1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

سلمان تاثیر کے لئے یادگاری ویب سائٹ

پاکستان کے سب سے بڑے صوبے پنجاب کے مقتول گورنر سلمان تاثیر کی یاد میں ایک خصوصی ویب سایئٹ جاری کی گئی ہے۔ مرنے کے بعد کلکس دس گنا زیادہ ہو گئے ہیں۔

default

سلمان تاثیر اپنی بیٹی شہر بانو کے ساتھ

سلمان تاثیر کو پاکستان کا سایئبر سیاست دان بھی کہا جاتا رہا ہے، وہ انٹرنیٹ کے استعمال کے بہت شوقین تھے، فیس بک، ٹویٹر، یو ٹیوب اور فلکر سمیت بہت سی ویب سائیٹس پر انھوں نے اپنے اکاونٹس بنا رکھے تھے اور وہ اپنے مداحوں سے بذریعہ انٹرنیٹ روز مخاطب ہو کر اپنے خیالات کا اظہار کرتے تھے۔

سلمان تاثیر کے لئے ملٹی میڈیا کی خدمات سر انجام دینے والی میڈیا کنسلٹنٹ صوبیہ سلیم نے ڈوئچے ویلے کو بتایا کہ سلمان تاثیر کی وفات کے بعد ان کی ویب سایئٹ پر آنے والی ٹریفک میں دس گنا اضافہ ہو گیا ہے، ان کے مطابق دنیا بھر سے ان کے مداحوں کی طرف سے ان کے لیئے بڑی تعداد میں پیغامات موصول ہو رہے ہیں۔

Salman Taseer Beerdigung

پانچ جنوری کو سلمان تاثیر کو سپرد خاک کیا گیا

ان کے مطابق سلمان تاثیر کے لیئے دنیا بھر سے آنے والے انٹرنیٹ پیغامات کو دیکھ کر یہ اندازہ ہوتا ہے کہ لوگوں کو اب یہ بات سمجھ آنے لگی ہے کہ سلمان تاثیر مذہب کے خلاف نہیں تھے وہ شان رسالت کے حوالے سے بھی نامناسب خیالات نہیں رکھتے تھے وہ صرف اقلیتوں کے حقوق کے حامی تھے اور قوانین کے غلط استعمال کے خلاف تھے۔

سلمان تاثیر کی بیٹی شہر بانو نے ڈوئچے ویلے کو بتایا کہ سلمان تاثیر کے لئے یادگاری ویب سائیٹ جاری کرنے کا مقصد ان کے مشن اور پیغام کو زندہ رکھنا ہے۔ انھوں نے کہا کہ دنیا بھر سے آنے والے سلمان تاثیر کے حامیوں کے ہمدردی کے پیغامات نے ان کے خاندان کو حوصلہ دیا ہے۔

شہر بانو نے کہا کہ سلمان تاثیر نے اپنے طور پر بہت سے خیراتی منصوبے شروع کر رکھے تھے وہ بہت سے طالب علموں کو تعلیمی وظائف دے رہے تھے، کئی اسکولوں کی مالی مدد کر رہے تھے، عام طور پر وہ ایسے کام منظر عام پر لانے سے گریز کرتے تھے، شہر بانو نے بتایا کہ سلمان تاثیر کی فیملی نے ان کے تمام خیراتی منصوبوں کو جاری رکھنے کا فیصلہ کیا ہے ۔

Gouverneur Salman Taseer Attentat

سلمان تاثیر ایک انسان دوست شخص تھے:شہر بانو

شہر بانو نے بتایا کہ ان کے بہت سے فلاحی کاموں کا ان کی فیملی کو بھی ان کی تعزیت کے لئے آنے والے پیغامات کے ذریعے پتہ چلا ہے۔

شہر بانو نے کہا کہ انہیں افسوس ہے کہ ان کے والد کو غلط سمجھا گیا۔ ان کے مطابق یہ ویب سائیٹ ایسی غلط فہمیوں کو بھی دور کرے گی۔ اور دنیا جلد جان لے گی کہ ملک ایک سچے پاکستانی اور ایک انسان دوست شخص سے محروم ہو گیا ہے۔

رپورٹ:تنویر شہزاد،لاہور

ادارت: کشور مصطفیٰ

DW.COM

ویب لنکس