1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

سوات میں نظام عدل، آئینی یا غیر آئینی؟

پاکستان کی وادیء سوات میں نظام عدل کے ضابطے یا شریعت کے نفاذ کے حوالے سے عالمی سطح پر زبردست خدشات ظاہر کئے جارہے ہیں اور مقامی سطح پر بعض قانونی ماہرین سوُات ڈیل کو پاکستانی آئین سے متصادم قرار دے رہے ہیں۔

default

صوبائی حکومت نے تمام تر ملکی و عالمی مخالفت کے باوجود سوات میں امن کے لئے یہ معاہدہ کیا تھا

پاکستان کی وادیء سوات میں نظام عدل کے ضابطے یا شریعت کے نفاذ کے حوالے سے عالمی سطح پر زبردست خدشات ظاہر کئے جارہے ہیں اور مقامی سطح پر بعض قانونی ماہرین سوُات ’’ڈیل‘‘ کو پاکستانی آئین سے متصادم قرار دے رہے ہیں۔

ان قانونی ماہرین میں پاکستان کے سابق اٹارنی جنرل ملک عبد القیوم بھی شامل ہیں۔ ملک قیوم کے مطابق اگر سُوات کی شرعی عدالتوں کے فیصلوں کو پاکستان کی ہائی کورٹس اور سپریم کورٹ میں چیلنج نہیں کیا جاسکتا ہے تو ''یقیناً یہ بات آئین سے متصادم ہے۔‘‘

بین الاقوامی امور کے بعض ماہرین کی رائے میں سُوات امن معاہدے سے متعلق عالمی خدشات حق بجانب ہیں۔ نوشین وصی کراچی یونیورسٹی کے شعبہ بین الاقوامی امور میں لیکچرر ہیں۔ ڈوئچے ویلے اردوسے بات کرتے ہوئے نوشین وضی نے عالمی خدشات کو بہت حد تک صحیح قرار دیا۔

''اگر ایسے خدشات ظاہر کئے جارہے ہیں کہ سُوات امن معاہدہ پاکستان میں شدت پسند عناصر کو مضبوط کرے گا اور یہ پاکستان کی حکومت کی کمزوری ظاہر کرتا ہے تو بہت حد تک یہ باتیں ٹھیک ہیں۔‘‘

Chaos und Gewalt in Pakistan Besetzte Polizeistation nahe der afghanischen Grenze Musharraf verhängt Ausnahmezustand in Pakistan

طالبان نے سوات کے نواحی علاقے بونیر میں اپنی کارروائیوں میں اضافہ کر دیا ہے

تاہم بعض حلقے ایسے بھی ہیں جو سُوات امن معاہدے کی یہ کہہ کر حمایت کررہے ہیں کہ اس سے بحران زدہ وادی میں امن کا قیام ممکن ہے۔

جوخوبصورت وادی کبھی سیاحوں کی توجہ کا مرکز تھی، آجکل انٹرنیشنل میڈیا کا فوکس ہے:

رواں سال فروری میں پاکستان کی وادیء سُوات میں صوبائی حکومت اور تحریک نفاذ شریعت محمدی نامی تنظیم کے مابین شرعی نظام عدل کے بدلے ایک امن معاہدہ طے پایا، جس پر اب پاکستانی صدر آصف علی زرداری کے دستخط بھی ہوگئے ہیں۔

کیا اس معاہدے کی کامیابی کے حوالے سے توقعات وابستہ کی جاسکتی ہیں؟ پاکستان کے اقتصادی مرکز کراچی میں مقیم معروف تجزیہ نگار اکرام سہگل کی اس معاہدے سے زیادہ توقعات وابستہ نہیں ہیں تاہم ان کی رائے میں امن کے قیام کو ایک اور موقعہ دیا جانا چاہیے۔ ڈوئچے ویلے اردو سے بات چیت کرتے ہوئے اکرام سہگل نے کہا: ’’مولانا فضل اللہ کو پہلے بھی ہم نے آزمالیا ہے اور اس آزمائش میں وہ صحیح ثابت نہیں ہوئے۔ وہ اس ’ٹائم‘ کو استعمال کرتے ہیں دوبارہ منظّم ہونے کے لئے لیکن مولانا صوفی محمد کی جو ساکھ ہے، وہ کچھ اور ہے۔ دیکھنا یہ ہے کہ سُوات امن معاہدہ کہاں تک جاتا ہے، بہرحال اس سے میری کچھ زیادہ توقعات وابستہ نہیں ہیں۔‘‘

