1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

سعودی عرب میں نو امریکی شہری دہشت گردی کے شبے میں گرفتار

سعودی حکام نے دہشت گردی کے شبے میں کم از کم نو امریکی شہریوں کو گرفتار کر لیا ہے۔ یہ اُن تینتیس مبینہ دہشت گردوں میں شامل ہیں جنہیں حالیہ ایام میں حراست میں لیا گیا ہے۔

سعودی عرب کے معتبر انگریزی اخبار ’سعودی گزٹ‘ نے رپورٹ کیا ہے کہ حال ہی میں سعودی وزارت داخلہ کی نگرانی میں پولیس اور دوسرے سکیورٹی اداروں نے مختلف کارروائیوں کے دوران تینتیس مشتبہ دہشت گردوں کو گرفتار کیا ہے۔ ان میں نو امریکی شہری بھی شامل ہیں۔ ان میں سے چار امریکی گزشتہ پیر، پچیس جنوری کے روز حراست میں لیے گئے تھے اور بقیہ پانچ پیرکے بعد پولیس کارروائی کے دوران گرفتار ہوئے۔ اخبار سعودی گزٹ نے ان گرفتاریوں کو نامعلوم حکومتی ذریعے کے حوالے سے شائع کیا ہے۔ تاہم ابھی تک یہ نہیں بتایا گیا کہ ان افراد کا تعلق کس دہشت گرد گروپ سے تھا۔

نو امریکیوں کے علاوہ وزارتِ داخلہ اور خفیہ محکمے کے مشترکہ چھاپوں میں چودہ سعودی شہریوں کے علاوہ تین یمنی، دو شامی، ایک انڈونیشی، ایک فلپائنی، ایک قزاقستانی، ایک فلسطینی اور ایک کا تعلق خلیجی ریاست متحدہ عرب امارات سے بتایا گیا ہے۔ حکام نے اِس کا تعین کرنا باقی ہے کہ سعودی اور غیر ملکی مشتبہ دہشت گرد ’اسلامک اسٹیٹ‘ سے وابستگی تو نہیں رکھتے تھے۔

Mansour al-Turki

سعودی وزارتِ داخلہ کے ترجمان میجر جنرل منصور الترکی

اسی دوران سعودی حکام نے بتایا ہے کہ دو روز قبل جمعے کے دن ایک شیعہ مسجد پر کیے گئے حملے میں شریک دو میں سے ایک سعودی شہری تھا۔ سعودی وزارتِ داخلہ کے ترجمان میجر جنرل منصور الترکی نے بتایا ہے کہ سعودی حملہ آور کا نام عبداللہ بن سلیمان التوئجری تھا اور اُس کی عمر صرف بائیس برس تھی۔ التوئجری اور اُس کے ساتھی نے سعودی عرب کے مشرقی شہر احساء کی امام رضا مسجد پر فائرنگ کر کے کم از کم چار سعودی شہریوں کو ہلاک اور دیگر تینتیس کو زخمی کر دیا تھا۔ بعد میں التوئجری نے اپنی بارودی جیکٹ کو اڑا کر خود کو ہلاک کر لیا تھا۔ دوسرا حملہ آور زخمی حالت میں گرفتار کر لیا گیا تھا۔

اخبار سعودی گزٹ کے مطابق اسلامک اسٹیٹ کے تعلق کے شبے میں 532 افراد سے پوچھ گچھ کا عمل جاری ہے۔ ان افراد پر الزام ہے کہ یہ لوگ سعودی عرب میں دہشت گردانہ حملوں کی منصوبہ بندی کے عمل میں شریک تھے۔ سعودی عرب نے سن 2014 میں جہادی گروپ اسلامک اسٹیٹ‘ کو غیرقانی اور دہشت گرد تنظیم قرار دے دیا تھا۔ سعودی حکومت ’اسلامک اسٹیٹ‘ کے فکر اور نظریات کو ’خارجی تحریک‘ قرار دیتی ہے۔ اسلام میں ’خوارج‘ انتہائی کٹر عقیدے کے مسلمان تصور کیے جاتے ہیں اور سعودی عرب کے سلفی اسلام کی بھی یہ انتہائی شکل خیال کی جاتی ہے۔

ملتے جلتے مندرجات