1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

کھیل

سوشل نیٹ ورکنگ ویب سائٹس کا استعمال، پاکستانی کھلاڑیوں پر پابندی

پاکستان کرکٹ بورڈ نے سکینڈلز کی روک تھام کے لئے کھلاڑیوں پر فیس بُک اور ٹوئٹر کے استعمال پر پابندی عائد کر دی گئی ہے۔

default

پاکستانی کرکٹ ٹیم کے منیجر انتخاب عالم نے بدھ کو ذرائع ابلاغ سے بات کرتے ہوئے بتایا کہ یہ فیصلہ گزشتہ ماہ دبئی میں سابق وکٹ کیپر ذوالقرنین حیدر کے دبئی سے لندن جانے کی خبر فیس بُک پر آنے کے ردعمل میں کیا گیا ہے۔

ذوالقرنین نے فیس بک پر انٹرنیشنل کرکٹ سے ریٹائرمنٹ کا اعلان کیا تھا اور کہا تھا کہ انہیں نامعلوم افراد کی جانب سے جان سے مارنے کی دھمکیاں موصول ہو رہی ہیں۔ انہوں نے فیس بک پر یہ بھی کہا تھا کہ وہ برطانیہ میں سیاسی پناہ حاصل کرنا چاہتے ہیں۔ انہوں نے دھمکی دی تھی کہ وہ مبینہ طور پر میچ فکسنگ میں ملوث تمام پاکستانی کھلاڑیوں کے نام فیس بک پر شائع کر دیں گے۔

منیجر انتخاب عالم نے خبر رساں ادارے اے ایف پی کو بتایا کہ تمام کھلاڑیوں کو سوشل نیٹ ورکنگ ویب سائٹس استعمال نہ کرنے کی ہدایات جاری کر دی گئی ہیں۔ انہوں نے کہا، ’کسی کھلاڑی کو بھی فیس بک اور ٹوئٹر پر کرکٹ کے بارے میں بات کرنے کی اجازت نہیں ہے۔ کھلاڑیوں کے ساتھ کئے گئے سینٹرل معاہدے کی ایک شق کے تحت وہ اس پر عمل کرنے کے پابند ہیں۔’

Pakistan Cricket Intikhab Alam

کھلاڑی کو بھی فیس بک اور ٹوئٹر پر کرکٹ کے بارے میں بات کرنے کی اجازت نہیں

انتخاب عالم نے کہا کہ کسی بھی کھلاڑی کا فیس بُک یا ٹوئٹر پراکاؤنٹ نہیں ہے۔ ان کے نام پر بنائے گئے تمام اکاؤنٹ جعلی ہیں۔ انتخاب عالم نے کہا کہ جو لوگ کھلاڑیوں کے ناموں پر جعلی اکاؤنٹ بناتے ہیں، ان کے خلاف قانونی کارروائی کی جا سکتی ہے۔

پاکستانی ٹیم کے ایک کھلاڑی نے نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر اے ایف پی کو بتایا ہے کہ یہ ایک انتہائی سخت پابندی ہے۔ وہ بیرون ملک دوروں کے موقع پر ایسی ویب سائٹس کے ذریعے اپنے خاندان سے رابطے میں رہتے ہیں۔

سینئر بلے باز یونس خان، سابق کپتان شعیب ملک، عمر اکمل، اسد شفیق، کامران اکمل اور شعیب اختر نے بھی فیس بک پر پروفائل بنا رکھے ہیں۔ لیکن ان میں سے کوئی بھی اپنے اکاؤنٹ کو باقاعدگی سے استعمال نہیں کرتا۔

رپورٹ: امتیازاحمد

ادارت: ندیم گِل

DW.COM