1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

سخت ترین پابندیاں، ایران اور امریکہ کے درمیان سفارتی جنگ

تہران کے خلاف سخت ترین پابندیوں کے حوالے سے امریکہ اور ایران کی سفارتی جنگ جاری ہے۔ پیر کے روز امریکہ محکمہ خارجہ نے اپنے بیان میں کہا کہ سلامتی کونسل میں جلد ہی اس حوالے سے قرارداد پیش کر دی جائے گی۔

default

امریکی محکمہ خارجہ کے مطابق واشنگٹن سلامتی کونسل سے اس قرارداد کی منظوری میں کامیاب ہوجائے گا اور اس حوالے سے ممبر ممالک امریکہ پر اعتماد کا اظہار کرتے ہوئے تہران کے خلاف سخت ترین پابندیوں کے حق میں ووٹ دیں گے۔

امریکی محکمہ خارجہ کے ترجمان فِلپ کروئلے نے صحافیوں سے بات چیت میں کہا کہ امریکہ اس وقت نیویارک میں ’مختلف گروپنگز‘ سے گفت و شنید میں مصروف ہے۔

’’ہم معاملات کو تفصیلی انداز سے دیکھ رہے ہیں تاکہ کسی حل پر پہنچا جا سکے اور ہم اس تمام عمل کی جلد از جلد تکمیل چاہتے ہیں۔‘‘

Konferenz in Berlin zu Iran Atomprogramm

ایران پر پابندیوں کے حوالے سے عالمی طاقتوں کے درمیان مذاکرات کے متعدد دور ہو چکے ہیں

ایران اور امریکہ دونوں ہی فریقین کی تمام تر توجہ کا مرکز اس لمحے روس اور چین ہیں کیونکہ سلامتی کونسل کے ان دونوں ہی مستقل رکن ممالک کی جانب سے اب تک تہران مخالف پابندیوں کے حوالے سے مبہم رویے کا مظاہرہ کیا گیا ہے۔ گو کہ روس کی جانب سے گزشتہ کچھ عرصے میں ان پابندیوں کے حق میں نسبتا مثبت نقطہ نظر سامنے آیا ہے تاہم چین ابھی تک سفارتی ذرائع سے ایرانی جوہری پروگرام کے مسئلے کے حل پر زور دے رہا ہے۔ دوسری جانب سلامتی کونسل کے غیر مستقل رکن ممالک میں برازیل، ترکی اور یوگنڈا کا موقف بھی تہران مخالف پابندیوں کے حق میں واضح نہیں ہے۔ برازیل اور ترکی ان پابندیوں کے حق میں ووٹ دینے سے کتراتے دکھائی دے رہے ہیں۔

کراؤلے کے مطابق ایران دنیا بھر میں اپنے موقف کے لئے حمایت کے حصول کی کوششوں میں مصروف ہے تاہم واشنگٹن کو پورا یقین ہے کہ سلامتی کونسل جلد ہی سخت ترین پابندیوں کے حوالے سے ممکنہ قرارداد منظور کر لے گی۔

رپورٹ: عاطف توقیر

ادارت: عابد حسین

DW.COM