عالمی خدشات:

امریکہ، یورپ اور پاکستان کے ہمسایہ ملکوں، افغانستان اور بھارت، کی طرف سے سُوات امن معاہدے پر زبردست تنقید کی جارہی ہے جبکہ مقامی سطح پر بعض حلقے اس ''پیس ڈیل‘‘ کی حمایت کررہے ہیں۔

امریکی صدر باراک اوباما کی انتظامیہ نے پاکستان کے شمال مغربی صوبے کے بعض علاقوں میں شریعت کے نفاذ کو جمہوریت کے اصولوں کے منافی اور انسانی حقوق کی سنگین ترین خلاف ورزی قرار دیا ہے۔ وائٹ ہاوٴس کے ترجمان رابرٹ گبس کے مطابق نفاذ شریعت کا معاہدہ صرف طالبان عسکریت پسندوں کے حق میں ہے۔

امریکی سینیٹر جان کیری نے اپنے حالیہ دورہء پاکستان میں پاکستانی حکومت سے کہا کہ اسے بین الاقوامی خدشات کو دور کرنے کے لئے شدت پسندوں کے خلاف مزید سخت کارروائیاں کرنا ہوں گی۔

سُوات میں شریعت کے نفاذ پر پاکستان کے پڑوسی ملک افغانستان نے بھی سلامتی سے متعلق خدشات ظاہر کئے ہیں۔ سوات میں شرعی نظام عدل کے ضابطے پر اپنا ردّعمل ظاہر کرتے ہوئے افغان حکومت نے کہا کہ اس معاہدے سے اب سرحد کے آرپار ’’طالبان عسکریت پسندوں کے حوصلے بلند ہوسکتے ہیں۔‘‘

افغان صدر حامد کرزئی کے ترجمان ہمایوں حمیدزادہ نے کہا کہ پاکستان کو اپنی اور اپنے پڑوسی ملک کی سلامتی کے مسائل کو مدنظر رکھنا ہوگا کیوں کہ شدت پسندوں کے ساتھ معاہدوں سے دونوں ملکوں کی سیکیورٹی کے ساتھ ساتھ باہمی تعلقات پر بھی منفی اثرات مرتب ہوسکتے ہیں۔

Miglieder der Tehreek-e-Taliban im Swat Bezirk Pakistans

معاہدے کے بعد طالبان کی کارروائیوں میں خاطر خواہ کمی نہیں دیکھی گئی

کیا پاکستان کی صوبائی اور وفاقی حکومتوں کو بین الاقوامی خدشات کا اندازہ نہیں تھا؟ آخرصوبہ سرحد کی حکومت سُوات میں امن معاہدہ کرنے پر کیوں راضی ہوئی؟

پشاور میں مقیم صحافی سید عرفان اشرف اس سوال کا جواب کچھ یوں دیتے ہیں۔

’’اس حوالے سے شمال مغربی سرحدی صوبے کی حکومت سوچتی ہے کہ یہ معاہدہ زیادہ موثر ثابت ہوگا کیوں کہ اس میں صوفی محمد کو براہ راست شامل کیا گیا ہے۔ بنیادی طور پر دیکھا جائے تو مقامی طالبان عسکریت پسندوں کا اور صوفی محمد کا ایک ہی نعرہ ہے، اور وہ ہے سُوات میں شریعت کا نفاذ لیکن تحریک نفاذ شریعت محمدی پرامن طریقے سے شریعت کا نظام چاہتی ہے۔‘‘

نامور تجزیہ نگار اکرام سہگل کہتے ہیں کہ لوگ اکثر اس بات کو بھول جاتے ہیں کہ سُوات میں 1970ء تک شرعی عدالتیں قائم تھیں اور باضابطہ طور پرکام بھی کرتی تھیں۔ اکرام سہگل مزید کہتے ہیں کہ صوفی محمد جیسی ''اعتدال پسند شحضیت کے ساتھ مذاکرات کرنے میں کوئی حرج نہیں ہے۔‘‘

بہرحال وقت کے ساتھ ہی یہ معلوم ہوسکے گا کہ سُوات ''پیس ڈیل‘‘ ایک غلطی تھی یا پھر قیام امن کے حوالے سے ایک ''کامیاب کوشش‘‘!

DW.COM

Audios and videos on the topic