1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

سوويت يونين کے زوال کا سبب، بہتر مغرب سے موازنہ بھی تھا

بعض ماہرين کے مطابق ايٹمی اسلحے کے لحاظ سے تو سوويت يونين يقيناً مضبوط تھا ليکن اقتصادی لحاظ سے وہ کبھی بھی زيادہ آزادی اور بہتر معيشت والے مغرب اور امريکہ کا مقابلہ نہيں کر سکا۔

يو کرائن ميں سوويت يونين سے عليحدگی پر ريفرنڈم۔ دسمبر 1991

يو کرائن ميں سوويت يونين سے عليحدگی پر ريفرنڈم۔ دسمبر 1991

سوويت يونين کے زوال اور بالآخر خاتمے کے 20 سال بعد اس کے محرکات اور اسباب کے مختلف طرح سے جائزے ليے جا رہے ہيں۔ بعض ماہرين کا کہنا ہے کہ ايٹمی اسلحے کے لحاظ سے تو سوويت يونين يقيناً بہت طاقتورتھا ليکن اقتصادی ميدان ميں وہ کبھی بھی زيادہ آزادی اور بہتر معيشت والے امريکہ اور مغرب کا مقابلہ نہيں کرسکا۔ تاہم اُس نے نظرياتی طور پر ہميشہ مغرب سے اپنا موازنہ کيا اور يہ اُس کے گلے کا پھندا بن گيا۔

سن 1991 ميں سوويت يونين تيزی سے زوال کی طرف جا رہا تھا۔ صنعتی پيداوار کم ہوتی جا رہی تھی، بے روزگاری بڑھ رہی تھی اور تيزی سے بڑھتی ہوئی افراط زر کی شرح سے شہريوں کی پس انداز کی ہوئی رقوم کی قدرگھٹتی جا رہی تھی۔

جارجيا کا يوم آزادی

جارجيا کا يوم آزادی

اس کے ساتھ ہی قوميتی تنازعات ابھر رہے تھے۔ جارجيا اور آذربائيجان ميں فائرنگ کے واقعات ہو رہے تھے۔ سن 1990 ہی ميں ليتھوانيا اپنی آزادی کا اعلان کرنے والی پہلی سوويت رياست تھی۔ جنوری سن 1991 ميں ماسکو نے کے جی بی کے ايک خصوصی کمانڈو دستے کو ليتھوانيا کے دا رالحکومت ولنيئس روانہ کيا۔ وہاں ٹيلی وژن اسٹيشن پر دھاوا بولا گيا جس ميں 14 افراد ہلاک ہو گئے تھے۔ ليکن ليتھوانيا کوسوويت يونين ميں واپس لانے ميں کاميابی نہيں ہوئی۔ ميخائيل گورباچوف کی اُن کے ملک پر گرفت مسلسل ڈھيلی پڑ رہی تھی۔

آج وہ يہ کہتے ہيں کہ سوويت يونين کو ’’بچايا جا سکتا تھا اور بچايا جانا چاہيے تھا‘‘۔ اُس وقت وہ ايک دوسری طرح کا سوويت يونين بنانا چاہتے تھے جس ميں شامل جمہورياؤں يا رياستوں کو پہلے سے زيادہ خود مختاری دی جانا تھی۔ ايک ريفرنڈم ميں ’’يکساں حقوق والی رياستوں کی ايک نئی فيڈريشن‘‘ اور سوويت يونين کو برقرار رکھنے کے حق ميں 70 فيصد ووٹ ديے گئے۔ صدر گورباچوف 15 ميں سے صرف نو رياستوں کو اس بارے ميں مذاکرات ميں حصہ لينے پر آمادہ کر سکے۔ وہ ايک نيا رياستی معاہدہ طے کرانے ميں بھی کامياب ہو گئے۔ ليکن اس پر دستخط نہ ہوسکے۔ 20 اگست سن 1991 کی دستخطی تقريب سے ايک دن پہلے وزير دفاع، وزير داخلہ اور خفيہ سروس کے جی بی کے سربراہ پر مشتمل کٹر کميونسٹوں کے ايک گروپ نے بغاوت کردی اور ماسکو کی سڑکوں پر ٹينک نظر آنے لگے۔ گورباچوف نے کہا: ’’يہ محسوس کرنے کے بعد کہ وہ عام سياسی طريقوں سے کچھ حاصل نہيں کر سکتے، اُنہوں نے بغاوت کا فيصلہ کر ليا۔‘‘

ميخائيل گورباچوف، کميونسٹ پارٹی کانگريس، جولائی 1990

ميخائيل گورباچوف، کميونسٹ پارٹی کانگريس، جولائی 1990

ليکن بغاوت ناکام ہوگئی۔ تين دن بعد ہی ہنگامی حالت ختم کر ديی گئی۔ بغاوت کے دوران ہی ايسٹونيا نے سوويت يونين سے آزادی کا اعلان کرديا۔ اس کے بعد يو کرائن اور دوسری رياستوں نے بھی ايسا ہی کيا۔ گورباچوف واپس آ گئے اور انہوں نے رياستی معاہدے کو پھر ميز پر لانے کی ناکام کوشش کی۔ 26 دسمبر سن 1991 کو سوويت يونين کے خاتمے کا سرکاری اعلان کر ديا گيا۔ گورباچوف مستعفی ہو گئے۔ اب حکومت کميونزم کے مخالف نو منتخب صدر بورس ييلسن کے ہاتھ ميں آ گئی۔

رپورٹ: رومان گونچارينکو / شہاب احمد صديقی

ادارت: مقبول ملک

DW.COM