1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

سولہ برس بعد کوہ پیماؤں کی لاشیں برآمد

معروف کوہ پیما ایلکس لووے اور ان کے کیمرہ مین سولہ برس قبل دنیا کے اونچے ترین پہاڑی سلسلے ہمالیہ میں برفانی تودے کی زد میں آ کر ہلاک ہو گئے تھے۔ اب ان دونوں کی لاشیں ہمالیہ کے ایک گلیشیر سے ملی ہیں۔

ایلیکس لووے کی یاد میں قائم ایک تنظیم کے مطابق ان افراد کی باقیات دو کوہ پیماؤں ڈیوڈ گوئٹلر اور اولی سٹیک کو گزشتہ ہفتے دکھائی دیں۔ اکتوبر انیس سو ننانوے میں چالیس سالہ لووے اور ان کے ساتھی کیمرہ مین انتیس سالہ ڈیوڈ برجز چین کی آٹھ ہزار ستائیس میٹر بلند شیشہ پنگمہ چوٹی پر ایک برفانی تودے کی زد میں آ کر ہلاک ہوئے تھے۔ ان دونوں کا تعلق امریکا سے تھا اور یہ حادثہ نشیبی برف پر اسکیئنک کے دوران پیش آیا تھا۔

ایک اور کوہ پیما کونراڈ اینکر اس حادثے میں بچ گئے تھے۔ انہوں نے بعد میں لووے کی بیوہ سے شادی کی تھی اور ان کے تین بیٹوں کو بھی گود لیتے ہوئے پرورش کی تھی۔

انہوں نے لووے کی لاش ملنے پر کہا،’’ ان لاشوں کا ملنا اس خاندان کے لیے سکون کا باعث ہے۔‘‘ کونراڈ لاشوں کو واپس امریکا لانے کے لیے تبتی چوٹی کا سفر کریں گے، جو دنیا کے ان چودہ پہاڑیوں میں شامل ہے، جن کی بلندی آ ٹھ ہزار میٹر سے زیادہ ہے۔

لووے کی بیوہ جینیفر لووے اینکر نے جمعے کے روز جاری ہونے والے ایک بیان میں کہا ہے کہ ایلکس کے والدین لاش کے ملنے پر شکر گزار ہیں۔ جینیفر بھی اپنے بیٹوں کے ساتھ شیشہ پنگمہ جائیں گی۔ یہ جوڑا کوہ پیمائی کے ایک مرکز کی نئی عمارت کی تعمیر کا جائزہ لینے کے لیے نیپال میں تھا جب انہیں یہ خبر موصول ہوئی۔ کھمبو کوہ پیمائی مرکز مقامی کوہ پیماؤں کو تربیت فراہم کرے گا۔ یہ مرکز دو ہزار تین میں لووے کی یاد میں قائم کیا گیا تھا۔ لووے نے دو بار ایورسٹ کو سر کیا تھا اور ان کے نیپال کی حکومت سے گہرے روابط تھے۔

موت سے قبل لو وے کو دنیا کے بہترین کوہ پیماؤں میں شامل کیا گیا تھا اور ارجنٹائن میں موجود براعظم امریکا کی سب سے اونچی چوٹی آکونکاگوا کو انتہائی تیز رفتاری کے ساتھ سر کرنے کے بعد انہیں ایک ایسا کوہ پیما قرار دیا گیا، جس کے ’’پھیپھڑوں میں پیر‘‘ لگے ہوئے ہوں۔

کوہ پیما ڈیوڈ گوئٹلر اور اولی سٹیک نے یہ لاشیں اس وقت دریافت کیں جب وہ شمال کی جانب سے شیشہ پنگمہ پر چڑھ رہے تھے۔ یہ پہاڑانیس سو اٹہتر تک مغربی کوہ پیماؤں کے لیے بند تھا۔ اسے سر کرنا آٹھ ہزار میٹر سے زائد بلند دیگر چوٹیوں کے مقابلے میں قدرے آسان سمجھا جاتا ہے۔ کوہ پیمائی کی مہم کے اکثر منتظمین کوہ پیماؤں کو صلاح دیتے ہیں کہ اونچے پہاڑوں کو سر کرنے سے پہلے اپنی تربیت کے ایک حصے کے طور پرشیشہ پنگمہ کو سر کریں۔