1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

سری لنکا اور چین کی بڑھتی قربتیں، بھارت کو تشویش نہیں!

بھارتی وزیرخارجہ ایس ایم کرشنا نے جمعہ کے روز اپنے ایک بیان میں کہا ہے کہ سری لنکا اور چین کے درمیان بڑھتی ہوئی قربتوں کو نئی دہلی حکومت اپنے لئے خطرہ نہیں سمجھتی۔

default

بھارتی وزیرخارجہ کا یہ بیان کولمبو اور بیجنگ حکومت کے درمیان ایک اعشاریہ پانچ بلین ڈالر کے اس تازہ معاہدے کے بعد سامنے آیا ہے، جس کے تحت چین، سری لنکا میں بندرگاہ کی تعمیر میں سرمایہ کاری کر رہا ہے۔

Sri Lanka China Hambantota Hafen

چین سری لنکا کو بندگارہ کی تعمیر میں معاونت فراہم کر رہا ہے

ایس ایم کرشنا نے یہ بیان اپنے چار روزہ دورہ ء سری لنکا کے آخری روز صدر مہیندا راجا پاکسے سے ملاقات کے بعد دیا۔ انہوں نے کہا کہ کولمبو حکومت کی چین یا کسی اور ملک کے ساتھ قربت دونوں ملکوں کے ’’تاریخی تعلقات‘‘ پر اثرانداز نہیں ہو گی۔

ایک سوال پر کہ کیا سری لنکا میں چین کی بڑھتی ہوئی دلچسپی پر نئی دہلی کو کوئی تشویش نہیں؟ کرشنا نے کہا کہ خارجہ امور کے بارے میں فیصلہ سازی کولمبو حکومت کا کام ہے۔ انہوں نے کہا کہ نئی دہلی ایک مضبوط اور پرامن سری لنکا کا حامی ہے۔

’’بھارت اور چین کے درمیان تعلقات کا دوسرے ممالک کے ساتھ تعلقات سے کوئی تعلق نہیں۔ سری لنکا کے دوسرے ممالک کے ساتھ تعلقات خود سری لنکا پر منحصر ہیں اور بھارت ان کا احترام کرتا ہے۔‘‘

Pakistan Hafen Gwadar

چین پاکستان میں بھی بندرگاہ تعمیر کر چکا ہے

ایک ہفتے قبل چین اور سری لنکا نے ایک منصوبے کا آغاز کیا ہے، جس کے تحت چین سری لنکا کے علاقے ہمبانتوتا کی بندرگاہ میں ایک اعشاریہ پانچ بلین ڈالر کی سرمایہ کاری کر رہا ہے۔ ماہرین کا خیال ہے کہ چین کا یہ اقدام جغرافیائی طور پر بھارت کے گرد اپنے اثرورسوخ میں اضافے کے مترادف ہے۔

اس سے قبل بھارتی وزارت خارجہ کی طرف سے رواں برس کے آغاز میں کہا گیا تھا کہ چین بحر ہند میں ’غیر معمولی دلچسپی‘ لے رہا ہے۔

واضح رہے کہ چین اس سے قبل بنگلہ دیش، میانمار اور پاکستان میں بندرگاہوں کی تعمیر اور انتظام و انصرام کے متعدد منصوبے شروع کر چکا ہے۔ اس کے علاوہ چین نیپال اور سری لنکا میں ریل پروجیکٹس کے آغاز کی بھی منصوبہ بندی کر رہا ہے۔

رپورٹ : عاطف توقیر

ادارت : شادی خان سیف

DW.COM

ویب لنکس