1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

مہاجرین کا بحران

سویڈن میں مہاجرین کے مراکز پر حملے، تین مشتبہ افراد گرفتار

سویڈش پولیس نے سیاسی پناہ کے متلاشیوں کے ایک سینٹر پر حملے کرنے کے شبے میں 3 افراد کو گرفتار کیا ہے۔ دوسری جانب یورپ بھر میں دائیں بازو کے انتہاپسندوں میں اجانب دشمنی اور مہاجرین کے خلاف تشدد اور نفرت کا رویہ بڑھ رہا ہے۔

سویڈن کی سکیورٹی پولیس نے اس کی تصدیق کی ہے کہ ایسے تین مشتبہ افراد کو حراست میں لیا گیا ہے، جن پر شبہ ہے کہ وہ حالیہ ایام میں کیے گئے تین بم حملوں میں ملوث ہو سکتے ہیں۔ ان بم حملوں میں مہاجرین کے مراکز اور بائیں بازو کے ایک بُک اسٹور کو ہدف بنایا گیا تھا۔

بک شاپ پر حملہ گزشتہ برس نومبر میں کیا گیا تھا۔ کتابوں کی یہ دوکان سویڈن کے جنوبی شہر گوتھن برگ میں واقع ہے۔ بک شاپ پر کیے گئے حملے میں کوئی شخص ہلاک یا زخمی نہیں ہوا تھا۔ مہاجرین کے مراکز پر حملے رواں برس پانچ اور پچیس جنوری کو کیے گئے تھے۔ پانچ جنوری کے حملے میں ایک شخص شدید زخمی ہوا تھا جبکہ پچیس جنوری کا نصب کردہ بم پھٹنے سے قبل ناکارہ بنا دیا گیا تھا۔

Schweden Polizei Uppsala (Getty Images/AFP/P. Lundahl)

سویڈن کی سکیورٹی پولیس نے مہاجرین مراکز پر حملے کے شبے میں تین افراد کو حراست میں لیا ہے

سکیورٹی پولیس کے مطابق ایک گرفتار ہونے والا مبینہ حملہ آور تینوں حملوں میں ملوث ہے۔ اس کے بارے میں یہ اندازہ بھی لگایا گیا ہے کہ وہ ان تمام حملوں کا ماسٹر مائنڈ یا بقیہ ملزمان کو ترغیب دینے والا بھی ہو سکتا ہے۔ دوسرے دو گرفتارشدگان پر پچیس جنوری کو نصب کیے گئے بم کی کارروائی میں شریک ہونے کا الزام ہے۔

سویڈش میڈیا کے مطابق تین گرفتار شدگان میں کم از کم ایک مبینہ ملزم کے نیو نازی گروپوں کے ساتھ روابط کا معلوم ہوا ہے۔ سویڈش سکیورٹی پولیس نے تینوں مشتبہ ملزمان کے گرفتار ہونے کی تصدیق تو ضرور کی لیکن ان کے بارے میں مزید تفصیل فراہم نہیں کی ہیں۔

مہاجرین کی آبادکاری میں سویڈن کو یورپی یونین  اور رہنما قدر کی نگاہ  سے دیکھتے ہیں کیونکہ اِس ملک میں ایک لاکھ ساٹھ ہزار غیرملکی مہاجرین کو پناہ دی گئی ہے۔ پناہ دینے کے اِس عمل کے بعد اب سویڈش حکومت نے امیگریشن قوانین کو انتہائی سخت کر دیا ہے۔ اس کے علاوہ بارڈر کنٹرول کے قوانین میں بھی انتہائی شدت پیدا کر دی گئی ہے۔