1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

سری لنکن افواج کے ہاتھوں شہریوں کا قتل، اقوامِ متحدہ کی رپورٹ

اقوامِ متحدہ کی ایک تحقیقاتی رپورٹ کے مطابق تامل باغیوں کے خلاف فوجی آپریشن کے دوران سری لنکن افواج کے ہاتھوں ہزاروں شہری بھی ہلاک ہوئے اور وہ جنگی جرائم کی مرتکب ہوئیں۔

default

سری لنکا کی افواج جنگی جرائم کی مرتکب ہوئیں، اقوامِ متحدہ

پیر کے روز اقوامِ متحدہ کے ایک پینل نے اپنی رپورٹ میں کہا کہ سن دو ہزار نو میں تامل باغیوں کے خلاف فیصلہ کن کارروائی میں سری لنکا کی افواج نے ہزاروں کی تعداد میں عام افراد کو بھی قتل کیا۔ رپورٹ کے مطابق دونوں فریقین کے ہاتھوں عام شہری ہلاک ہوئے تاہم سری لنکن افواج کے ہاتھوں ہلاک ہونے والوں کی تعداد زیادہ ہے۔

اقوامِ متحدہ کے سیکرٹری جنرل بان کی مون کا کہنا ہے کہ وہ اس سے قبل اس حوالے سے بین الاقوامی انکوائری کا حکم نہیں دے سکے تھے تاہم اب اقوامِ متحدہ پینل کی رپورٹ کو سامنے رکھتے ہوئے اس کی انکوائری کرائے گا تاکہ یہ معلوم کیا جا سکے کہ شہریوں کی ہلاکتوں کو رکوانے کے لیے اقدامات کیوں نہیں کیے گئے۔

اقوامِ متحدہ کی اس رپورٹ پر سری لنکا کی حکومت نے سخت غصّے کا اظہار کرتے ہوئے اسے مسترد کر دیا ہے۔

Ban Ki Moon Pressekonferenz New York

اقوامِ متحدہ کے سیکرٹری جنرل بان کی مون

اقوامِ متحدہ کی اس رپورٹ میں سری لنکا کے شمال میں تامل باغیوں کے گڑھ میں حکومتی کارروائی کی ایک بھیانک تصویر پیش کی گئی ہے۔ واضح رہے کہ اس فیصلہ کن کارروائی کے نتیجے میں تین دہائیوں سے جاری حکومت اور تامل باغیوں کے درمیان لڑائی کا قریباً خاتمہ ہو گیا تھا۔

رپورٹ کے مطابق سری لنکا کی فوج نے دانستہ طور پر ہسپتالوں، اقوامِ متحدہ کے مراکز اور ہلالِ احمر کے بحری جہازوں پر بمباری کی اور قیدیوں کو سر میں گولی مار کر ہلاک کیا۔ رپورٹ میں سری لنکن افواج پر عورتوں کے ساتھ زنا بالجبر کا بھی الزام عائد کیا گیا ہے۔

رپورٹ میں تامل باغیوں پر بھی کڑی تنقید کی گئی ہے اور کہا گیا ہے کہ تین لاکھ سے زائد شہریوں کو باغیوں نے ’انسانی شیلڈ‘ کے طور پر استعمال کیا، اور اگر ان میں سے کوئی فرار کی کوشش کرتا تو وہ اسے گولی مار کر ہلاک کر دیتے۔

اقوامِ متحدہ کے ماہرین کے پینل کے مطابق سری لنکا کی حکومت کو اس حوالے سے اپنے کردار کی وضاحت کرنی چاہیے۔ اقوامِ متحدہ کا کہنا ہے اس نے سری لنکا کی حکومت کو پیشکش کی تھی کہ رپورٹ میں اس کا موقف بھی شائع کیا جائے گا تاہم حکومت نے اس حوالے سے کسی ردِ عمل کا اظہار نہیں کیا۔

رپورٹ: شامل شمس⁄ خبر رساں ادارے

ادارت: امجد علی

DW.COM