1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

سال 2008ء میں ہزاروں افراد کو موت کی سزا: ایمنسٹی انٹرنیشنل

لندن میں قائم حقوق انسانی کی تنظیم ایمنسٹی انٹرنیشنل کے مطابق سال 2008ء میں دُنیا کے پچیس ملکوں میں حکومتوں کی طرف سے تقریباً تین ہزار افراد پھانسی، سرقلم، سنگ باری اور دیگر طریقوں سے موت کے گھاٹ اتار دئے گئے۔

default

ایمنسٹی انٹرنیشنل کی سیکرٹری جنرل آئرین خان کے مطابق سزائے موت کے حوالے سے ایشیاء کی صورتحال گمبھیر ہے

بین الاقوامی تنظیم ایمنسٹی انٹرنیشنل کے مطابق سال 2008ء کے دوران ہی باون ملکوں میں لگ بھگ نو ہزار افراد کو موت کی سزا سنائی گئی۔ ایمنسٹی کے مطابق سزائے موت کے حوالے سے ایشیاء کی صورتحال گمبھیر ہے اور بالخصوص چین میں یہ صورتحال خطرناک حد تک تشویشناک ہے۔ چین میں گُذشتہ برس تقریباً سترہ سو افراد کو موت کی سزا دی گئی۔ انسانی حقوق کی تنظیم ایمنسٹی انٹرنیشنل کے مطابق اصل اعدادوشمار اس سے بھی کہیں زیادہ ہیں کیوں کہ چین میں خفیہ طریقوں سے بھی سزائے موت پر عمل درآمد کیا جاتا ہے۔

ایمنسٹی انٹرنیشنل کی سیکرٹری جنرل آئرین خان کے مطابق بری خبر یہ ہے کہ ابھی بھی ہر سال ہزاروں افراد کو پھانسی یا موت کی سزا دی جاتی ہے تاہم اچھی خبر یہ ہے کہ مجموعی طور پر دنیا بھر میں سزائے موت کے مکمل خاتمے کا رجحان ہے۔

Symbolbild Abschaffung der Todesstrafe

ایمنسٹی انٹرنیشنل کے مطابق دنیا بھر میں سزائے موت کے خاتمے کا رجحان ہے

ڈوئچے ویلے اردو کے ساتھ ایک خصوصی انٹرویو میں آئرین خان نے کہا کہ انسٹھ ممالک میں موت کی سزا کا قانون موجود ہے تاہم سال دو ہزار آٹھ میں صرف پچیس ملکوں میں سزائے موت پر عمل درآمد کیا گیا، جس سے یہ اشارہ ملتا ہے کہ رجحان موت کی سزا کے خاتمے کی طرف ہے۔

’’جو کارکن دنیا میں سزائے موت کے خاتمے کے لئے سرگرم ہیں انہیں اس سلسلے میں اب تک حاصل ہونے والی کامیابیوں پر فخر محسوس کرنا چاہیے۔‘‘

Irene Khan Amnesty International

آئرین خان کے مطابق اب وقت آگیا ہے کہ چین، جاپان اور انڈونیشیا میں سول سوسائٹی کی تنظیموں کو مضبوط بنایا جائے تاکہ ان ملکوں میں آئیندہ سزائے موت پر عمل درآمد نہ کیا جاسکے

آئرین خان نے تاہم کہا کہ چین اور جاپان میں سول سوسائٹی کی تنظیمیوں کو مضبوط کرنے کی ضرورت ہے تاکہ وہاں کی حکومتوں پر دباٴو بنایا جاسکے۔

ایمنسٹی انٹرنیشنل کی سیکرٹری جنرل آئرین خان کے مطابق گُذشتہ برس چین میں تقریباً 1700، ایران میں سنگ باری اور پھانسی کے ذریعے 346، سعودی عرب میں سر قلم کرکے 102، پاکستان میں 36، اور امریکہ میں 38 افراد کو موت کے گھاٹ اتار دیا گیا۔

گُذشتہ برسوں کی طرح سال دو ہزار آٹھ میں بھی چین، ایران، سعودی عرب، پاکستان اور امریکہ میں بڑی تعداد میں لوگوں کو موت کی سزا دی گئی۔ لیکن اگر اعداد و شمار کی بات کی جائے تو امریکہ میں موت کی سزاوٴں میں گُذشتہ برسوں کے مقابلے میں کمی کا رجحان دیکھنے میں آرہا ہے۔ سن دو ہزار آٹھ میں امریکہ میں 38 افراد کو موت کی سزا دی گئی۔ امریکہ کی کل پچاس ریاستوں میں سے پندرہ میں موت کی سزا ختم کردی گئی ہے۔

