1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

سوات مہاجرین کو غذائی قلت کا سامنا

اقوام متحدہ نے عالمی برادری پر ایک بار پھر زور دیا ہے کہ وہ پاکستان کے شورش زدہ شمالی علاقوں سے نقل مکانی کرنے والے پناہ گزینوں کی امداد کے لئے زیادہ سے زیادہ امدادی رقوم فراہم کرے۔

default

خوارک کی کمیابی، سب سے اہم مسئلہ

اقوام متحدہ کے ہنگامی امداد کے امور کے رابطہ کار جان ہولمس کے مطابق پاکستان کو اس ہنگامی صورتحال سے نمٹنے کے لئے فوری طور سے کم سے کم 543 ملین ڈالرز کی ضرورت ہے جبکہ اب تک عالمی برادری کی طرف سے محض 118 ملین ڈالر کی امداد کا یقین دلایا گیا ہے۔

Pakistan Flash-Galerie

مہاجرین کی اتنی بڑی تعداد تک امدادی سامان اور اشیائے خوراک کی ترسیل بہت بڑا چیلنج ہے

اقوام متحدہ کے نمائندوں کے مطابق گزشتہ چند ہفتوں کے اندر وادی سوات سے نقل مکانی مزنے والوں کی تعداد تقریباً ڈھائی ملین ہے اور جن کی صورتحال تشویشناک شکل اختیار کرتی جا رہی ہے۔ UNICEF ،پاکستانی دفتر خارجہ اور برطانوی امدادی تنظیم Merlin کے تعاون سے ہنگامی امداد پہنچانے والے معروف جرمن ادارے یوہانیٹر نے پشاور اور چارسدہ کے کیمپوں میں مقیم 80 ہزار سے زائد افراد کو غذا فراہم کرنے کے لئے ایک پروگرام شروع کیا ہے۔ بے گھر ہو نے والے ان افراد کو غذا کی قلت اور گرمی کی شدت کے باعث گو نا گوں بیماریوں کے خطرات لاحق ہیں۔

Pakistan Flash-Galerie

خوراک کے حصول کے لئے کوشاں مہاجر بچے

جرمن ادارے یوہانیٹر کے اسلام آباد دفتر کے ڈائریکٹر نصیر احمد کاکڑ نے ڈوئچے ویلے کو ایک خصوصی انٹرویو دیتے ہوئے بتایا کہ انکا ادارہ اگلے چند ہفتوں کے اندر شمالی پاکستان سے بے دخل ہونے والے تقریباً 80 ہزار افراد جن میں ایک بڑی تعداد خواتین اور بچوں کی ہے، کو اضافی غذا اور پینے کے صاف پانی فراہم کرنے سے متعلق دو پروجیکٹس شروع کر رہا ہے۔ یہ پشاور اور چار سدہ کے پناہ گزینوں کے لئے ہے۔

ہنگامی امداد کے جرمن ادارے یوہانیٹر کے اسلام آباد دفتر کے ڈائریکٹر نصیر احمد کاکڑ کے مطابق بجلی کے بحران اور شدید گرمی کے سبب سوات اور دیگر شمالی علاقوں سے آئے ہوئے پناہ گزینوں کو شدید مشکلات کا سامنا ہے۔ انھوں نے کہا کہ حکومت پاکستان ممکنہ امدادی کاروائیاں کر رہی ہے تاہم غذا اور دیگر ضروری اشیاء کی قلت کے سبب وہ تمام متاثرین کو امداد نہیں پہنچا سکتی۔ کاکڑ نے بتایا کہ غذائی قلت کے شکار افراد کو اضافی غذا کے علاوہ ادویات، حفظان صحت سے متعلق ضروری معلومات اور مانع حمل کی ادویات اور اشیاء کی بھی ضرورت ہے جس کے لئے یوہانیٹر کی طبی موبائل ٹیم آئندہ ہفتوں اور مہینوں میں پناہ گزینوں کو کمک پہنچائے گی۔

Audios and videos on the topic