1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

’سوٹ کیس یورپ نہیں اگلے جہاں لے گیا‘

سوٹ کیس کے ذریعے مراکش سے غیرقانونی طریقے سے اسپین پہنچنے کی کوشش کرنے والا نوجوان دم گھٹنے سے ہلاک ہو گیا۔

ہسپانوی پولیس نے پیر کے روز بتایا ہے کہ مراکش سے ایک نوجوان نے گاڑی کی ڈگی میں ایک سوٹ کیس میں بند ہو کر اسپین پہنچنے کی کوشش کی، تاہم وہ راستے ہی میں دم گھٹنے سے ہلاک ہو گیا۔

اس نوجوان کے بڑے بھائی پر الزام ہے کہ اس نے اس نوجوان کو غیرقانونی طریقے سے یورپ پہنچنے کی کوشش کی۔ اس نوجوان کو سوٹ کیس میں بند کر کے سوٹ کیس کو گاڑی کے پچھے حصے میں رکھا گیا، جب کہ گاڑی مراکش اور اسپین کے درمیان چلنے والی فیری سروس کے ذریعے یورپ لائی جا رہی تھی۔

Spanien - Illegale Einwanderung

کچھ عرصہ قبل ایک بچہ بھی اسی طرح سے یورپ اسمگل کرنے کی کوشش کی گئی تھی

پولیس کے مطابق 34 سالہ ملزم نے اتوار کو قانونی طریقے سے اپنی گاڑی چھوٹے سے ہسپانوی علاقے میلیلا کے لیے کشتی پر سوار کرائی، تاہم اس گاڑی میں رکھے سوٹ کیس میں اس نے اپنا بھائی چھپا رکھا تھا۔

پولیس کے مطابق کراسنگ کے وقت اس نے محسوس کیا کہ اس کا بھائی سانس نہیں لے رہا ہے اور اس نے کشتی کے اسٹاف کو مطلع کیا۔ حکام کے مطابق کشتی کے عملے اور ہنگامی سروسز کے اہلکاروں نے الماریا کی بندرگاہ پر 27 سال نوجوان کو بچانے کی کوشش کی، تاہم وہ زندگی کی بازی پہلے ہی ہار چکا تھا۔ پولیس نے ہلاک ہونے والے نوجوان کے بڑے بھائی کو ’غیرارادی قتل‘ کے جرم میں حراست میں لے لیا ہے۔

یہ بات اہم ہے کہ مئی میں بھی پولیس نے آئیوری کوسٹ سے مراکش لائے گئے ایک سوٹ کیس میں سے ایک آٹھ سالہ بچے کو نکالا تھا، جب کہ اس سوٹ کیس میں ہوا کے داخلے کا کوئی راستہ بھی نہیں تھا۔ یہ سوٹ کیس بھی مراکش سے اسپین لے جایا جا رہا تھا۔

ایک سکیورٹی اسیکنر کی ایک تصویر میں سوٹ کیس میں پھنسا ہوا بچہ دکھائی دیا تھا اور عوامی سطح پر یہ تصویر سامنے آنے پر یورپ بھر میں یہ بحث شروع ہو گئی تھی کہ دنیا بھر سے غیرقانونی مہاجرین یورپ پہنچنے کے لیے کس حد تک صعوبتوں سے گزرتے ہیں۔

اس بچے کا باپ اسپین کا قانونی رہائشی تھا اور اس کی تنخواہ بہت کم تھی، جس کی وجہ سے وہ اپنے لڑکے کے لیے اسپین میں رہائشی اجازت نامہ حاصل نہیں کر سکتا تھا، اسی لیے اس نے اسے اسمگل کر کے اسپین پہنچانے کی کوشش کی تھی۔ اس لڑکے کو بعد میں اسپین میں اپنے والدین کے ساتھ رہنے کا عارضی اجازت نامہ دے دیا گیا تھا۔