USA Präsident Barack Obama vor Karte

نئے امریکی صدر باراک اوباما کا شمار سزائے موت کے اعتدال پسند حامیوں میں کیا جاتا ہے

جارج ڈبلیو بُش کے بعد امریکہ کے نئے صدر کی حیثیت سے اپنا عہدہ سنبھالنے والے باراک اوباما نے بعض خطرناک قسم کے جرائم کے خلاف سزائے موت کو درست قرار دیتے ہیں۔

ایمنسٹی انٹرنیشنل کے مطابق سزائے موت کے تعلق سے پاکستان کی صورتحال بھی کچھ اچھی نہیں ہے۔ حقوق انسانی کی اس بین الاقوامی تنظیم کا موقف ہے کہ یہ سزا انسانی حقوق کی بنیادی ترین اور سنگین خلاف ورزی ہے۔

پاکستان کی صورتحال کے بارے میں ہیومن رائٹس کمیشن آف پاکستان HRCP کے شریک چئیرمین اقبال حیدر کہتے ہیں کہ اب آہستہ آہستہ پاکستان میں سزائے موت کے خلاف مزاج بنتا جارہا ہے۔ اقبال حیدر اس بات کو خوش آئیند قرار دیتے ہیں کہ سزائے موت کے خلاف پاکستان کے حکمرانوں کی سوچ اور مزاج میں تبدیلی آرہی ہے لیکن ساتھ ہی یہ بھی کہتے ہیں کہ تنگ نظر اور سخت گیر موقف کے حامل افراد سزائے موت کے خاتمے میں سب سے بڑی رکاوٹ ہیں۔

Amnesty-Chefin wünscht Schutz auch für Nicht-Christen aus dem Irak

ایمنسٹی انٹرنیشنل کی سیکرٹری جنرل آئرین خان نے ڈوئچے ویلے کے ساتھ ایک خصوصی انٹرویو میں کہا کہ سزائے موت کے خاتمے کے لئے سرگرم کارکنوں کو اب تک حاصل ہونے والی کامیابیوں پر فخر محسوس کرنا چاہیے

امریکہ، جاپان، چین، تائیوان، سعودی عرب، جنوبی کوریا، ایران، پاکستان، بنگلہ دیش، انڈونیشیاء اور بھارت سمیت دنیا کے 59 ملکوں میں آج بھی سزائے موت پر عمل درآمد کیا جاتا ہے۔

سن انیس سو باسٹھ میں بیلجیم منعقدہ ایک کانفرنس میں یہ فیصلہ لیا گیا کہ دنیا بھر میں انسانی حقوق کے تحفّظ کے لئے باقاعدہ طور پر ایک تنظیم تشکیل دی جانی چاہئیے ۔ اس طرح اسی سال ایمنسٹی انٹرنیشنل کے نام سے ایک بین الاقوامی تنظیم وجود میں آئی۔ ایمنسٹی انٹرنیشنل سزائے موت کو ریاستی قتل سے تعبیر کرتی ہے۔

سن دو ہزار تین سے لگاتار ہر سال دس اکتوبر کو سزائے موت کے خلاف عالمی دن منایا جاتا ہے۔ گُذشتہ سال اس موقعہ پر ایمنسٹی انٹرنیشنل کی سیکرٹری جنرل آئرین خان نے ایک مرتبہ پھر موت کی سزا کے خاتمے کا مطالبہ دہرایا تھا اور کہا تھا کہ ’’ورلڈ کولیشن اگینسٹ دی ڈیتھ پینلٹی‘‘ ایشیائی ممالک کو ٹارگیٹ کررہی ہے۔’’ اس سال ورلڈ کولیشن اگینسٹ دی ڈیتھ پینلٹی، ایشیائی ممالک کو ہدف بنارہی ہے کیونکہ ایشیاء دنیا کا ایسا حصّہ ہے جہاں موت کی سزا پر سب سے زیادہ عمل درآمد کیا جاتا ہے۔ لیکن یہ ایسا خطّہ ہے جہاں صورتحال میں تبدیلی کی امید بھی ہے۔‘‘

لیکن ایمنسٹی انٹرنیشنل کی طرف سے جاری کی گئی تازہ رپورٹ سے یہ بات صاف ظاہر ہے کہ ایشیائی ممالک میں ابھی بہت کچھ کرنا باقی ہے۔

Audios and videos on the topic