1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

مہاجرین کا بحران

’سرحديں کھول دو‘ : مشتعل مہاجرين نے باڑ توڑ ڈالی

سينکڑوں برہم پناہ گزينوں نے پير کے روز سرحد پر لگی باڑ توڑ کر يونان سے مقدونيہ ميں داخل ہونے کی کوشش کی۔ بلقان ممالک کی جانب سے حاليہ بارڈر کنٹرولز کے نفاذ کے نتيجے ميں تقريباً سات ہزار مہاجرين اس مقام پر پھنسے ہوئے ہيں۔

تقريباً تين سو تارکين وطن نے باڑ پھلانگ کر يونان اور مقدونيہ کے درميان واقع ريلوے ٹريک کی جانب بھاگنے کی کوشش کی۔ يہ تارکين وطن ’سرحديں کھول دو‘ کے نعرے لگا رہے تھے اور انہوں نے باڑ کا ايک حصہ کاٹ ديا تھا۔ نتيجتاً مقدونيہ کی پوليس نے ان پر آنسو گيس کے شيل برسائے تاکہ وہ سرحد پار نہ کر سکيں۔ اس واقعے ميں متعدد مہاجرين کے زخمی ہونے کی اطلاعات ہيں اور تقريباً تيس لوگوں کو ابتدائی طبی امداد فراہم کرنا پڑی، جن ميں زيادہ تر بچے تھے۔ بتايا گيا ہے کہ مقدونيہ کا ايک پوليس اہلکار بھی زخمی ہوا اور اسے ہسپتال منتقل کر ديا گيا۔

يہ واقعہ مقدونيہ کی جانب سے تين سو کے لگ بھگ صرف شامی اور عراقی پناہ گزينوں کو گزرنے دينے کے کچھ دير بعد پير کے روز پيش آيا۔ يہ امر اہم ہے کہ آسٹريا اور پھر چند بلقان رياستوں کی جانب سے مہاجرين کی حد مقرر کر دينے کے بعد سے يونان اور مقدونيہ کی سرحد پر پناہ گزينوں کا ايک ہجوم جمع ہو رہا ہے اور ايتھنز حکام نے خبردار کيا ہے کہ مارچ ميں اس مقام پر پھنس جانے والے افراد کی تعداد ستر ہزار تک پہنچ سکتی ہے۔

دوسری جانب مقدونيہ کے صدر گےاورگ آئيوانوو نے جرمن نيوز ويب سائٹ اشپيگل آن لائن کو بتايا کہ جب آسٹريا کی ساڑھے سينتيس ہزار مہاجرين کی حد تک پہنچا جائے گا، تو اس کے بعد بلقان ممالک والے روٹ کو بھی بند کرنا ہو گا۔

ايتھنز حکام نے خبردار کيا ہے کہ مارچ ميں اس مقام پر پھنس جانے والے افراد کی تعداد ستر ہزار تک پہنچ سکتی ہے

ايتھنز حکام نے خبردار کيا ہے کہ مارچ ميں اس مقام پر پھنس جانے والے افراد کی تعداد ستر ہزار تک پہنچ سکتی ہے

حاليہ پيش رفت پر عالمی رد عمل

اقوام متحدہ کے انسانی حقوق سے متعلق محکمے کے سربراہ زيد رعد الحسين ’مہاجرين کے خلاف بڑھتے ہوئے خوف‘ کی سخت الفاظ ميں مذمت کی ہے۔ انہوں نے کہا، ’’ان لوگوں کی حالت زار کے باوجود انہيں روکنے کے ليے اونچی ديواريں کھڑی کرنا ظالمانہ عمل ہے۔‘‘

انسانی حقوق کے ليے سرگرم ادارے ايمنسٹی انٹرنيشنل نے بھی اڈومينی کی صورتحال پر تنقيد کرتے ہوئے اسے امتيازی سلوک پر محيط شرمناک کارروائی قرار ديا ہے۔ اسی دوران جرمن چانسلر انيگلا ميرکل نے بھی بارڈر کنٹرول کے نفاذ کو تنقيد کا نشانہ بناتے ہوئے آسٹريا کی طرف اشارہ کيا، جس کی جانب سے انيس فروری کو اٹھائے جانے والے اقدامات کی وجہ سے ہی بلقان رياستوں نے بھی بارڈر کنٹرول نافذ کيے۔ ميرکل نے کہا، ’’يونان کو بحرانی صورتحال ميں نہيں ڈالنا چاہيے۔‘‘

ادھر امريکی وزير خارجہ جان کيری نے اپنے جرمن ہم منصب فرانک والٹر اشٹائن مائر کے ساتھ پير کے روز واشنگٹن ميں گفتگو کے بعد کہا ہے کہ مشرق وسطیٰ سے تعلق رکھنے والے پناہ گزينوں کا بحران ايک عالمی مسئلہ ہے۔

ملتے جلتے مندرجات