1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

سوات آپریشن اور نئی حکومتی حکمت عملی

سوات میں گزشتہ ایک سال سے جاری فوجی آپریشن کے باوجود شدت پسندوں کی بڑھتی ہوئی کارروائیوں نے حکومتی عملداری اور فوج کی پیشہ وارانہ صلاحیتوں کے حوالے سے متعدد سوالات کو جنم دیا ہے ۔

default

سوات میں دہشت پسندوں کی کارروائیوں میں روزبروز اضافے اور حکومتی آپریشن کے باعث لوگوں کی بڑی تعداد نقل مکانی پر مجبور ہو گئی ہے

غالباً اسی سبب اب سول اور عسکری قیادت کا دعویٰ ہے کہ انہوں نے سوات کے حوالے سے حکمت عملی تبدیل کرلی ہے اور بقول ان کے جلد ہی اس کے مثبت نتائج سامنے آنا شروع ہو جائیں گے۔ سوات کے بارے میں نئی حکمت عملی کے حوالے سے عسکری ذرائع کا یہ بھی کہنا ہے کہ حکومتی عملداری کو کسی بھی صورت قبول نہ کرنے والے شدت پسندوں کی سرکوبی کے ساتھ ساتھ نسبتاً کم سخت گیر عناصر کے ساتھ صوبائی حکومت کے ذریعے بات چیت کی جائے گی تا کہ وہ ہتھیار پھینک کر قومی دھارے میں شامل ہو سکیں تاہم دوسری طرف ایسی اطلاعات بھی ہیں کہ سوات میں گزشتہ پانچ روز سے فوجی آپریشن میں شدت کے سبب عسکریت پسندوں کے ساتھ ساتھ بی تعداد میں عام شہری بھی مارے جا رہے ہیں۔

Pakistanischer Armeechef Ashfaq Kayani

پاکستانی فوجی سربراہ جنرل اشفاق پرویز کیانی

مسلح افواج کے ترجمان میجر جنرل اطہر عباس نے ڈوئچے ویلے کو ایک غیر رسمی انٹرویو میں بتایا ہے کہ فوج نے نئی حکمت عملی کے تحت عسکریت پسندوں کا تعاقب شروع کیا ہوا ہے اور اطلاع ملتے ہی نہ صرف مشتبہ افراد اور ٹھکانوں کو نشانہ بنایا جا رہا ہے بلکہ علاقہ میں پہنچ کر اس کا کنٹرول سنبھالنے کی بھی کوشش کی جا رہی ہے تاکہ عسکریت پسندوں کو علاقہ میں دوبارہ صف بندی اور دہشت گردی کا موقع نہ مل سکے۔ جنرل اطہر عباس کا کہنا تھا کہ سوات کی مشکل اور پیچیدہ صورتحال کے باعث یہ کہنا مشکل ہو گا کہ حالات پر مکمل کنٹرول کب حاصل ہو گا ۔ تاہم وزیر اعظم یوسف رضا گیلانی کا کہنا ہے کہ وہ اس صورتحال سے بخوبی آگاہ ہیں اور عام لوگوں کی تکالیف کا ازالہ کرنے کے لئے نہ صرف ضروری اقدامات کئے جا رہے ہیں بلکہ وہ خود بھی آئندہ چند دنوں میں سوات کا دورہ کریں گے۔

Yousaf Raza Gilani Pakistan Wahlen

پاکستانی وزیر اعظم یوسف رضا گیلانی

’’انشاء اللہ ہم اب جو اقدامات اٹھانے والے ہیں ان میں ہمیں لوگوں کی جان و مال کا بھی احساس ہے ان اقدامات کے باعث جو لوگ وہاں سے نقل مکانی کریں گے اس کا بھی احساس ہے لیکن ہمیں یہ بھی یقین کرنا ہے کہ حالات پرامن ہو جائیں تا کہ لوگوں کو جو تکالیف درپیش ہیں ان کو فوری حل کیا جا سکے‘‘۔

تجزیہ نگاروں کے خیال میں سوات کو شدت پسندوں سے پاک کرنے کے لئے فوجی اور سول قیادت کو باہمی تعاون کے ذریعے جامع حکمت عملی تیار کرنا ہو گی تا کہ فوج جن علاقوں کا کنٹرول سنبھالے وہاں پر ایک موثر سیاسی عمل کے ذریعے لوگوں کو یہ پیغام بھی دیا جائے کہ وہ تنہا نہیں ہیں۔