1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

’سن 2018 تک بجلی کی لوڈ شیڈنگ ختم کر دی جائے گی‘

پاکستان کے وزیر اعظم نواز شریف نے میانوالی کے قریب ’چشمہ تھری ‘ جوہری پاور پلانٹ کا افتتاح کر دیا ہے۔ نواز شریف کا کہنا ہے کہ ملک میں لوڈ شیڈنگ کا خاتمہ ان کی اوّلین ترجیحات میں شامل ہے۔

پاکستان کے سرکاری ریڈیو اسٹیشن کے مطابق اس موقع پر پاکستان کے وزیر اعظم نے منعقدہ ایک تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ اس جوہری پاور پلانٹ کے ذریعے قومی گرڈ میں چھ سو میگا واٹ بجلی کا اضافہ ہو گا جو کہ پاکستان اٹامک انرجی کمیشن کے آٹھ ہزار میگا واٹ بجلی پیدا کرنے کے ہدف کو حاصل کرنے میں مدد فراہم کرے گا۔  یہ جوہری بجلی گھر پاکستان اٹامک انرجی کمیشن اور ’چائنہ نیشنل نیوکلیئر کارپوریشن‘ کے اشتراک سے تیار کیا گیا ہے۔

وزیر اعظم نے اس موقع پر کہا کہ یہ منصوبہ پاکستان اور چین کے درمیان سائنس اور ٹیکنالوجی کے میدان میں بڑھتے ہوئے تعاون کا عکاس ہے۔ پاکستان مسلم لیگ ن کے  ٹوئٹر اکاؤنٹ سے اس جوہری پاور پلانٹ کی ویڈیو اور تصاویر شائع کی گئی ہیں۔ اس اکاؤنٹ پر جاری تفصیلات کے مطابق وزیراعظم نے کہا،’’چین کےتعاون سے سڑکیں اور ریلوے لنکس تعمیرکیےجارہے ہیں۔ میں چینی کمپنیوں کو پاکستان میں نیوکلیئر پاور پلانٹس لگانے کی دعوت دیتا ہوں۔‘‘

ریڈیو پاکستان کے مطابق اس موقع پر نواز شریف نے کہا کہ گزشتہ تین برسوں میں پاکستان میں لوڈ شیڈنگ میں واضح کمی آئی ہے اور سن 2018 تک لوڈ شیڈنگ کا مسئلہ ختم ہو جائے گا۔  وزیراعظم نے یہ بھی کہا کہ ’چشمہ فور‘ جوہری بجلی گھر 2017 میں مکمل ہو جائے گا۔

 وزیر اعظم کے بقول پاک چین اقتصادی راہ داری کی وجہ سے کئی منصوبوں کا آغاز کر دیا گیا ہے۔ ان منصوبوں کی مدد سے پاکستان میں بے روزگاری، غربت اور پسماندگی کا خاتمہ ممکن ہوگا۔

DW.COM