1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

سوڈان: دارفور میں مزید ریاستیں قائم کرنے کا فیصلہ

سوڈانی صدر عمر حسن البشیر نے دارفور کو دو مزید ریاستوں میں تقسیم کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ باغیوں نے اس فیصلے کو خرطوم کی جانب سے ’تقسیم کرو اور حکومت کرو‘ کی پالیسی قرار دیا ہے۔

default

سوڈانی صدر عمر حسن البشیر

دارفور کے غیر عرب باغیوں نے سوڈانی صدر عمر حسن البشیر کے اس فیصلے کی مذمت کی ہے۔

منگل کے روز سرکاری عہدیداروں اور سرکاری ذرائع ابلاغ نے اعلان کیا تھا کہ سوڈانی صدر عمر حسن البشیر دارفور کو مزید حصّوں میں تقسیم کرنا چاہتے ہیں تاکہ حکومت کو وہاں کے لوگوں سے قریب تر کیا جا سکے۔

UNMIS im Südsudan

دارفور کے باغیوں نے دارفور کی مزید تقسیم کی مخالفت کی ہے

واضح رہے کہ خانہ جنگی کا شکا دارفور پہلے ہی سے شمالی، جنوبی اور مغربی حصّوں میں تقسیم ہے۔ پیر کے روز سوڈانی صدر نے وسطی اور مشرقی ریاستیں قائم کرنے کے فیصلے کی منظوری دی تھی۔

عمر حسن البشیر کی جماعت نیشنل کانگریس پارٹی کے مطابق فیصلہ لیا جا چکا ہے اور صدارتی حکم نامے پر عمل ہونا باقی ہے۔

دارفور کے غیر عرب قبائل دارفور کی تقسیم کے خلاف ہیں۔ ان کا موقف ہے کہ اس طرح وہ اقلیت میں تبدیل ہو رہے ہیں۔ سن دو ہزار تین میں دارفور میں بغاوت کا آغاز کرتے وقت باغیوں کا سب سے اہم مطالبہ یہی تھا کہ ان کو علاقائی حکومت میں ایک بڑا حصّہ دیا جائے۔

اقوامِ متحدہ کے مطابق دارفور میں جاری خانہ جنگی کے باعث اب تک تین لاکھ کے قریب افراد ہلاک ہو چکے ہیں۔

واضح رہے کہ جنوبی سوڈان کے عوام پہلے ہی شمال سے علیٰحدگی کے حوالے سے کیے گئے ایک ریفرینڈم میں علیٰحدگی کے حق میں ووٹ دے چکے ہیں اور جنوبی سوڈان کا باضابطہ قیام نو جولائی کو عمل میں آ جائے گا۔

رپورٹ: شامل شمس⁄  خبر رساں ادارے

ادارت: امجد علی

DW.COM