1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

سزائے موت پانے والی مسیحی خاتون کو رہا کیا جائے، پوپ بینیڈکٹ

پاپائے روم بينيڈکٹ شانز دہم نے زور دیا ہے کہ اُس مسیحی خاتون کو رہا کر دیا جائے، جسے پاکستان کی ایک عدالت نے’توہین رسالت‘ کے جرم میں سزائے موت سنائی ہے۔

default

پاپائے روم بينيڈکٹ شانز دہم

بدھ کو ویٹی کن کی طرف سے جاری کئے گئے ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ پاپائے روم بينيڈکٹ شانز دہم نے اپنے ہفتہ وارعوامی خطاب میں کہا ہے کہ غیر مسلم خاتون آسیہ بی بی کو آزاد کر دیا جائے۔ بیان میں کہا گیا ہے کہ پاکستان میں مسیحی ’اکثر تشدد اور امتیازی سلوک‘ کا نشانہ بنتے رہتے ہیں۔

اپنے خطاب میں پاپائے روم نے کہا،’ میں آسیہ بی بی اور اس کے گھر والوں کو اپنے قریب محسوس کرتا ہوں، میں کہتا ہوں کہ اسے جلد از جلد آزاد کر دیا جائے۔‘ انہوں نے مزید کہا،’ میں ان لوگوں کے لئے دعا گو ہوں، جو ایسی ہی صورتحال سے دوچار ہیں۔‘ انہوں نے کہا کہ لوگوں کے بنیادی حقوق اورعزت نفس کا خیال رکھا جانا چاہئے۔

Franco Frattini

اطالوی وزیر خارجہ فرانکو فراتینی

دوسری طرف اطالوی وزیرخارجہ فرانکو فراتینی نے منگل کے دن آسیہ بی بی کی سزا پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا تھا کہ وہ انہیں بچانے کے لئے ہر ممکن کوشش کریں گے۔

پانچ بچوں کی ماں، غیر مسلم آسیہ بی بی کے خلاف گزشتہ سال پاکستان پینل کوڈ کی دفعہ’ 295 سی‘ کے تحت مقدمہ درج کیا گیا تھا۔ اس پرالزام تھا کہ اس نے پیغمبراسلام کے خلاف متنازعہ کلمات ادا کئے۔ 45 سالہ اس مسیحی خاتون کو گیارہ نومبر کو سزا سنائی گئی تھی۔ جس کے بعد اس کے شوہر نے اس سزا کے خلاف اپیل بھی درج کر رکھی ہے۔ پاکستان میں توہین رسالت کے قانون کے تحت ابھی تک کسی کو بھی سزائے موت نہیں دی گئی ہے۔

آسیہ بی بی کو سزائے موت سنائے جانے کے بعد ایک مرتبہ پھر پاکستان میں یہ قانون زیر تنقید ہے۔ انسانی حقوق کے کارکنان کا کہنا ہے کہ اس متنازعہ قانون کی آڑ میں شر پسند عناصر فائدہ اٹھاتے ہیں اوراپنی ذاتی دشمنیاں نکالتے ہیں۔ ان کا کہنا ہے کہ اس قانون کو کالعدم قرار دے دینا چاہئے۔

رپورٹ : عاطف بلوچ

ادارت : شادی خان سیف

DW.COM