1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

سوات مہاجرین کی واپسی، اقوام متحدہ کی جانب سے محتاط خیر مقدم

اقوام متحدہ اور دیگر امدادی اداروں نے متاثرین مالاکنڈ کی واپسی کے اعلان کا محتاط خیر مقدم کرتے ہوئے حکومت پر زور دیا ہے کہ متاثرین کو ان کے علاقوں میں بنیادی سہولیات کی فراہمی یقینی بنائی جائے۔

default

سوات مہاجرین ایک کنٹینر کے نیچے

پاکستان کے دورے پر آئے اقوام متحدہ کے ہنگامی امداد سے متعلق رابطہ کار سر جان ہومز نے جمعہ کے روز صدر آصف زرداری اور دیگر حکومتی عہدیداروں کے ساتھ ملاقاتیں کیں، جن میں متاثرین کی واپسی اور بحالی سے متعلق امور پر تبادلہ خیال کیا گیا۔ بعد ازاں اسلام آباد میں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے سر جان ہومز نے کہا کہ متاثرین کی واپسی سے قبل ان کے لئے محفوظ ماحول اور سہولیات کی فراہمی حکومت کی بنیادی ذمہ داری ہے۔

سر ہومز نے اس امر پر بھی زور دیا کہ نقل مکانی کرنے والے افراد کی واپسی کا عمل رضاکارانہ ہونا چاہئے۔

’’ہمارے خیال میں متاثرین کی واپسی رضا کارانہ طور پر ہونی چاہئے اور ان کی واپسی سے قبل وہاں پر امن و امان کی صورتحال اور قانون کی بالا دستی یقینی ہونی چاہئے اس کے ساتھ ساتھ وہاں پر پانی، بجلی ایسی دیگر بنیادی ضروریات زندگی کی فراہمی بھی حکومت یقینی بنائے۔‘‘

BdT Pakistan Flüchtlingskind aus dem Swat Tal

مہاجرین کیمپ کے باہر بیٹھی ایک بچی

بے گھر افراد کی دیکھ بھال اور بحالی کےلئے اقوام متحدہ کی اپیل کے باوجود ناکافی مالی وسائل کے حوالے سے ایک سوال کے حوالے سے سر جان ہومز نے بتایا کہ امداد نہ ملنے کی کوئی ایک وجہ نہیں ہو سکتی، البتہ انہیں یقین ہے کہ مزید مالی وسائل جلد ہی میسر ہوں گے۔ سر جان ہومز نے کہا کہ مون سون کی بارشوں کو مد نظررکھتے ہوئے بھی ایسے اقدامات کئے جا رہے ہیں، جن سے کیمپوں میں رہنے والے بے گھر افراد کو مشکلات پیش نہ آئیں۔

خیال رہے کہ وزیراعظم یوسف رضا گیلانی نے جمعرات کے روز مالاکنڈ کے متاثرین کی 13 جولائی سے واپسی کا اعلان کیا تھا، جس کے بعد یہ سوال اٹھنا شروع ہو گئے ہیں کہ آیا حکومت ان افراد کو عسکریت پسندوں سے مؤثر تحفظ کے ساتھ ساتھ بجلی، پانی جیسی بنیادی سہولیات مہیا کر پائے گی یا نہیں۔ کیونکہ کئی ماہ کی زبردست لڑائی کے سبب ان علاقوں میں بنیادی انفراسٹرکچر خاصا متاثر ہوا ہے اور خاص طور پر بونیر اور دیر واپس پہنچنے والے کئی گھرانوں نے اپنے اپنے علاقوں میں بنیادی سہولیات کی ناگفتہ بہ صورتحال اور اشیائے خوراک کی قلت کی شکایت کی ہے۔

رپورٹ : امتیاز گل، اسلام آباد

ادارت : عاطف توقیر