1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

سری لنکا انتخابات، تیاریاں اور الزامات

سیاسی مبصرین کا خیال ہے کہ ملک کے موجودہ صدر کی حمایت یافتہ سیاسی جماعت آسانی سے آٹھ اپریل کو ہونے والے انتخابات میں کامیابی حاصل کر لے گی جبکہ اپوزیشن پہلے ہی حکمران جماعت پر دھاندلی کا الزام لگا چکی ہے۔

default

ان پارلیمانی انتخابات کے حوالے سے سری لنکا کے صدر مہیندرا راجاپاکسے کا دعویٰ ہے کہ ان کی جماعت یونائٹڈ پیپلز فریڈم الائنس اکثریت حاصل کر لے گی کیونکہ انہوں نے وہاں تین دہائیوں سے جاری تامل باغیوں کی تحریک کو ناکام بنایا اور ان انتخابات میں کامیابی کے بعد وہ مئی میں ملکی آئین میں ترمیم کے بھی خواہاں ہیں۔ تاہم مخالف جماعتوں کا کہنا ہے کہ وہ انہیں ایسا کرنے نہیں دیں گے۔

Sri Lanka Proteste

اسی برس فروری میں ہونے والے صدارتی انتخابات میں صدارتی امیدوار سابق فوجی سربراہ سارتھ فونسیکا کی شکست پر عوامی احتجاج بھی کیا گیا۔

آٹھ اپریل کو ہونے والے انتخابات میں پارلیمان کی 225 نشستوں کے لئے 7620 امید وارمیدان میں ہیں ۔ 196 ارکان براہ راست انتخابات کے ذریعے منتخب ہوں گے جبکہ سیاسی جماعتیں حاصل کردہ نشستوں کے تناسب سے باقی 29 نشستوں پرارکان کا انتخاب کریں گی۔ انتخابات کے دوران امن وامان کی صورتحال اورانتخابی عمل بہتر بنانے کے لئے فوج اور پولیس کے 80 ہزارسے زائد اہلکار تعینات کئے گئے ہیں۔ ماہرین کا خیال ہے کہ پارلیمنٹ کے ذریعے ایوان صدرپر چیک رکھا جا سکے گا اس لئے ملکی سیاست میں ان انتخابات کی اہمیت بہت زیادہ ہے۔

اپوزیشن جماعت یونائیٹڈ نیشنل پارٹی کے رہنما رانیل وکرما سنگے نے کولمبو میں صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے الزام لگایا ہے کہ حکمران جماعت انتخابی مہم کے دوران سرکاری وسائل کا بے دریغ استعمال کر رہی ہے اسی لئے یہ توقع نہیں کی جا سکتی کہ انتخابات صاف اور شفاف ہوں گے۔ سرکاری میڈیا جانبدارانہ رپورٹنگ کر رہا ہے جبکہ دوسری طرف پرایئویٹ میڈیا پر پابندی ہے اور حکومت کے حامی عناصر نے صحافیوں کو اغواء کرنے کے بعد ان پر تشدد کیا۔ اس کے ساتھ ساتھ مدیروں کوبھی گرفتار کرکے ڈرایا دھمکایا جا رہا ہے۔

وکرما سنگے کا خیال ہے کہ لوگ بھی انتخابات میں دلچسپی نہیں لے رہے کیونکہ وہ یہ سمجھتے ہیں کہ ان کے ووٹ سے کوئی تبدیلی نہیں آئے گی۔ تاہم انہوں نے لوگوں سے کہا کہ وہ اپنے ووٹ کا حق ضرور استعمال کریں کیونکہ ان کے پاس انتخابات کے ذریعے حکومت تبدیل کرنے کا موقع ہے۔ اپوزیشن لیڈر نے یہ بھی الزام لگایا ہے کہ ملکی پولیس بھی حکمران جماعت کے امیدواروں کا ساتھ دے رہی ہے جس کی وجہ سے انتخابی قوانین پر عمل درآمد مشکل ہو رہا ہے۔ ادھرالیکشن کمشنر دیانندہ دیسانائکے کا بھی کہنا ہے کہ پولیس اور سرکاری ملازمین انتخابات کی غیر جانبداری کو یقینی بنانے کے سلسلے میں ان کی ہدایات کو نظر انداز کر رہی ہے۔

سیاسی مبصرین کا خیال ہے کہ صدرراجا پاکسے کی جماعت ان انتخابات میں واضح اکثریت حاصل کرنے میں کامیاب ہو جا ئے گی جیسا کہ انہوں نے اسی سال 26 جنوری کو ہونے والے صدرارتی انتخابات میں فتح حاصل کی تھی۔ اپوزیشن ان کے دوبارہ بحیثیت صدر انتخاب کوملکی سپریم کورٹ میں چیلنج بھی کر رہی ہے۔
سری لنکا کے صدر مہندراراجاپاکسے اپنے بڑے بیٹے نمل کے لئے مہم چلا رہے ہیں جو اپنے آبائی علاقے ھامبانٹوٹا سے انتخابات میں حصہ لے رہے ہیں۔ اس کے علاوہ صدر کے دو بھائی اور بھانجی بھی میدان میں ہیں۔

رپورٹ : بخت زمان

ادارت : افسر اعوان

DW.COM