1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

مہاجرین کا بحران

سویڈن سے اسّی ہزار تارکین وطن کی ملک بدری کا منصوبہ

شمالی یورپی ملک سویڈن اسّی ہزار ایسے غیر ملکیوں کو ملک بدر کرنے کا ارادہ رکھتا ہے، جن کی سیاسی پناہ کی درخواستیں مسترد ہو چکی ہیں۔ گزشتہ برس سویڈن میں ایک لاکھ ساٹھ ہزار مہاجرین نے پناہ کی درخواستیں دی تھیں۔

سویڈن کے وزیر داخلہ آندرس اُوگومان نے ایک مقامی خبر رساں ادارے کے ساتھ گفتگو میں کہا کہ سٹاک ہوم حکومت سیاسی پناہ کی درخواستیں مسترد کیے جانے کے بعد 80 ہزار تارکین وطن کو ملک بدر کرنے کا منصوبہ بنا رہی ہے۔

اُوگومان کا کہنا تھا، ’’ابھی ساٹھ ہزار تارکین وطن کی بات ہو رہی ہے لیکن یہ تعداد اسیّ ہزار تک پہنچ سکتی ہے۔‘‘ انہوں نے یہ بھی کہا کہ ملکی حکومت نے قومی پولیس اور تارکین وطن سے متعلق سویڈش اداروں کو اس ضمن میں تیاریاں مکمل کرنے کے احکامات جاری کر دیے ہیں۔

یورپ میں تارکین وطن کے موجودہ بحران کے دوران صرف گزشتہ برس ہی ایک لاکھ ساٹھ ہزار سے زائد تارکین وطن پناہ کی تلاش میں سویڈن پہنچے تھے۔ رپورٹوں کے مطابق سویڈش حکام ان میں سے 45 فیصد مہاجرین کی سیاسی پناہ کی درخواستیں مسترد کر چکے ہیں۔

وزیر داخلہ نے کہا کہ پناہ گزینوں سے رضاکارانہ طور پر اپنے اپنے وطن واپس جانے کی درخواست کی جائے گی تاہم رضاکارانہ طور پر واپسی سے انکار کرنے والوں کو جبری طور پر ملک بدر کر دیا جائے گا۔

جرمن خبر رساں ادارے ڈی پی اے کی جمعرات 28 جنوری کو ملنے والی رپورٹوں کے مطابق حکام نے اس خدشے کا اظہار بھی کیا ہے کہ پناہ کی درخواستیں مسترد ہو جانے کے بعد زیادہ تر مہاجرین حکام کی نظروں سے غائب ہونے کی کوشش کر سکتے ہیں۔

سٹاک ہوم حکومت پہلے ہی افغانستان اور مراکش کے ساتھ ان ممالک سے تعلق رکھنے والے پناہ گزینوں کی وطن واپسی کے لیے بات چیت کر رہی ہے۔

سویڈن کی مجموعی آبادی 9.8 ملین نفوس پر مشتمل ہے اور 2015ء میں وہاں اتنے زیادہ مہاجرین نے سیاسی پناہ کی درخواستیں دی تھیں کہ ملکی آبادی اور مہاجرین کی تعداد کے اعتبار سے یہ یورپی یونین کی کسی رکن ریاست میں ریکارڈ کی جانے والی سب اونچی شرح تھی۔

Infografik Asylerstanträge in der EU Q2 2015 Englisch

سویڈن میں آبادی کی شرح کے اعتبار سے دیگر یورپی ممالک کے مقابلے میں سب سے پناہ کی درخواستیں دی گئی ہیں

سویڈش وزیر داخلہ کی جانب سے یہ بیان ایک ایسے وقت میں سامنے آیا ہے جب کہ حال ہی میں سویڈن میں پناہ گزینوں کے ایک مرکز میں کام کرنے والی ایک بائیس سالہ خاتون، الیگزینڈرا مظہر کو ایک پندرہ سالہ تارک وطن نے چاقو سے حملہ کر کے قتل کر دیا تھا۔

اس واقعے کے بعد سویڈن میں بہت بڑی تعداد میں نئے تارکین وطن کی آمد کے حوالے سے موجودہ بحث اور بھی شدت اختیار کر گئی تھی۔

DW.COM