1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

سلفی اسلام ہالینڈ میں مقبول ہو رہا ہے: خفیہ رپورٹ

ایک نئی خفیہ رپورٹ کے مطابق ہالینڈ میں کٹر عقیدے کے سلفی اسلام کا اثر نوجوان مسلمانوں اور نو مسلم ڈچ لوگوں میں سرایت کر تا جا رہا ہے۔ رپورٹ کے مطابق سلفی اسلام کے فروغ سے ہالینڈ کو بظاہر کوئی خطرہ لاحق نہیں ہے۔

یورپی ملکی ہالینڈ کی خفیہ ایجنسی ’جنرل انٹیلیجنسس اور سکیورٹی سروس‘ یعنی AIVD نے اپنی ایک تازہ رپورٹ میں واضح کیا ہے کہ ہالینڈ میں مذہب اسلام کا بنیاد پرست سلفی عقیدہ فروغ پا رہا ہے۔ ایجنسی کے مطابق اِس تحریک میں پرتشدد جہادی فلسفے کو فروغ دیا جاتا ہے اور یہ عقیدہ جہاد کے سلفی نظریات سے متاثرہ مسلمانوں میں پرتشدد سوچ پیدا کرتا ہے۔ رپورٹ میں یہ بھی واضح کیا گیا ہے کہ بظاہر ابھی تک سلفیت کے فروغ اور افزائش سے ولندیزی ریاست کو کوئی خطرہ لاحق نہیں۔

رپورٹ میں بیان کیا گیا ہے کہ سلفی عقیدے کے لوگ ابتدائے اسلام کے نظامِ خلافت کو صحیح اور درست اور اپنے عقیدے کا حصہ تصور کرتے ہیں اور اِس باعث وہ جمہوریت کو رد کرتے ہیں۔ سلفی اسلام میں مغربی جمہوری روایات کو کھلے عام ناپسند کیا جاتا ہے اور یہ اِن مسلمانوں کی مغرب بیزاری کی عکاسی کرتا ہے۔ اِس کے علاوہ اس رپورٹ میں یہ کہا گیا ہے کہ سلفی عقیدے کے حامل افراد میں دوسرے مذاہب اور عقائد سے بیزاری معاشرتی تقسیم کا باعث بن سکتی ہے۔ رپورٹ کے مطابق جمہوریت سے بیزاری، معاندانہ پراپیگنڈا اور عدم برداشت کے پیغامات ریاستی و حکومتی حلقوں کے لیے باعثِ تشویش بن سکتے ہیں۔

Flash-Galerie Niederlande Holland

سلفی اسلام میں دوسرے مذاہب اور عقائد سے بیزاری معاشرتی تقسیم کا باعث بن رہی ہے

ولندیزی خفیہ ادارے نے یہ رپورٹ بدھ کے روز حکومت کو پیش کی۔ اِس رپورٹ کی تیاری میں ہالینڈ کے انسدادِ دہشت گردی کے قومی کوآرڈینیٹر نے تعاون فراہم کیا تھا۔ رپورٹ کے مطابق مشرقِ وسطیٰ میں پیدا ہونے والی کشیدگی اور خانہ جنگی کے حالات نے بھی عام لوگوں کو سلفی فلسفے کی جانب راغب کیا ہے۔ ہالینڈ کی خفیہ ایجنسی یہ بتانے سے قاصر ہے کہ ہالینڈ میں کتنے لوگ سلفی عقیدے پر عمل پیرا ہیں لیکن اِس کے عقائد سوشل میڈیا پر تواتر کے ساتھ پیش کیے جاتے ہیں۔

دوسرے یورپی ملکوں کی طرح ہالینڈ کے بھی بنیاد پرستانہ عقیدے کے حامل نوجوان جہادی نظریات سے متاثر ہو کر مسلح سرگرمیوں میں شمولیت اختیار کر چکے ہیں۔ بیشتر ڈچ نوجوان عراق اور شام میں سرگرم جہادی گروپ ’اسلامک اسٹیٹ‘ کی صفوں میں شامل ہیں۔ ڈچ خفیہ ایجنسی نے ’اسلامک اسٹیٹ‘ میں شامل ہونے والے ملکی مسلمانوں کی تعداد دو سو بتائی ہے۔ خفیہ رپورٹ کے مطابق شام اورعراق میں کم از کم تیس ڈچ جہادی مسلح کارروائیوں میں ہلاک ہو چکے ہیں۔