائٹنگ کے لئے استعمال ہونے والے مرکزی سٹیڈیم تک جانے والا 825 میٹر طویل فاصلہ طے کیا جاتا ہے۔

Castro und Hemingway

امریکی ادیب ارنسٹ ہیمنگوے کیوبا کے رہنما کاسترو کے ہمراہ، فائل فوٹو

پامپلونا میں اس روایتی بُل ریس کو عالمی شہرت سن 1926ء میں لکھے گئے نوبل ادب انعام یافتہ امریکی مصنف ارنسٹ ہیمنگوے کے مشہور ناول The Sun Also Rises کی وجہ سے ملی تھی، جس میں اس ریس کی بڑی تفصیل سے منظر کشی کی گئی ہے۔

آج پامپلونا کی مجموعی آبادی ایک لاکھ 85 ہزار کے قریب ہے۔ لیکن اس شمالی ہسپانوی شہر میں رقص و موسیقی کے ساتھ منایا جانے والا یہ کئی روزہ میلہ اب اتنا مقبول ہو چکا ہے کہ اسے دیکھنے کے لئے سپین کے مختلف شہروں کے علاوہ دنیا بھر سے ہر سال ایک ملین سے زائد افراد پامپلونا کا رخ کرتے ہیں۔

اس بل ریس کے دوران باقی ماندہ بیلوں سے بچھڑ جانے والے کسی بپھرے ہوئے بھینسے کے سینگوں کی زد میں آ کر یا اس کے پاؤں تلے کچلے جانے کے نتیجے میں انسانی ہلاکتوں کے واقعات بھی کوئی انہونی بات نہیں ہیں۔ گزشتہ برس اسی ریس میں ایک 27 سالہ نوجوان ہلاک ہو گیا تھا جبکہ مجموعی طور پر سن 1924ء سے لے کر آج تک پامپلونا کا یہی پرکشش اجتماع کم ازکم 15 افراد کی جان لے چکا ہے۔

رپورٹ: مقبول ملک

ادارت: گوہر نذیر گیلانی

DW.COM