1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

کھیل

سپاٹ فکسنگ: آئی سی سی کے اقدامات

سپاٹ فکسنگ سکینڈل بعد کرکٹ حلقوں میں شروع ہونے والی گرما گرم بحث کے دوران ہی بین الاقوامی کرکٹ کونسل نے کہا ہے کہ تمام رکن ممالک اپنی ڈومیسٹک کرکٹ میں انسداد بد عنوانی کے قوانین کے مؤثر ہونے کی جانچ پڑتال کریں۔

default

محمد عامر بھی سپاٹ فکسنگ سکینڈل میں ملوث بتائے گئے ہیں

پاکستان قومی کرکٹ ٹیم پر سپاٹ فکسنگ کے الزامات کی جانچ پڑتال کا سلسلہ تو جاری ہی ہے لیکن ساتھ ہی بین الاقوامی کرکٹ کونسل ICC نے تمام رکن ممالک کو ہدایات بھی جاری کر دی ہیں کہ وہ اپنے اپنے ہاں ڈومیسٹک سطح پر کھیلی جانے والی کرکٹ میں انسداد بدعنوانی کا ایک کوڈ متعارف کروائیں۔

پاکستانی کرکٹ ٹیم کے حالیہ دورہ انگلینڈ کے دوران سلمان بٹ، محمد عامر اورمحمد آصف سپاٹ فکنسگ سکینڈل میں ملوث پائے گئے تھے۔ اِس بناء پر ICC نے ان تینوں کھلاڑیوں پر عارضی طور پر پابندی عائد کر دی تھی۔ اِس پابندی کے مطابق وہ بین الاقوامی کرکٹ میں اس وقت تک حصہ نہیں لے سکتے، جب تک ان کے اوپر عائد الزامات کی جانچ پڑتال نہیں ہو جاتی۔

Pakistan Cricket Verband Ijaz Butt

پاکستانی کرکٹ بورڈ کے چیئر مین اعجاز بٹ

بات ان کھلاڑیوں پر پابندی عائد کرنے پر ہی ختم نہ ہوئی بلکہ اس واقعے کے بعد دنیائے کرکٹ میں یہ بحث شروع ہوئی کہ جوئے بازی، میچ فکسنگ اور سپاٹ فکسنگ پر قابو پانے کے لئے کیا کیا جا سکتا ہے۔ کرکٹ ماہرین کی سر توڑ مشاورت کے بعد ICC کے چیف ایگزیکٹو ہارون لوگارٹ نے اب کہا ہے کہ اس سنگین مسئلے پر قابو پانے کے لئے ڈومیسٹک کرکٹ میں بنیادی اصلاحات کی ضرورت ہے۔

لوگارٹ کی طرف سے جاری کئے گئے ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ تمام رکن ممالک اپنے اپنے ہاں ڈومیسٹک کرکٹ کے قوانین کا بغور جائزہ لیں اور جہاں ضرورت ہو، وہاں ترامیم عمل میں لائیں۔

لوگارٹ نے مزید کہا کہ پاکستان میں ڈومیسٹک کرکٹ کو بہتر بنانے کے لئے انہوں نے انسداد بد عنوانی کے قوانین کا ایک خاکہ تیار کیا ہے،جو پاکستانی کرکٹ بورڈ کے لئے کافی فائدہ مند رہے گا۔ انہوں نے مزید کہا کہ یہ خاکہ جلد ہی تمام رکن ممالک کو بھی ارسال کر دیا جائے گا۔ ICC کی کوشش ہے کہ ان نئے قوانین پرآئندہ سال سے عملدرآمد شروع کر دیا جائے۔

رپورٹ: عاطف بلوچ

ادارت: امجد علی

DW.COM