1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

سری لنکا میں لاکھوں کے گھر سیلاب میں بہہ گئے

سری لنکا میں سیلاب کے سبب دس لاکھ سے زائد افراد بے گھر ہوگئے ہیں۔ حکام نے اب تک 21 ہلاکتوں کی تصدیق کرتے ہوئے لوگوں کو محفوظ مقامات پر منتقل کرنے کا سلسلہ تیز کردیا ہے۔

default

سری لنکا کا مشرقی علاقہ باٹیکا لاؤ Batticalao میں سب سے زیادہ تباہی پھیلی ہے۔ یہی وہ علاقہ جہاں کئی سالوں تک جاری خانہ جنگی میں بڑے پیمانے پر خون خرابہ ہوا تھا۔

معمول سے زیادہ بارشوں کو حالیہ سیلاب کا سبب قرار دیا جارہا ہے۔ بالائی علاقوں میں مٹی کے تودے گرنے سے بھی انسانی جانیں ضائع ہوئیں اور امدادی کاموں میں رکاوٹ پیدا ہورہی ہے۔

Unabhängigkeitsfeier Sri Lanka

سری لنکا کے صدر راجہ پاکسے

بحرانی صورتحال سے نمٹنے کے قومی ادارے کے ایک عہدیدار کے مطابق محض باٹیکا لاؤ ضلع میں مجموعی طور پر 50 لاکھ سے زائد افراد کے گھر پانی میں بہہ گئے ہیں۔ ان کے بقول متاثرین کو عارضی پناہ گاہیں فراہم کرنے کے لئے مختلف مقامات پر 225 کیمپ قائم کئے گئے ہیں۔

بتایا جارہا ہے کہ لگ بھگ 25 لاکھ افراد حکومت کے زیر انتظام کیمپوں میں ٹہرے ہوئے ہیں جبکہ دیگر اپنی مدد آپ کے تحت مخلتف بالائی علاقوں میں دوستوں یا عزیزوں کے پاس نقل مکانی کرگئے ہیں۔

باٹیکا لاؤ کے ایک رہائشی نے خبر رساں اداے اے ایف پی کے نمائندے کو بتایا کہ وہاں کا ایک گاؤں، ’ایلادی ویمبو‘ Ailadivembu مکمل طور پر زیر آب آچکا ہے۔ ’ میرے گھر میں چھ فٹ اونچا پانی کھڑا ہے، میں اپنی بیوی اور تین بچوں کے ساتھ ایک سرکاری سکول میں پناہ لئے ہوئے ہوں، ہمارے پاس بس تن کے کپڑوں کے سوا اور کچھ بھی باقی نہیں بچا۔‘

Kinder in Indien Monsoon Überschwemmung holen sich Kleidung ab

متاثرین میں بڑی تعداد بچوں کی ہے

مقامی ذرائع ابلاغ کے مطابق دریاؤں میں طغیانی کے سبب مزید تباہی کا خدشہ موجود ہے۔ کولمبو حکومت نے متاثرہ علاقوں میں امدادی کاموں میں معاونت کے لئے تین ہزار فوجیوں کو بھی متعین کردیا ہے۔

واضح رہے کہ سری لنکا میں بجلی کی پیداوار اور زراعت کے لیے مون سون کی بارشیں انتہائی اہم ہیں البتہ زیریں علاقوں میں اکثر و بیشتر موسلا دھار بارشوں کے سبب تباہی پھیلتی ہے۔ سری لنکا میں سال کے اندر مون سون کے دو موسم آتے ہیں یعنی مئی تا ستمبر اور دسمبر تا فروری۔ صدر مہیندرا راجہ پاکسے نے عوام سے اپیل کی ہے کہ وہ مشکل کی اس گھڑی میں اتحاد کا مظاہرہ کرتے ہوئے امدادی کاموں میں حصہ لیں۔

رپورٹ : شادی خان سیف

ادارت : عاطف بلوچ

DW.COM