1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

سرینڈر کی میعاد ختم، تامل باغیوں کے خلاف آپریشن جاری

سری لنکا کی فوج کے مطابق تامل باغیوں نے حکومت کی طرف سے ہتھیار ڈالنے سے متعلق مقررہ میعاد کا کوئی جواب نہیں دیا ہے جس کے بعد فوج نے حتمی آپریشن شروع کردیا ہے۔

default

جنگ زدہ علاقے سے بڑی تعداد میں شہریوں کی آمد جاری ہے

تامل ٹائیگرز نے تاہم فوج پر شہری آبادی کو براہ راست بمباری کا نشانہ بنانے کے الزامات عائد کئے ہیں۔ سری لنکن فوج نے ان الزامات کی تردید کرتے ہوئے باغیوں کے آخری گڑھ میں پیش قدمی کا دعویٰ بھی کیا۔

Mindestens 20 Tote bei Anschlag auf Bus in Sri Lanka

سری لنکا کی فوج نے آپریشن جاری رہنے کا اعلان کیا ہے

فوج کی جانب سے تامل ٹائیگرز کو دی جانے والی حتمی ڈیڈ لائن کے ختم ہونے سے قبل جنگ زدہ علاقے سے نکل آنے والے شہریوں کی تعداد 39000 سے تجاوز کر گئی ہے۔

سری لنکا کی فوج کی جانب سے تامل ٹائیگرز کو الٹی میٹم دیا گیا تھا کہ وہ 24 گھنٹوں کے اندر اندر ہتھیار ڈال دیں وگرنہ فیصلہ کن فوجی آپریشن کے لئے تیار ہو جائیں، جس کے بعد شمالی سری لنکا کے تامل ٹائیگرز کے زیر قبضہ آخری علاقے سے بڑی تعداد میں شہریوں کی ہجرت کے سلسلے کا آغاز ہو گیا۔

پچھلے 25سال سے جاری ایشیا کی تاریخ کے سب سے طویل اور منظم بغاوت اپنے منتقی انجام کی جانب بڑھتی دکھائی دے رہی ہے۔ سری لنکا کی فوج کے لئے کسی بڑے آپریشن کی راہ میں سب سے بڑی تعداد تامل علاقوں میں شہریوں کی موجودگی تھی اب جب کہ اتنی بڑی تعداد میں لوگ جنگ زدہ علاقوں کو چھوڑ کر محفوظ مقامات کی جانب منتقل ہو رہے ہیں تو کسی بڑے فوجی آپریشن کا امکان بڑھتا چلا جا رہا ہے۔ سری لنکا کی حکومت کا موقف رہا ہے کہ تامل باغی عام شہریوں کو انسانی ڈھال کے طور پر استعمال کر رہے ہیں۔

Sri Lanka Kindersoldaten der Rebellenorganisation LTTE

تامل ٹائیگرز کی بڑی تعداد نوجوانوں پر مشتمل ہے

اقوام متحدہ اور مغربی ملکوں کی جانب سے سری لنکا کی حکومت کو شہریوں کی جان کی حفاظت کے لئے باغیوں سے مذاکرات کے لئے کہا گیا تھا تاہم سری لنکا کی حکومت کا موقف تھا کہ باغیوں سے صرف اسی شرط پر مذاکرات کئے جائیں گے اگر وہ ہتھیار ڈال دیں اور عام شہریوں کو اپنے زیر قبضہ علاقوں سے نکلنے دیں۔ لبریشن آف تامل ٹائیگرز نے شہریوں کی رہائی کے موقف کو یہ کہہ کر رد کر دیا تھا کہ شہری اپنی مرضی سے ان علاقوں میں رہ رہے ہیں۔

سری لنکا کی فوج کے ترجمان نانا یکارا ادایا نے صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے کہا اب تک جنگ زدہ علاقے سے ہجرت کرکے ’نو وار زون‘میں آنے والے مہاجرین کی تعداد 39081 ہو چکی ہے اور شہریوں کی آمد کا سلسلہ بدستور جاری ہے۔

Tamilen protestieren in London vor dem House of Parliament

برطانیہ میں درجنوں تامل باشندوں نے سری لنکا کے فوجی آپریشن کے خلاف مظاہرے کئے

پیر کے روز لندن اور پیرس میں درجنوں تامل باشندوں نے سری لنکا کے فوجی آپریشن کے خلاف پر تشدد مظاہرے کئے۔ اس دوران پولیس اور مظاہرین کے درمیان جھڑپیں بھی ہوئیں۔ پولیس کے مطابق مظاہرین نے املاک اور بسوں کو نقصان پہنچایا اور پتھراؤ بھی کیا۔ اس موقع پر 180 افراد کو گرفتار کر لیا گیا۔

دریں اثناء سری لنکا کی فوج کی جانب سے ویڈیو جاری کی گئی تھی جس میں دکھایا گیا تھا کہ جنگ زدہ علاقے سے ہزاروں افراد کی ہجرت جاری ہے۔ عام صحافیوں اور خبر رساں اداروں کی پہنچ جنگ زدہ علاقے تک نہیں ہے لہذا اب تک سرکاری فوج کی جانب سے دکھائی گئی اس ویڈیو کی تصدیق یا تردید نہیں ہو سکی۔

رپورٹ : عاطف توقیر

ادارت : گوہر نذیر گیلانی